عرفان خان کی موت پر عدنان صدیقی کا تعزیتی پیغام

بھارتی معروف اداکار عرفان خان 53 سال کی عمر میں گزشتہ روز انتقال کرگئے تھے ان کے اچانک انتقال کی خبر سے مداحوں کے ساتھ بھارتی فنکاروں اور پاکساتنی فنکاروں کو بھی حیران پریشان کر دیا

باغی ٹی وی : بھارتی میڈیا رپورٹس کے مطابق عرفان خان کو منگل کے روز ممبئی کے ایک ہسپتال میں اس وقت داخل کروایا گیا جب ان کی طبیعت اچانک خراب ہوگئی رپورٹ میں بتایا گیا کہ اداکار کو بڑی آنت کا انفیکشن ہوا تھا جس کے علاج کے لیے وہ ہسپتال میں داخل ہوئے عرفان خان نے سوگواران میں اہلیہ ستاپا اور دو بیٹے بابیل اور ایان چھوڑے ہیں

ان کے انتقال کے بعد دنیا بھر میں موجود ان کے مداحوں اور ساتھی اداکاروں نے سوشل میڈیا پر اپنے دکھ کا اظہار کیا اور خراج تحسین بھی پیش کیا

View this post on Instagram

“Inna Lillahi wa inna ilayhi raji'un”….. "Verily we belong to God, and verily to Him do we return."! . . . Disturbed and gutted!! A fine soul gone too soon. I had the honour of first meeting Irrfan as a co-star on the sets of ‘A Mighty Heart.’ For one of the scenes after learning his lines I saw him doing the scene again and again which left me puzzled. I asked him, Irrfan Sahab ye kya kar rahe hain aap? He replied- We’re both playing CID agents which means we’ll be showing our ID cards everywhere. I’m practicising the scene so I don’t look clumsy while showing the ID card. And that was the first time I realised what a fine actor he was. We’d become friends on the sets and used to hang out together after the shoot. I remember for another scene, he wanted to know a word in Urdu used commonly in Pakistan and he asked me. He was a great actor but didn’t shy away from learning and perfecting his art. One of the evenings, he shared an incident where him and his friend got the role of an extra actor in James Bond series “Octopussy” which was shot in India. But because they cycled to the set, they were late and the shoot was over. He told me since then he wanted to do a Hollywood movie. Our careers in Hollywood started together, but he proved his mettle and conquered the fort. In 2018 while attending IPPA in London. I found out that he was in London, though he wasn’t meeting anyone he agreed to meet me. We had a long chat about movies and world in general. He looked so positive. His last words were- “Adnan, I’ll be fine very soon and I’ll be back. InshAllah”! Who knew today, I would be penning this note. Condolences and strength to his family. Irrfan, you will be missed a lot. Rest in peace my friend.🙏

A post shared by Adnan Siddiqui (@adnansid1) on


پاکستان شوبز اندسٹری کے معروف اداکار عدنان صدیقی نے بھی عرفان خان کے انتقال کے بعد سوشل میڈیا ویب سائٹ انسٹا گرام پر ان کے لیے ایک طویل نوٹ جاری کیا اور عرفان خان کے ساتھ اپنی دوستی کے بارے میں بھی مداحوں کو بھی بتایا

عدنان صدیقی نےاپنی اور عدنان صدیقی کی تصویر سوشل میڈیا پع شئیر کی اور کیپشن میں لکھا کہ ایک بہترین شخص بہت جلدی چلا گیا، مجھے عرفان خان سے پہلی بار ملنے کا اعزاز ’اے مائٹی ہارٹ‘ فلم کے سیٹ پر ملا ایک سین کے دوران جب ہم نے اپنی لائنز پڑھ لی تو میں نے دیکھا کہ وہ ایک سین بار بار کررہے ہیں میں یہ دیکھ کر حیران ہوا

عدنان صدیقی نے لکھا میں نے ان سے پوچھا عرفان صاحب یہ کررہے ہیں آپ؟ اس پر انہوں نے جواب دیا ہم دونوں سی آئی ڈی ایجنٹس کا کردار نبھا رہے ہیں جس کا مطلب ہمیں ہر جگہ اپنا آئی ڈی دکھانا پڑے گا میں یہ سین پریکٹس کررہا ہوں تاکہ اصل سین کے دوران جب میں آئی ڈی کارڈ دکھاؤں تو عجیب نہ لگوں اور یہ پہلا موقع تھا جب مجھے احساس ہوا کہ وہ کتنے بہترین اداکار ہیں

انہوں نے لکھا کہ ہم اس فلم کے سیٹ پر اچھے دوست بن گئے اور شوٹ کے بعد ایک ساتھ رہتے تھے اور گھوما کرتے تھے عدنان صدیقی نے لکھا مجھے یاد ہے کہ ایک اور سین کے لیے وہ پاکستان میں عام استعمال ہونے والا اردو کا ایک لفظ سیکھنا چاہتے تھے اور انہوں نے اس حوالے سے مجھ سے پوچھا وہ ایک زبردست اداکار تھے لیکن اپنے فن کو مزید بہتر کرنے کے لیے کچھ بھی پوچھنے پر ہچکچاتے نہیں تھے

اداکار نے لکھا کہ ایک شام انہوں نے مجھے بتایا کہ انہیں اور ان کے دوست کو جیمز بانڈ سیریز کی فلم اکٹوپسی میں ایکسٹرا اداکاروں کا کردار آفر ہوا اس فلم کی شوٹنگ بھارت میں ہوئی تھی لیکن وہ سائیکل چلا کر سیٹس تک پہنچتے تھے تو انہیں دیر ہوگئی اور شوٹ ختم ہوچکا تھا انہوں نے مجھے بتایا کہ اس وقت سے وہ ہا لی وڈ فلم میں کام کرنے کے خواہشمند تھے ہا لی وڈ میں ہمارے کیریئر کا آغاز ساتھ ہوا لیکن عرفان خان نے اپنا ثابت کر دکھایا اور مقام حاصل کیا

عدنا صدیقی نے مزید لکھا کہ 2018 میں لندن میں آئی پی پی اے میں شرکت کے دوران مجھے پتا چلا کہ عرفان خان بھی لندن میں موجود ہیں وہ اس دوران کسی سے نہیں مل رہے تھے البتہ انہوں نے مجھ سے ملاقات کرنے پر اتفاق کیا اس دوران ہم نے فلموں اور دنیا کے دیگر موضوعات پر بات چیت کی وہ بےحد مثبت نظر آرہے تھے ان کے آخری الفاظ یہ تھے ’عدنان میں جلد ٹھیک ہوکر واپس آوں گا‘ انشاءاللہ کون جانتا تھا کہ آب میں ان کے لیے یہ نوٹ تحریر کروں گا

عدنان صدیقی نے ان کے اہل خانہ سے تعزیت کی اور عرفان‌خان کی روح کے سکون کے لئے دعا کی اور لکھا کہ ہم آپ کو ہمیشہ یاد کریں گے

یاد رہے کہ عدنان صدیقی اور عرفان خان نے 2007 کی ہولی وڈ فلم ’اے مائٹی ہارٹ‘ میں اکٹھے کام کیا تھا

عرفان خان کے انتقال پر بالی وڈ فنکاروں کا افسوس کا اظہار

عرفان خان کے انتقال پر پاکستانی فنکاروں کا افسوس کا اظہار

جواب چھوڑیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا.