fbpx

اسلام آباد ،گرفتار ملازمین رہا، دھرنے کا مقام تبدیل

اسلام آباد ،گرفتار ملازمین رہا، دھرنے کا مقام تبدیل

باغی ٹی وی کی رپورٹ کے مطابق وفاقی دارالحکومت اسلام آباد میں گزشتہ روز گرفتار کئے گئے ملازمین کو رہا کردیا گیا

تمام گرفتار ملازمین رہائی کے بعد ڈی چوک پہنچ گئے،سرکاری ملازمین نے احتجاج کا مقام تبدیل کرنے کا اعلان کر دیا،رحمان باجوہ کا کہنا ہے کہ نیشنل پریس کلب کے باہراحتجاج کریں گے،ملازمین پاک سیکریٹریٹ کے گیٹ کھول دیں،

دوسری جانب سرکاری ملازمین میٹرو ٹریک پر آ گئے، میٹرو کارڈز کی جانب سے منع کرنے پر سرکاری ملازمین جھگڑ پڑے، مظاہرین نے میٹرو گارڈز کو دھکے مارے اور گالم گلوچ کیا

دوسری جانب جوڈیشل کمپلیکس کے سرکاری ملازمین نے بھی قلم چھوڑ احتجاج شروع کر دیا،ملازمین کا کہنا ہے کہ مہنگائی کے تناسب سے تنخواہوں میں اضافہ کیا جائے،ہماری تنخواہوں کو دیگر عدالتوں کے برابر کیا جائے،ہماری تنخواہوں میں مہنگائی کے تناسب سے اضافہ کیا جائے،جوڈیشل الاوَنس اور یوٹیلیٹی الاؤنس دیئے جائیں، مطالبات نہ مانے گئے تو ڈی چوک جا کر احتجاج میں شریک ہوں گے،

واضح رہے اسلام آباد کی شاہراہ دستور گزشتہ روز میدان جنگ بنی رہی، صبح سویرے ہی مطالبات کے حق میں احتجاج کے لیے وفاقی ملازمین نے کام چھوڑا اور ڈی چوک پہنچ گئے۔ پولیس نے ملازمین کو گرفتار کیا تو پتھراؤ شرو ع کر دیا گیا۔ پولیس کی جوابی شیلنگ سے ایک سرکاری ملازم زخمی جبکہ میڈیا ورکرز سمیت کئی افراد کی حالت غیر ہوگئی۔

مشتعل ملازمین نے وزیر اطلاعات شبلی فراز کی گاڑی بھی روک لی، احتجاج کے باعث پاک سیکرٹریٹ کے دروازے بند کر دیئے گئے جو مغرب کے بعد کھولے گئے۔ احتجاج کے باعث اسلام آباد کی کئی شاہراوں پر دن بھر شدید ٹریفک جام رہا جس سے شہریوں سخت مشکلات کا سامنا رہا۔

اسلام آباد میں پاک سیکرٹریٹ کو تالے لگ گئے، گرفتاریاں شروع

ڈی چوک، ملازمین کا دھرنا جاری، گرفتاریوں کے بعد ملازمین ڈٹ گئے،بڑا اعلان کر دیا

سرکاری ملازمین کا احتجاج جاری، شیخ رشید نے کیا بڑا اعلان

جعلی حکمران اتنا ظلم کریں، جتنا خود سہہ سکیں،مریم نواز

اپوزیشن کی تمام بڑی جماعتوں کا سرکاری ملازمین کی حمایت کا اعلان

وفاقی سرکاری ملازمین کا دھرنا ناکام بنانے کے لئے پکڑ دھکڑ کا سلسلہ شروع کر دیا گیا ہے تھانہ سیکریٹریٹ پولیس نے دھرنے کے 7 قائدین حراست میں لے لیا گرفتار افراد میں چیف آرگنائزر آل پاکستان ایمپلائز گرینڈ الائنس رحمان باجوہ شامل ہیں

ملازمین کا کہنا ہے کہ ان گرفتاریوں سے ہم ڈرنے والے نہیں ، ہم اپنا حق لے کر جاہیں گے ،تمام گرفتار ملازمین کو فوراً رہا کیا جائے اور ملازمین کا حق انکو دیا جائے۔ اگر ملازمین لیڈران کو فل فور کو رہا نہ کیا گیا تو حالات کی ذمہ دار حکومت ہو گی ۔

جواب چھوڑیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا.