بھارت مقبوضہ جموں و کشمیر میں انسانی حقوق کی پامالی پوشیدہ رکھنا چاہ رہا ہے۔ شاہ محمود قریشی

وزیر خارجہ مخدوم شاہ محمود قریشی نے کہا ہے کہ ہندوستان میں اقلیتوں کے ساتھ، بالخصوص مسلمانوں کے ساتھ جو سلوک برتا جا رہا ہے اس پر ہمیں بے حد تشویش ہے۔ ایک نیان میں انہوں نے کہا کہ بھارت نے مقبوضہ جموں و کشمیر میں جس طرح انسانی حقوق کی پامالی جاری رکھی ہوئی ہیں وہ ایک المناک داستان ہے جسے بھارت پوشیدہ رکھنا چاہ رہا تھا۔انہوں نے کہا کہ ایمنیسٹی انٹرنیشنل نے جب بھارت کی جانب سے انسانی حقوق کی سنگین خلاف ورزیوں کو منظر عام پر لانا چاہا تو انہیں اتنا مجبور کیا گیا کہ انہیں بھارت میں اپنے دفاتر بند کرنا پڑے ۔ان کے اکاؤنٹس منجمد کر دیے گئے ۔ ان کا قصور صرف اتنا تھا کہ انہوں نے مقبوضہ جموں و کشمیر میں بھارتی قابض فورسز کے ظلم و ستم کو بے نقاب کیا اور دہلی میں ہونیوالے حالیہ فسادات میں پولیس کے گٹھ جوڑ اور پشت پناہی کا پردہ چاک کیا۔ یہی دو چیزیں بھارت کو ناگوار گزریں اور انہوں نے حیلوں بہانوں سے (unlawful activity prevention act2019 ) کی آڑ میں ان پر بے جا پابندیاں لگانا شروع کر دیں۔ آج ہیومن رائٹس کونسل کو انسانی حقوق کی تنظیموں پر لگائ جانے والی قدغنوں اور بے جا پابندیوں کا نوٹس لینا چاہیے۔ انہوں نے کہا کہ پاکستان سمیت دنیا بھر میں جتنی انسانی حقوق کی تنظیمیں ہیں انہیں اس بھارتی رویے کے خلاف آواز بلند کرنی چاہیے ۔ آج بھارت کا اصل چہرہ بے نقاب ہو چکا ہے۔ بھارت کا یہ دعویٰ تھا کہ وہ دنیا کی سب سے بڑی جمہوریت ہے لیکن اسے معلوم ہونا چاہیے کہ جمہوریت میں وہ سلوک روا نہیں رکھا جاتا جو مقبوضہ جموں و کشمیر میں نہتے اور معصوم شہریوں کے ساتھ رکھا جا رہا ہے۔ جمہوریت میں اقلیتوں کے ساتھ وہ ناروا سلوک نہیں برتا جاتا جو بھارت اپنے ملک میں اقلیتوں، بالخصوص مسلمانوں کے ساتھ روا رکھے ہوئے ہے۔

جواب چھوڑیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا.