بھارتی افواج کشمیری بچوں کے جنسی استحصال میں ملوث ،5 اگست سے ابتک 13 ہزار لڑکوں کو گرفتار کیا گیا

باغی ٹی وی کی رپورٹ کے مطابق بھارتی افواج کشمیری بچوں کے جنسی استحصال میں ملوث ،5 اگست سے ابتک 13 ہزار لڑکوں کو گرفتار کیا گیا

جمعرات کو دنیا نے ‘جارحیت کا شکار معصوم بچوں کا بین الاقوامی دن 2020’ منایا ،جس دوران مقبوضہ وادی کشمیر میں یہ بچے سلاک ڈاون کے بعد سب سے بڑے خطرے کی زد میں ہیں۔ جب سے ہندوستانی حکومت نے یہاں فوج کی تعداد میں زبردست اضافہ کیا ہے۔

ساوتھ ایشین وائر کے مطابق جارحیت کا شکار معصوم بچوں کابین الاقوامی دن ہر سال 4 جون کو منایا جاتا ہے۔ اس دن کو منانے کابنیادی مقصد یہ ہے کہ دنیا بھر کے بچوں کی تکالیف کو تسلیم کیاجائے۔

مقبوضہ وادی کشمیر میں بچوں کی صورتحال انتہائی سنگین ہے۔ مقبوضہ وادی میں پانچ دن گزارنے والے فیکٹ فائنڈنگ مشن کے مطابق ، آرٹیکل 370 منسوخ کرنے کے بعد راتوں رات تقریبا 13000لڑکوں کو حراست میں لے کر، غیر قانونی طور پر ، یا تو آرمی کیمپوں میں یا تھانوں میں رکھا گیا۔

ایک فیکٹ فائنڈنگ مشن جس میں خواتین حقوق کی کارکن کویتا کرشنن ، اکانومسٹ جین ڈریز ، آل انڈیا ڈیموکریٹک ویمن ایسوسی ایشن کی میمونہ مولا ، کمیونسٹ پارٹی آف انڈیا (م)کی خواتین کی ونگ کی رکن، اور ایک سماجی کارکن ومل بھائی شامل تھیں،گذشتہ سال 9 اور 13 اگست کے درمیان سری نگر ، سوپور ، بانڈی پورہ ، اننت ناگ ، شوپیان اور پامپور گئے تھے۔

مشن کی اس رپورٹ میں روشنی ڈالی گئی کہ کس طرح5 اگست کے بعد اس طرح کے چھاپوں کے دوران بھارتی فوج کے افسران نے رات کے وقت کم عمر لڑکوں کو اغوا کیا اور ان کے ساتھ بدسلوکی اور جنسی زیادتی کی۔ ان چھاپوں کا واحد مقصد خوف پیدا کرنا تھا۔ خواتین اور لڑکیوں نے مشن کو ان چھاپوں کے دوران مسلح افواج کی جنسی ہراسگی کے بارے میں بتایا۔ والدین پبلک سیکیورٹی ایکٹ کے مقدمات درج ہونے سے خوفزدہ تھے۔ دوسرا خوف یہ تھا کہ ان لڑکوں کو ‘لاپتہ’ کیا جاسکتا ہے – یعنی حراست میں لے کر انہیں کہیں اجتماعی قبروں میں نہ پھینک دیا جائے ۔مشن کی رپورٹ میں بتایا گیا کہ حکام نے لڑکوں کو گرفتار کرتے وقت ضرورت سے زیادہ طاقت کا استعمال کیا ، اور کچھ کو قید کے دوران بھی تشدد کا نشانہ بنایا گیا تھا۔

انٹرنیشنل ہیومن رائٹس ایسوسی ایشن آف امریکن اقلیتی ایسوسی ایشن آف چائلڈ رائٹس سے متعلق کمیٹی کے سامنے پیش کردہ ‘ہندوستان کے زیر قبضہ جموں و کشمیر میں بچوں کی صورتحال ‘ کے عنوان سے ایک اور رپورٹ کے مطابق مقبوضہ علاقے میں غیر معمولی "ہندوستانی قابض افواج اور خفیہ ایجنسیوں نے صرف ان کی کمزوری کی وجہ سے بچے کی زندگی کے کسی بھی پہلو کو نہیں بخشا۔ وہ متعدد جسمانی اور جذباتی بدسلوکیوں ،تشدد اور بے گھر ہونے جیسے خطرات کا سب سے بڑا شکار ہیں۔ بچوں کو ان کے اہل خانہ سے الگ ہوجانے کا زیادہ خطرہ ہے۔ لڑکیوں کو جنسی تشدد ، استحصال اور بدسلوکی کا خطرہ ہوتا ہے۔

ہندوستانی عوام کی ٹربیونل (آئی پی ٹی)کی ایک اور رپورٹ میں کشمیری بچوں کی حالت زار بھی بیان کی گئی ہے۔ ساوتھ ایشین وائر کے مطابق رپورٹ میں کہا گیا ہے کہ وادی میں مستقل ہنگاموں نے رہائشیوں خصوصا بچوں کے پورے طرز زندگی کو تبدیل کردیا ہے۔ بچپن کا سارا تصور وادی میں ایک بنیادی تبدیلی لے کر آیا ہے۔ بچے کنڈرگارٹن نہیں جاتے ،نرسری کی نظمیں نہیں سیکھتے ،کھلونوں سے نہیں کھیلتے ہیں ، جیسا کہ عام بچے کرتے ہیں۔ نہ ہی وہ آزاد ماحول میں اپنے والدین کی محبت ،شفقت اور نگہداشت میں پالے گئے ہیں۔

جموں وکشمیر کے مقبوضہ علاقے میں بچوں کے حقوق سے متعلق کنونشن کے ساتھ بھارتی حکومت کا رویہ ظالمانہ اور قابل مذمت ہے۔ در حقیقت ، کشمیر سے سامنے آنے والی اطلاعات سے یہ واضح طور پر ظاہر ہوتا ہے کہ کشمیریوں کے عزم کو متزلزل کرنے کے لئے بچوں کے خلاف دہشت گردی ایک دانستہ ہتھکنڈہ ہے ، اور اس طرح انہیں تحریک آزادی کی حمایت ترک کرنے پر مجبور کیا جاتا ہے۔

پاکستان حملہ کر دے گا، بھارتی فضائیہ کو کہاں لگا دیا گیا جان کر ہوں حیران

ہر سال 27 فروری کو آپریشن سوفٹ ریٹارٹ منایا جائے گا، پاک فضائیہ

پلوامہ حملہ مودی کی سازش تھی، گجرات کے وزیر اعلیٰ بھی بول پڑے

پلوامہ،لشکر سے وابستہ عسکریت پسندوں کی 5 بار نماز جنازہ ادا،دوسرے روز بھی مکمل ہڑتال

مقبوضہ کشمیر، شہداء کے جنازوں کو عسکریت پسندوں کی سلامی، بھارتی فوج دیکھتی رہ گئی

پلوامہ حملے میں ہلاک بھارتی فوجی کی اہلیہ کو کس کام کے لیے مجبور کیا جانے لگا؟

پلوامہ حملے کے لئے کیمیکل کہاں سے خریدا گیا؟ تحقیقاتی ادارے کے انکشاف پرکھلبلی مچ گئی

پلوامہ حملہ،عسکریت پسندوں نے کہاں سے منگوایا تھا حملے کیلئے سامان؟ بھارت کا نیا انکشاف

چین سے شرمناک شکست کے بعد مودی سرکار کی ایک اور پلوامہ ڈرامہ کی کوشش ناکام

بھارتی فوج کے کرنل نے کی سیاچین میں خودکشی

بھارت کشمیر میں ہار گیا، اب کشمیری سنگبازوں کا مقابلہ کریں گے روبوٹ

بھارت کی پاکستان کے خلاف ہرزہ سرائی، کہا سرحد پار سے عسکریت پسند آ رہے ہیں

کشمیر میں رواں برس بھارتی فوجیوں کی ہلاکت میں اضافے سے مودی سرکار پریشان

پلوامہ حملے میں استعمال ہونیوالی گاڑی کے مالک کو کیا بھارتی فوج نے شہید

ساوتھ ایشین وائر کے مطابق مقبوضہ کشمیر میں ، ہندوستانی فوج نے گذشتہ 31برس میں 811 کمسن لڑکوں اور لڑکیوں کو شہید کیا۔مقبوضہ کشمیر میں جو عام شہری شہید ہوئے ، ان کی وجہ سے 90ہزار سے زائد بچے یتیم ہوگئے۔گزشتہ ایک سال کے دوران بھارتی فوجیوں کی فائرنگ سے اسکول کے لڑکے اور لڑکیاں بھی زخمی ہوئے ہیں۔ جن میں کچھ پیلٹ گنز کی گولیوں کے زخموں کی وجہ سے مکمل طور پر اپنی ایک یا دونوں آنکھوں میں بینائی کھو چکے تھے۔

مقبوضہ علاقے کی مختلف جیلوں میں درجنوں لڑکے اور 20 سال سے کم عمر کی کچھ لڑکیاں غیر قانونی نظربند ہیں۔

مودی سرکار نے مقبوضہ کشمیر کے طلبا پر آزاد کشمیر کے تعلیمی اداروں میں داخلوں پر پابندی لگا دی

جواب چھوڑیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا.