fbpx

جیمز ویب ٹیلی اسکوپ سے خلائی چٹان کا ایک ٹکڑا ٹکرا گیا

خلا میں موجود ناسا کی جیمز ویب اسپیس ٹیلی اسکوپ سے خلائی چٹان کا ایک ٹکڑا ٹکرا گیا،جیمز ویب کو دسمبر میں ہبل اسپیس ٹیلی سکوپ کی کامیابی کے لیے لانچ کیا گیا تھا۔

باغی ٹی وی : امریکی خلائی ایجنسی کے مطابق ٹیلی اسکوپ کے بڑے آئینوں میں سے ایک کی ٹکر ایک چھوٹے شہابی پتھر کے ساتھ ہوئی جو توقع اور زمین کی آزمائش میں انجینیئرز کی جانب سے رکھے جانے والے نمونے سے زیادہ بڑا تھا دوربین بنانے والے انجینئرز خلا کی سختیوں سے بہت زیادہ واقف ہیں، اور ویب کو احتیاط سے ان کا مقابلہ کرنے کے لیے ڈیزائن کیا گیا ہے۔


ناسا کا ایک بلاگ پوسٹ میں کہنا تھا کہ ٹیلی اسکوپ کا معائنہ جاری ہے اور بظاہر ایسا دِکھ ہا ہے کہ ٹیلی اسکوپ مکمل طور فعال ہے لیکن تصادم کا ڈیٹا پر معمولی سا اثر واضح ہو رہا ہے بڑے آئینے کے ایک ٹکڑے کے ساتھ شہابی پتھر کا تصادم 23 سے 25 مئی کے درمیان ہوا۔ یہ آئینہ ٹیلی اسکوپ کے فعال رہنے کے لیے بہت ضروری ہے۔


اگرچہ میٹیورائڈ خلائی لحاظ سے چھوٹا تھا – یہ اس سے بڑا تھا جس کے خلاف دوربین کو لانچ کرنے سے پہلے ٹیسٹ کیا گیا تھا انتہائی تیز رفتاری جس سےچیزیں خلا میں منتقل ہوتی ہیں اس کا مطلب ہے کہ چھوٹی سے چھوٹی چیز بھی اگر کسی چیز سے ٹکراتی ہے تو اسے بہت زیادہ نقصان پہنچ سکتا ہے۔

ناسا نے مزید کہا کہ ٹیلی اسکوپ میں ایسے تصادمات برداشت کرنے کی صلاحیت موجود ہے، چاہے چٹان کا ٹکڑا متوقع ٹکڑے سے بڑا ہی کیوں نہ ہوتشکیلی مراحل میں محقیقن نےآئینوں کےٹکڑوں پر حقیقی و مصنوعی تصادمات کا استعمال کیاتاکہ یہ دیکھ جاسکےکہ ٹیلی اسکوپ خلا میں تیرتے ایسے ٹکڑوں کی ٹکر کو کیسے برداشت کرتی ہے۔


ناسا کے ٹیکنیکل ڈپٹی پروجیکٹ منیجر پال گِیتھنر کا کہنا تھا کہ سائنس دانوں کو یہ علم تھا کہ ویب کو خلائی ماحول کو برداشت کرنا ہوگا جس میں سورج سے آتی سخت الٹرا وائلٹ روشنی اور چارجڈ ذرّات، کہکشاں میں غیر معمولی ذرائع سے آتی خلائی شعائیں اور ہمارے نظامِ شمسی میں موجود چھوٹے شہابی پتھروں کی وقتاً فوقتاً ٹکر شامل ہے-


ہم نےٹیلی سکوپ کو کارکردگی کے مارجن کے ساتھ ڈیزائن کیا اور بنایا ہے آپٹیکل، تھرمل، الیکٹریکل، مکینیکل – اس بات کو یقینی بنانے کے لیے کہ یہ خلا میں کئی سالوں کے بعد بھی اپنے سائنسی مشن کو انجام دے سکے-

امریکی خلائی ایجنسی اب بھی نقصان کی جانچ کرنے کی کوشش کر رہی ہے، حالانکہ ان کا کہنا ہے کہ ٹیلی سکوپ کافی اچھی طرح سے کام کر رہی ہے۔


ناسا کے سائنسدانوں کا کہنا ہے کہ جیمز ویب دوربین کو گزشتہ سال کرسمس کے موقع پر لانچ کرنے کے بعد سے یہ پانچویں مرتبہ تھا کہ اسے نشانہ بنایا گیا، لیکن یہ تازہ ترین واقعہ سب سے اہم رہا ہے دوربین فی الحال اپنی صلاحیتوں کو ظاہر کرنے کے لیے کائنات کے قریب اور دور کے مشاہدات کو اکٹھا کر رہی ہے۔ ماہرین فلکیات 12 جولائی کو دوربین کی خلا کی پہلی مناسب تصاویر جاری کرنے والے ہیں۔


طویل مدتی، سائنس دان ویب کو استعمال کرنے کا ارادہ رکھتے ہیں تاکہ 13.5 بلین سال پہلے کائنات کو روشن کرنے والے پہلے ستاروں کو دیکھنے کی کوشش کریں وہ دوربین کی بڑی "آنکھ” کو دور دراز کے سیاروں کے ماحول پر بھی تربیت دیں گے تاکہ یہ دیکھا جا سکے کہ آیا وہ دنیائیں رہنے کے قابل ہو سکتی ہیں۔