fbpx

عمران مجرموں کا سرغنہ ہے لہذا انکے خلاف مقدمہ بنایا جائے گا. وزیر داخلہ رانا ثناءاللہ

مسلم لیگ ن کے رہنماء اور وزیر داخلہ رانا ثناءاللہ نے ایک نجی ٹی وی کے پروگرام میں گفتگو کرتے ہوئے کہا کہ فرح گوگی نامی خاتون سابق وزیراعظم عمران خان کے فرنٹ کے طور پر کام کرتی رہی ہیں۔

ان کا مزید کہنا تھا کہ: فرح گوگی کے ہر جگہ سے پلاٹ نکل رہے ہیں لہذا کیا ان سے نہیں پوچھنا جاناچاہئے کہ یہ سب کہاں سے آپ نے لیئے ہیں؟ اور یہ عمران خان کے ساتھ کام کرتی رہی ہیں، افسران کی تعیناتی اور تبادلے تک میں انہوں نے بے پناہ پیسہ اکٹھا کیا ہے اور اسکی شہادتیں موجود ہیں۔

وزیر داخلہ کے مطابق: فرح گوگی نے مختلف جگہوں سے بڑے بڑے کمیشن لیئے ہیں، اور پورے ملک میں سے انہوں نے عربوں روپے کمائے ہیں انہوں نے مزید کہا کہ فرح گوگی کا باقاعدہ تعلق اور پشت پناہی بنگلہ سے ثابت ہوچکی ہے۔ کیونکہ یہ بنگلہ میں ایک فیملی ممبر کی طرح رہتی تھی۔

رانا ثناءاللہ کہتے ہیں: ایسے مجرموں اور ان کے سرغنہ عمران خان پر ہاتھ نہیں ڈالنا ہے تو پھر یہ لوگ ایسے ہی کی گئی چوری چکاری ہڑپ کرکے لوگوں کو گالیاں دیتے رہیں گے۔

 وزیر داخلہ کا کہنا تھا کہ: عمران خان نے تاحال فرح گوگی کے باہر جانے پر کوئی جواب دیا ہے اور نہ ہی ان کے نام جو پلاٹ اور زمینیں نکلی ہیں اس پر کوئی جواب دیا لیکن وہ ہر روز مخالفین پر دن رات چوری کے الزامات لگاتے رہتے ہیں اور خود کو صادق و آمین کہتے ہیں حالانکہ خود چوروں اور مجرموں کے سرغنہ ہیں۔

رانا ثناءاللہ نے بتایا: جب عمران خان نے اسلام آباد پر چڑھائی کی تھی تو اس وقت میں نے کابینہ سے تحریری طور پر اجازت لی تھی کہ ان کے خلاف مقدمہ بنایا جائے جس کے بعد کابینہ نے ایک سب کمیٹی بنائی اور اسے حکم دیا کہ وہ اس معاملے کا جائزہ لے اور اب اس کا ایک اجلاس ہوچکا لیکن ابھی رپورٹ پیش نہیں کی گئی ہے۔

انہوں نے واضح کیا کہ: قانون اپنا راستہ نکالے گا اور چونکہ یہ حکومت تحریک انصاف کے علاوہ تمام جماعتوں کے اتحاد سے مل کر بنائی گئی ہے اور کابینہ میں تمام جماعتوں کے لوگ موجودہ ہیں جس میں سب کی اپنی اپنی رائے ہوتی ہے تو ہمیں سب کی رائے کا احترام کرنا ہے .

وزیر داخلہ رانا ثنااللہ نے کہا: عمران خان بارے بہت سارے معاملات زیر غور ہیں جیسے آج کل یہ اداروں کیخلاف نفرت پھیلا رہے ہیں اس پر بھی مشاورت جاری  ہے اور کابینہ کی بنائی گئی سب کمیٹی کی رپورٹ پیش ہونے و تمام جماعتوں سے مشاورت کے بعد سابق وزیراعظم عمران خان کے خلاف مقدمہ بنایا جائے گا۔