fbpx

جے یو آئی کے رہنمائوں کے کراچی پریس کلب میں داخلے پر پابندی عائد

ملازمین اور ممبران کے ساتھ مار پیٹ جیسے معاملات ناقابل برداشت ہیں،فاضل جمیلی/محمد رضوان بھٹی۔
کراچی پریس کلب نے جمعیت علما اسلام کے رہنما مولانا عمرصادق کی جانب سے ممبران کے ساتھ بدتمیزی اور اسٹاف پر تشدد کے بعد جے یو آئی کے رہنمائوں کے کراچی پریس کلب میں داخلے پر پابندی عائد کردی ہے۔ تفصیلات کے مطابق جے یو آئی کے رہنما مولانا عمر صادق نے ہفتہ 24 اپریل کی شام ن لیگ کی پریس کانفرنس میں شرکت کے لئے گاڑی اور گارڈ سمیت پریس کلب میں داخل ہونے کی کوشش کی۔ ملازمین نے ان سے گاڑی باہر پارک کرنے اور گارڈ نہ لانے کی درخواست کی جس پر وہ ملازمین سے الجھ گئے اور کلب کے ایک ملازم کو گریبان سے پکڑ کر انہیں لاتوں اور گھونسوں سے تشدد کا نشانہ بنایا،اس موقع پر موجود پریس کلب کے عہدیداروں اور ممبران نے فوری مداخلت کرتے ہوئے صورتحال کوقابو کرنے کی کوشش کی مگر مولانا عمر صادق اور ان کے ساتھ دیگر رہنما مسلسل بدتمیزی کا مظاہرہ کرتے رہے۔ اور گاڑی پریس کے گیٹ پر کھڑی کردی۔ بعد ازاں مولانا عمر صادق کلب میں داخل ہونے کے لیے مسلسل منت سماجت کرتے رہے کہ ان کو ن لیگ کی پریس کانفرنس میں شرکت کے لیے کلب میں داخلے کی اجازت دی جائے تاہم ان کو داخلے کی اجازت نہیں دی گئی اور 15،20منٹ تک گیٹ پر کھڑے رہنے کے بعد وہ باہر سے واپس چلے گئے پریس کلب کی باڈی نے اس واقعہ کے بعد مولانا عمر صادق سمیت جے یو آئی کے تمام رہنمائوں کے کلب میں داخلے پر پابندی عائد کرنے کا فیصلہ کیا ہے۔ ویجی لینس کمیٹی کے سیکرٹری عاصم بھٹی موقع پر موجود تھے اور اس پورے معاملے کو ویجی لینس کمیٹی دیکھ رہی ہے ، اور کلب انتظامیہ کی جانب سے متعلقہ تھانے میں بھی درخواست جمع کروادی گئی ہے۔کراچی کے پریس کلب کے صدر فاضل جمیلی اور سیکرٹری محمد رضوان بھٹی نے جے یوآئی کے رہنما مولانا عمر صادق کی جانب سے پریس کلب کے اسٹاف سے بدتمیزی اورانہیں تشدد کا نشانہ بنانے کی شدید مذمت کی ہے۔ انہوں نے کہاکہ ملازمین اور ممبران کے ساتھ مار پیٹ جیسے معاملات ناقابل برداشت ہیں ۔

جواب چھوڑیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا.