fbpx

اسلام آباد میں ڈکیتی، قتل،زیادتی کے واقعات اداروں کی کارکردگی پر سوالیہ نشان

اسلام آباد میں ڈکیتی، قتل،زیادتی کے واقعات اداروں کی کارکردگی پر سوالیہ نشان

سینیٹ کی قائمہ کمیٹی برائے داخلہ کا اجلاس چیئرمین کمیٹی سینیٹر محسن عزیز کی زیر صدارت پارلیمنٹ ہاؤس میں منعقد ہوا۔

قائمہ کمیٹی کے اجلاس میں وفاقی دارالحکمومت اسلام آباد میں بڑھتے ہوئے چوری، ڈکیتی، ریپ، قتل و دیگر جرائم کے واقعات کے تدارک کیلئے اسلام آباد پولیس کی طرف سے امن و امان کو برقرار رکھنے اور جرائم کے تدارک کیلئے اٹھائے گئے اقدامات کے علاوہ سینیٹر نزہت صادق کی F-10 سیکٹر میں واقعہ رہائش گاہ میں ہونے والی ڈکیتی کے واقعہ کے علاوہ اسلام آباد کے سیکٹر G-13 میں ہونے والی چوری کے حوالے سے پولیس کے غیر پیشہ وارانہ رویے اور اس کیلئے قائمہ کمیٹی کی سفارشات پر عملدرآمد کے معاملات کا تفصیل سے جائزہ لیا گیا۔چیئرمین و اراکین کمیٹی نے وفاقی دارلحکومت اسلام آباد میں امن و امان، چوری، ڈکیتی و دیگر جرائم کی بڑھتی ہوئی وارداتوں پر شدید تحفظات کا اظہارکرتے ہوئے کہا کہ متعلقہ اداروں کو مناسب متحرک ہونا چاہئے لوگوں کو تحفظ فراہم کرنا فرائض منصبی میں شامل ہے۔ دارلحکومت میں امن و امان کے حالات کی تنزلی سے تمام لوگ پریشان ہیں اور اسلام آباد کے پوش علاقوں میں چوری، ڈکیتی، قتل اور زیادتی کے واقعات ہونا متعلقہ اداروں کی کارکردگی پر سوالیہ نشان بن گئے ہیں۔

وزیراعظم نے جہانگیر ترین بارے کیا رپورٹ مانگی تھی؟ بیرسٹر علی ظفر کا انکشاف

اسلام آباد ہائیکورٹ نے جہانگیر ترین بارے درخواست پر فیصلہ سنا دیا

بریکنگ..شہزاد اکبر کھل کر جہانگیر ترین گروپ کیخلاف آ گئے، مقدمہ درج کروا دیا

جہانگیر ترین کیخلاف کاروائی سے پہلے عدالت کو بتانا ہو گا،عدالت کا حکم، درخواست ضمانت واپس

جہانگیر ترین کی شوگر ملز کے‌ حوالہ سے درخواست کیوں مسترد ہوئی؟ تحریری فیصلہ جاری

جہانگیر ترین فیصلہ کر لیں پارٹی میں رہنا ہے یا نہیں، میرے ساتھ بھی زیادتی ہوتی رہی،پی ٹی آئی رہنما برس پڑے

جہانگیر ترین گروپ کی آج کس شخصیت سے ملاقات طے؟ پنجاب میں تہلکہ مچ گیا

جہانگیر ترین گروپ کا آج ہونے والا اجلاس ایک بار پھر موخر

جہانگیر ترین بارے رپورٹ وزیراعظم کو پیش،اہم شخصیت کا بڑا دعویٰ

آرڈر پر عمل نہ ہوا تو سیکریٹری داخلہ، چیف کمشنر، آئی جی اسلام آباد پیش ہوں،عدالت

سینیٹر نزہت صادق کی رہائش گاہ پر ہونے والی ڈکیتی کے حوالے سے سینیٹر نزہت صادق نے کہا کہ دوپہر ڈیڑھ بجے کے قریب ایک سفید گاڑی میں پانچ سے چھ افراد ہمارے گھر میں داخل ہوئے۔ گھر کے ملازمین کو یرغمال بنا کر ڈکیتی کی گئی میرے خاوند بھی گھر پر موجود تھے۔ سیکٹر F-10میں گزشتہ چند دنوں کے دوران بہت سی ڈکیتیوں کے وارداتیں ہو چکی ہیں۔ حکومت کی ناک کے نیچے ایسے حالات ہونا لمحہ فکریہ ہے 15پر کال بھی کی نمبر مصروف تھا اور کسی نے 15سے بیک کال نہیں کی۔ ڈکیتی کرنے والے صاف ستھرے اور اچھے کپڑوں میں تھے۔آئی جی اسلام آباد پولیس قاضی جمیل نے قائمہ کمیٹی کو بتایا کہ لوگوں کو امن و امان اور تحفظ فراہم کرنا ہمارا فرائض منصبی ہے اور بھر پور کوشش کی جا رہی ہے کہ اسلام آباد میں جرائم کی شرح کو جتنا زیادہ ممکن ہو سکے کم سے کم کیا جائے اس کے لئے اقدامات بھی اٹھائے جا رہے ہیں۔ حالات تیزی سے تبدیل ہو رہے ہیں بے شمار گروپس اور نئے گینگ بن گئے ہیں۔ محکمہ پولیس امن و امان اور تحفظ کی فراہمی کیلئے نئی اصلاحات عمل میں لا رہی ہے۔ فوری ایکشن کیلئے سسٹم بنائے جا رہے ہیں پولیس کی گاڑیوں اور بائیکس پر ٹریکر لگائے جا رہے ہیں اور موبائل گاڑیوں کی تعداد بھی بڑھائی جا رہی ہے۔ انہوں نے قائمہ کمیٹی کو بتایا کہ اسلام آباد کو سیف سٹی بنانے کیلئے 2008میں سیف سٹی منصوبہ شروع کیا گیا جو 2018میں مکمل ہو ا۔ 1900 کیمرے لگائے گئے 96 فیصد کام کر رہے ہیں۔ یہ منصوبہ دس سال پہلے کی آباد ی کیلئے تھا اب اسلام آباد بہت پھیل چکا ہے اور موجودہ کیمروں سے صرف 30فیصد کوریج کی جا رہی ہے۔1900مزید کیمروں کیلئے پلان بنا کر بھیجا گیا ہے بہتر تحفظ اور سیکورٹی کو یقینی بنانے کیلئے پرائیویٹ تنظیموں کو بھی ساتھ ملایا جا رہا ہے۔ سمارٹ گاڑیاں لی جا رہی ہیں اور صوبہ خیبر پختونخواہ، پنجاب اور سندھ سے بھی مشاورت کی جا رہی ہے صوبائی حکومتوں کے ساتھ مل کر کیرمینل لوگوں کا ڈیٹا اکٹھا کیا جا رہا ہے بہتر ٹیکنالوجی کے استعمال سے معاملات میں بہتری لائی جا ئے گی۔

میرا کچرا،میری ذمہ داری،برطانوی ہائی کمشنر ایک بار پھر مارگلہ کی پہاڑیوں پر پہنچ گئے

وزیراعظم کی رہائشگاہ بنی گالہ کے قریب کسی بھی وقت بڑے خونی تصادم کا خطرہ

مارگلہ کے پہاڑوں پر قبضہ،درختوں کی کٹائی جاری ،ادارے بنے خاموش تماشائی

سپریم کورٹ کا مارگلہ ہلز میں مونال ریسٹورنٹ کے حوالہ سے بڑا حکم

مارگلہ ہلز ، درختوں کی غیرقانونی کٹائی ،وزارت موسمیاتی تبدیلی کا بھی ایکشن

 ماحولیاتی منظوری کے بغیر مارگلہ ایونیو کی تعمیر کیس پر فیصلہ محفوظ 

جو نقشے عدالت میں پیش کئے گئے وہ سب جعلی،یہ سب ملے ہوئے ہیں، مارگلہ ہلز کیس میں چیف جسٹس کے ریمارکس

نور مقدم قتل کیس، ظاہر جعفر پر ایک اور مقدمہ درج

مارگلہ کی پہاڑیوں پر تعمیرات پر پابندی عائد

سینیٹر فوزیہ ارشد نے کہا کہ قائمہ کمیٹی کو پہلے بتایا گیا تھا کہ ایک چپ کے ذریعے گاڑیوں کی ٹریکنگ کی جائے گی۔ انہوں نے کہا کہ تھانوں میں ثالثی کمیٹیاں بھی ہیں ایک سیکٹر کے چار سب سیکٹرز ہوتے ہیں رضا کاروں کو شامل کیا جائے او ر اسلا م آباد کے مختلف سیکٹرز کے مراکز جرائم کے گڑھ ہیں پولیس کی نفری نظر آنی چاہئے۔ انہوں نے کہا کہ ایس ایچ او تھانے کا انچارج ہوتا ہے مگر افسوس کی بات ہے کہ انچارج کا رویہ عام عوام کے ساتھ انتہائی نا مناسب ہوتا ہے۔ کمیٹی کو بتایا گیا کہ محکمہ پولیس کے پاس پیٹرولنگ کیلئے 49گاڑیاں اور 130موٹر سائیکل ہیں۔ عام عوام کو تنگ کرنے والے پولیس اہلکاروں کے خلاف اقدامات اٹھائے جا تے ہیں کچھ اہلکاروں کو معطل اور قید بھی کیا گیا ہے۔ قائمہ کمیٹی کو یہ بھی بتایا گیا کہ کرونا کے دوران 52سو کے قریب احتجاج، جلسے، جلوس و دیگر لوگوں کے اجتماع ہوئے اُن کو کنٹرول کرنے کیلئے بھی پولیس نے اقدامات اٹھائے۔ قائمہ کمیٹی کو بتایا گیا کہ 2017میں اسلا م آباد میں قتل چوری، اغوا اور ڈکیتوں کے 7136، 2018میں 9465، 2019میں 9748، 2020میں 10539کیسز رپورٹ ہوئے۔

قائمہ کمیٹی کے اجلاس میں اسلام آباد کے سیکٹر G-9میں ہونے والی ہوائی فائرنگ اور آتش بازی کے واقعات پر چیئرمین کمیٹی سینیٹر محسن عزیز نے کہا کہ ان کے تدارک کیلئے اقدامات اٹھائے جائیں۔ سینیٹر رانا مقبول نے کہا کہ ہوائی فائرنگ کرنے والوں کے خلاف دہشت گردی کا مقدمہ درج کیا جائے اور ایف آئی آر درج کرنے سے معاملات بہتر ہو سکتے ہیں۔اسلام آباد کے سیکٹر G-13 میں ہونے والی چوری کے حوالے سے پولیس کے غیر پیشہ وارانہ رویے اور اس کیلئے قائمہ کمیٹی کی سفارشات پر عملدرآمد کے حوالے سے کمیٹی کو بتایا گیا کہ کمیٹی نے جو سفارشات دی تھیں اُن پر عملدرآمد کر دیا گیا ہے۔ ملزم ٹریس کر لئے گئے ہیں اور دس دن کے اندر تمام ملزمان کو پکڑ لیا جائے گا۔ سینیٹر دلاور خان نے کہا کہ جن لوگوں کے ساتھ کوئی واقعہ پیش آتا ہے وہ تھانے رپورٹ کیلئے جائیں تو آفسران سے لے کر اہلکاروں کا رویہ انتہائی نا مناسب اور پریشان کن ہوتا ہے لوگ تھانے میں مدد کیلئے جاتے ہیں مگر ذلیل و خوار کیا جاتا ہے۔ افسران و سٹاف کے رویوں کی بہتری کیلئے محکمہ پولیس کو مناسب تربیت فراہم کرنی چاہئے۔

کمیٹی کے آج کے اجلاس میں سینیٹر ز ثمینہ ممتاز زہری، سیف اللہ ابڑو، رانا مقبول احمد، شہادت اعوان، محمد طلحہ محمود، فوزیہ ارشد، دلاور خان اور نزہت صادق کے علاوہ آئی جی اسلام آباد پولیس قاضی جمیل،ڈی آئی جی آپریشن اسلام آباد، ڈی آئی جی سیف سٹی، جوائیٹ سیکرٹری وزارت داخلہ، ڈی سی اسلام آباد و دیگر اعلیٰ حکام نے شرکت کی