fbpx

جعلی ڈگری ،سپریم کورٹ کا وکلا پر مشتمل کمیٹی تشکیل دینے کا عندیہ

جعلی ڈگری ،سپریم کورٹ کا وکلا پر مشتمل کمیٹی تشکیل دینے کا عندیہ

سپریم کورٹ میں وکلاء کی جعلی ڈگریوں سے متعلق فیصلے پر عملدرآمد کیس کی سماعت ہوئی

سپریم کورٹ نے جعلی ڈگری ،لاء کالجز کے معیار جانچنے کیلئے وکلا پر مشتمل کمیٹی تشکیل دینے کا عندیہ دے دیا عدالت نے بار کونسلز سے سینئر اور پیشہ ور وکلاء کے نام طلب کرلئے ، جسٹس عمر عطا بندیال نے ریمارکس دیتے ہوئے کہا کہ وکلاء کی جعلی ڈگریوں کے اس مسئلے کو عدالت سمیٹنا چاہتی ہے،قائمقام چیف جسٹس نے ریمارکس دیتے ہوئے کہا کہ سپریم کورٹ صرف وکلاء کی مدد کرسکتی ہے، اس کیس کو وکلاء کی تعلیمی معیار کو بہتر بنانے کیلئے سنا گیا تھا،ابھی تک سپریم کورٹ کے فیصلے پر عمل نہیں ہو سکا، پاکستان بار کونسل کو اس سارے عمل کا جائزہ لینا چاہیے،

پاکستان بار کونسل کے تمام امیدواروں کی ڈگریاں چیک کرنے کا حکم

وکلا کی جعلی ڈگریوں کے حوالے سے کیس،عدالت نے اہم شخصیت کو کیا طلب

جعلی ڈگریوں پرملازمت کیس میں سپریم کورٹ کے اہم ریمارکس

جعلی ڈگری کیس، عدالت نے سابق سینیٹر کو سزا سنا دی،گرفتار کرنیکا حکم

وکیل عامر علی شاہ نے عدالت میں کہا کہ سپریم کورٹ جعلی ڈگریوں کے معاملے پر جے آئی ٹی تشکیل دے،وکلا میں جعلی ڈگری والا کا ایک لشکر بن چکا ہے،قائمقام چیف جسٹس نے ریمارکس دیتے وہئے کہا کہ وکیل امتحانات سے نہیں تجربہ سے بنتے ہیں، معاملہ پر کمیٹی تشکیل دیں گے بار کونسلز نام تجویز کریں،عدالت نے کیس کی مزید سماعت دو ہفتوں کیلئے ملتوی کر دی

واضح رہے کہ جوڈیشل کمپلکس میں 491 کیسسز میں عدالت میں پیش ہونے والے بیرسٹر کی ڈگری بھی جعلی نکل آئی ہے. نام اور بھیس بدل کر جوڈیشل کمپلکس کام کرنے والی صباء کنول کی ڈگری بھی جعلی نکل آئی ہے.20 وکلاء کے پاس پنجاب یونیورسٹی، 5 وکلاء نے کراچی جبکہ 1 وکیل کی اسلامی یونیورسٹی کی جعلی ڈگری پیش کی تھی. ڈسٹرکٹ بار ایسوسی ایشن کی درخواست پر تھانہ سول لائن پولیس نے کاروائی شروع کر دی ہے جعلی خاتون وکیل کے خلاف تھانہ سول لائن نے گزشتہ برس 20 اکتوبر کو بھی مقدمہ درج کیا تھا، جعلی بیرسٹر میاں ممتاز حیسن کے خلاف تھانہ سول لائن پولیس نے گزشتہ برس 26 جون کو مقدمہ درج کیا تھا.

Facebook Notice for EU! You need to login to view and post FB Comments!