جولائی کے دوسرے اور تیسرے ہفتے میں بارشوں کی پیشگوئی

0
156
lahore rain

سینیٹ کی قائمہ کمیٹی موسمیاتی اور ماحولیاتی تبدیلی کا اجلاس ہوا

اجلاس کی صدارت سینیٹر شیری رحمان نے کی،وزیراعظم کی کوآرڈینیٹر موسمیاتی تبدیلی رومینہ خورشید عالم بھی اجلاس میں شریک ہوئیں،ڈی جی محکمہ موسمیات اور چیئرمین این ڈی ایم اے بھی اجلاس میں شریک ہوئے، رومینہ خورشید عالم نے کہا کہ قائمہ کمیٹیاں حکومتی سپورٹ کا ایک بہترین ذریعہ ہیں،مون سون سے متعلق تمام اداروں کے ساتھ میٹنگ ہوئی ہے،تمام صوبوں میں مون سون سے متعلق اقدامات کیے جا رہے ہیں،

ہوا کے دباؤ کے باعث مون سون میں زیادہ بارشوں کا امکان ہے،چیئرمین این ڈی ایم اے
چیئرمین این ڈی ایم اے نے کمیٹی کو بریفنگ دیتے ہوئے کہا کہ جون جولائی میں درجہ حرارت پہلے کی نسبت زیادہ رہا، گلوبل وارمنگ کی وجہ سے ہر سال درجہ حرارت میں اضافہ ہورہا ہے،بحریہ عرب میں ہوا کا شدید دباؤ ہے،ہوا کے دباؤ کے باعث مون سون میں زیادہ بارشوں کا امکان ہے،مون سون کا اسپیل بھارت سے پاکستان میں داخل ہونے کا امکان ہے،جولائی کے پہلے ہفتے میں کچھ مقامات پر ہیوی شاور کے واقعات ہوئے، این ای او سی 6 سے 8 ماہ پہلے ڈیزاسٹرز کی پیشگوئی کرسکتا ہے،جولائی کے دوسرے اور تیسرے ہفتے میں بارشوں کی پیشگوئی ہے،بھارتی دریاوں سے پانی کا بہاؤ بڑھنے کا امکان ہے،جولائی اگست میں چاروں صوبوں میں بارشوں کا امکان ہے،جولائی کے دوسرے ہفتے اور اگست کے تیسرے ہفتے میں پنجاب میں بارش کا امکان ہے،جولائی کے دوسرے ہفتے اور چوتھے ہفتے میں سندھ میں بارش کا امکان ہے،محکمہ موسمیات کے آلات پرانے ہوچکے ہیں، سینیٹر قرت العین مری نے کہا کہ محکمہ موسمیات کی ویب سائٹ دس دس دن اپ ڈیٹ نہیں ہوتی، ڈی جی محکمہ موسمیات نے کہا کہ ہماری ویب سائٹ روزانہ کی بنیاد پر اپ ڈیٹ ہوتی ہے،شیری رحمان نے کہا کہ گرانٹس نہ ہونے کی وجہ سے آلات اپ ڈیٹ نہیں ہیں، محکمہ موسمیات کے آلات اپ ڈیٹ کرنے کیلئے بھاری فنڈز چاہیے تھے،2022 کے سیلاب کے بعد تمام فنڈز سیلاب متاثرہ علاقوں کے لئےمختص کرلیے ،

مون سون میں سیلاب کا ممکنہ خدشہ،وزارت موسمیاتی تبدیلی نے صوبوں سے ریلیف میٹیریل کی لسٹ مانگ لی،رومینہ خورشید عالم نےکہا کہ صوبائی ڈیزاسٹر منیجمنٹ اتھارٹیز کو سیلاب کی صورت میں کن اشیاء کی ضرورت ہوگی، صوبائی حکومتوں، پی ڈی ایم ایز سے ضروری اشیاء کی لسٹ مانگی ہے، صوبائی حکومتوں اور اتھارٹیز کو الرٹ رہنے کی ہدایت کی گئی ہے، چیئرمین این ڈی ایم اے نے کہا کہ دریاوں میں پانی کے بہاو بڑھنے کا اندازہ لگایا جارہا ہے،2022 کے سیلاب کو مدنظر رکھ کر دریاوں کے پھیلاو کا تخمینہ لگایا گیا ہے،دریاوں کے ممکنہ پھیلاو کا ڈیٹا صوبائی حکومتوں کیساتھ شیئر کردیا گیا، کونسی این جی او کو کیا سامان تقسیم کرنا ہے، طے کرلیا گیا ہے،

این ڈی ایم اے نے نیشنل انفراسٹرکچر کی آڈٹ کی تجویز دے دی،این ڈی ایم اے نے صوبائی حکومتوں کو مراسلہ لکھ دیا،چیئرمین این ڈی ایم اے نے سینیٹ کی قائمہ کمیٹی برائے موسمیاتی تبدیلی کو بریفنگ دی اور کہا کہ رہائشی عمارتوں ، کمرشل عمارتوں کا آڈٹ کروایا جائے، این ڈی ایم اے نے نیشنل ہائی ویز اور پلوں کے آڈٹ کروانے کی تجویز دی ہے،یہ پتہ لگانا ضروری ہے کہ گزشتہ سیلاب سے انفراسٹرکچر کو کیا نقصان پہنچا،

مارگلہ ہلز میں 22 آگ لگنے کے واقعات،22 جولائی سے شجرکاری مہم شروع کرینگے،چیئرمین سی ڈی اے
محمد علی رندھاوا چیئرمین سی ڈی اے نے کمیٹی کو بریفنگ دیتے ہوئے کہا کہ مارگلہ ہلز میں 22 آگ لگنے کے واقعات ہیٹ ویو کے دوران ہوئے،کچھ چھوٹی اور کچھ بڑے پیمانے پر آگ تھی،ہمیں مارگلہ ہلز کا تحفظ کرنا ہے، ہم مارگلہ ہلز کے لیے ماہرین کو لا رہے ہیں،ہم نے 11 کے قریب ایف آئی آر بھی کروائیں،شیری رحمان نے کہا کہ آگ لگ کیوں رہی ہے وجہ بتائیں ممبران کو بتائیں، چیئرمین سی ڈی اے نے کہا کہ آگ لگنے کی وجوہات کچھ نیچرل تھی اور کچھ جان بوجھ کر لگائی گئی،ہم تفصیلی انکوائری کی طرف جا رہے ہیں،تین بندے گرفتار کیے ہیں،
وزارت موسمیاتی تبدیلی سے بھی بات چیت ہے معاملے پر،این ڈی ایم اے سے بھی ماہرین لے رہے ہیں،مارگلہ ہلز پر شجرکاری کی ضرورت ہے اور یہ ہماری اولین ترجیح ہے،پھل دار درخت اور سایہ دار درخت لگے گا،سفیدہ اور میلبری ہم نہیں لگا رہے، شیری رحمان نے کہا کہ پاکستان میں ایک بڑا سب سے پراجیکٹ ہے اور وہ ہے مینگرروز،کاربن ایک الگ سبجیکٹ ہے،چیئرمین سی ڈی اے نے کہا کہ جکرانڈہ، شیشم، نیم کے درخت لگا رہے ہیں،اور بھی متعدد درخت ہیں جلد ہی تمام تفصیلات فراہم کریں گے،ہم اس بار صرف مارگلہ ہلز پر شجرکاری کریں گے،22 جولائی سے شجرکاری مہم مارگلہ ہلز پر شروع کریں گے،

ممبر کمیٹی ڈاکٹر زرقا نے کہا کہ وزارت موسمیاتی تبدیلی اور محکمہ جنگلات میں کتنے لوگ ہیں جو درختوں کے بارے میں جانتے ہیں، میں نے اپنی جیب سے ڈیڑھ لاکھ درخت مری ہلز میں لگوائے،شیری رحمان نے کہا کہ ہمیں کمیٹی اجلاسوں کے لیے 31 جولائی سے پہلے بکنگ کروانا ہوگی،چیئرپرسن اسلام آباد وائلڈ لائف مینجمنٹ بورڈ رائنا سعید نے کہا کہ ایک ایکو لوجیکل پلان کی ضرورت ہے ہمیں، رائنا سعید نے کمیٹی تشکیل دینے کی سفارش کی،

موسمیاتی شعبے میں سرمایہ کاری سے ماحولیات کے تحفظ میں مدد ملے گی، صدر مملکت

مارگلہ ہلز میں آتشزدگی،سینیٹ قائمہ کمیٹی برائے موسمیاتی تبدیلی کانوٹس

موسمیاتی تبدیلی،پرواز میں ہچکولے،رخ موڈ دیا گیا، 30 مسافر زخمی

سپریم کورٹ، موسمیاتی تبدیلی کیلئے اٹھائے گئے اقدامات کی تفصیلات طلب

سابق سینیٹر جمال خان لغاری کی رومینہ خورشید عالم سے ملاقات

ہم ماحولیاتی تحفظ کے لیے اپنے عزم پر قائم ہیں،رومینہ خورشید عالم

امن کی فاختہ میڈیا ، چھوٹی سی خبر کسی کی زندگی تباہ بھی کر سکتی ، بچا بھی سکتی ، رومینہ خورشید عالم

موسمیاتی ایکشن میں صنفی شمولیت کیلیے پاکستان کا عزم غیر متزلزل ہے۔رومینہ خورشید عالم

موسمیاتی تبدیلی پردنیا سے امداد نہیں تجارت چاہیے،رومینہ خورشید عالم

گرمی کی لہر،مون سون کیوجہ سے سیلاب کے خطرات،عوامی آگاہی مہم شروع کرنیکا حکم

Leave a reply