جنگ نہیں چاہتےلیکن اپنی فضائی،زمینی،سمندری حدود کادفاع کرنا جانتےہیں،ایرانی وزیر خارجہ جواد ظریف

تہران:ایران کی طرف سے امریکی ڈرون کو گرائے جانے کے بعد ایران اور امریکہ کے درمیان لفاظی جنگ شروع ہوگئی ہے۔ ڈرون گرائے جانے پر امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ کے دھمکی آمیز بیان کے بعد ایرانی وزیر خارجہ جواد ظریف بھی میدان میں آگئے ہیں اور امریکہ کو خبردار کرتے ہوئے کہا ہے کہ ایران ہم جنگ نہیں چاہتالیکن اپنی فضائی،زمینی،سمندری حدود کادفاع کرنا جانتا ہے۔ جوادظریف نے ردعمل دیتے ہوئے کہا ہے کہ امریکا نےایران کےخلاف معاشی دہشت گردی شروع کر رکھی ہےجو ایران کے کسی بھی صورت میں قابل قبول نہیں ۔

ایک اور بیان میں جواد ظریف نے کہا ہے کہ امریکا اب ہماری حدود کی خلاف ورزی بھی کر رہا ہے۔
انہوں نے کہا ہے کہ امریکا جھوٹ بول رہا ہے کہ امریکی ڈرون بین الاقوامی فضائی حدود میں تھا۔جواد ظریف نے اس موقع پر یہ بھی کہا ہے کہ ایران اس معاملے کو اقوام متحدہ میں لے کر جائے گا اور امریکہ کی طرف سے ایران کی فضائی حدود کی خلاف ورزی کا معاملہ اٹھائے گا۔ جواد ظریف نے عالمی دنیا پر زور دیا ہے کہ وہ امریکہ رویے کی مذمت کرے۔ یاد رہے کہ خلیج میں امریکہ اور ایران کے درمیان اس وقت سخت کشیدگی پائی جاتی ہے اور امریکہ یمن کی موجودہ صورت کا ایران کو ذمہ دار قرار دے رہا ہے۔

جواب چھوڑیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا.