ایمنیسٹی انٹر نیشنل نے مقبوضہ کشمیر سے انٹر نیٹ کی بندش کے خاتمے کا فوری مطالبہ کر دیا

ایمنیسٹی انٹر نیشنل نے مقبوضہ کشمیر سے انٹر نیٹ کی بندش کے خاتمے کا فوری مطالبہ کر دیا

باغی ٹ وی رپورٹ کے مطابق ایمنسٹی انٹر نیشنل نے کشمیرمیں بھارتی مظالم اور انسانی حقوق کی خلاف ورزیوں کو ختم کرنے کا مطالبہ کرتے ہوئے کہا ہے کہ کشمیرسے مواصلات اور انٹرنیٹ کی کی فوری بحالی کی جائے. اپنی رپورٹ جاری کرتے ہوئے ایمنسٹی نے لکھا ہےکہ ایسی دنیا کا تصور کریں جسے آپ گھر نہیں کہہ سکتے ہیں۔ پوری دنیا کے ہزاروں کشمیریوں کی یہی حقیقت ہے۔ اس خطے میں مقیم آٹھ لاکھ کشمیری آج ایک ماہ سے زیادہ عرصے سے اپنے گھروں میں بند ہیں۔ اس علاقے سے باہر کرفیو ، احتجاج ، طبی ہنگامی صورتحال اور انتظامیہ کے ذریعہ ضرورت سے زیادہ طاقت کے استعمال کی کہانیوں کے درمیان ان کے دوست اور کنبہ کن رابطے میں نہیں آسکتے ہیں۔ محاصرے میں رہتے ہوئے اہل خانہ کو پھاڑ دیا گیا۔ یہ کشمیری عوام کے لئے اجتماعی سزا ہے۔

بھارتی ایمنسٹی انٹرنیشنل نے پابندیاں ختم کرانے کیلئے مہم کا آغاز کردیا، تنظیم نے گورنر مقبوضہ کشمیر ستیاپال ملک کو خط لکھ دیا، جس میں مطالبہ کیا گیا ہے کہ وادی میں لاک ڈاؤن ختم کیا جائے۔

بھارت کی جانب سے جبری کرفیو، انٹرنیٹ، موبائل اور فون سروس کی معطلی اور صحافیوں پر مقبوضہ کشمیر کی کوریج پر پابندیوں کے باعث کشمیروں کے حالات کی کسی کو کچھ خبر نہیں مل رہی، لاکھوں افراد انتہائی نامساعد حالات میں زندگی گزار رہے ہیں۔

بی جے پی حکومت نے گزشتہ ماہ بھارتی آئین کے تحت کشمیر کو حاصل خصوصی حیثیت سے متعلق آرٹیکل 370 اور 35 اے کا خاتمہ کردیا تھا، جس کے بعد کشمیریوں کی جانب سے شدید رد عمل کا اظہار کیا گیا، دنیا کو وادی کے حالات سے بے خبر رکھنے کیلئے مودی حکومت نے مسلسل کرفیو نافذ کر رکھا ہے۔

جواب چھوڑیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا.