ورلڈ ہیڈر ایڈ

مقبوضہ کشمیر، مظاہرہ کے دوران سابق وزیراعلیٰ کی بہن اور بیٹی بھی گرفتار

مقبوضہ جموں و کشمیر میں آج خواتین نے زبردست احتجاجی مظاہرہ کیا۔ احتجاج کے دوران مقبوضہ کشمیر کے سابق وزیراعلیٰ اور بھارت نواز سیاست دان کی بہن اور بیٹی کو بھی گرفتار کر لیا گیا۔

مقبوضہ کشمیر، مسلسل دسویں جمعہ کو نماز جمعہ نہ ہو سکا

بھارتی میڈیا کے مطابق مقبوضہ کشمیر کی خصوصی حیثیت ختم کیے جانے اور آرٹیکل 370 ہٹانے کے خلاف سری نگر میں زبردست مظاہرہ کیا گیا۔ لال چوک میں ہونے والا یہ مظاہرہ سول سوسائٹی کی طرف سے کیا گیا۔

مظاہرہ میں مقبوضہ وادی کے سابق وزیراعلیٰ فاروق عبداللہ کی بہن ثریا اور بیٹی صفیہ کو پولیس نے گرفتار کر لیا ہے۔ احتجاجی مظاہرہ میں خواتین نے بڑی تعداد میں شرکت کی ۔

مقبوضہ کشمیر میں پتھر بازی کے کتنے واقعات ہوئے؟

واضح رہے کہ مودی حکومت کا مسلسل دعوی ہے کہ مقبوضہ جموں و کشمیر میں حالات تیزی سے بہتری کی جانب گامزن ہیں۔ اپنے دعوی کو سچا ثابت کرنے کے لیے حکومت نے پرانی تصاویر کا سہارا بھی لیا ہے۔ مقبوضہ وادی کی صورت حال بھارتی بیانیہ سے مکمل طور پر مختلف ہے۔

مقبوضہ کشمیر : ہیومن رائٹس واچ ایک بار پھر بھارتی مظالم پر بول پڑا

بھارتی حکومت کے ایک سرکاری نوٹ کے مطابق گزشتہ دو ماہ میں پتھر بازی کے 306 مختلف واقعات رونما ہوئے۔بھارتی میڈیا کی رپورٹ کے مطابق سیکورٹی فورسز نے اپنی ایک دستاویز میں پتھر بازی کے ان واقعات میں 100 سیکورٹی اہلکار کے زخمی ہونے کا ذکر کیا ہے جن میں 89 کا تعلق نیم فوجی دستوں سے ہے۔

یاد رہے کہ وادی میں 5اگست سے کرفیو نافذ ہے ۔ موبائل اور انٹرنیٹ سروس بھی گذشتہ دو ماہ سے بند ہے۔ مقبوضہ وادی میں تمام بھارت نواز سیاستدان بھی گذشتہ دو ماہ سے نظر بند یا قید ہیں۔ نیشنل کانفرنس کے صدر ڈاکٹر فاروق عبداللہ پر پبلک سیفٹی ایکٹ کا اطلاق کیا گیا ہے۔ فاروق عبداللہ اپنے ہی گھر میں نظربند ہیں۔

جواب چھوڑیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا.