fbpx

کم عمر بچوں کے انصاف کے لیئے قانون سازی کے اقدامات ایکٹ-2018

نو عمر بچوں کے انصاف کے لئے قانون سازی کے اقدامات کے حوالے سے ڈی آئی جی ساؤتھ زون جناب جاوید اکبر ریاض کی زیر صدارت ڈی آئی جی ساؤتھ آفس میں میٹنگ کا انعقاد کیا گیا۔
ایس ایس پی سٹی سرفراز نواز، ایس ایس پی کیماڑی فدا حسین جانوری، ایس ایس پی ساؤتھ انویسٹیگیشن-I عمران مرزا، ایس ایس پی سٹی انویسٹیگیشن-II مختیار خاصخیلی، ایس ایس پی کیماڑی انویسٹیگیشن-III حصام بن اقبال، CEO LAS ثانیہ زاہد، AD LAS ملیحہ ضیاء، RD LAS جوزیہ زمان، Project coordinator LAS شمائلہ شاہانہ، Senior Program Officer LAS ارحم سرور،ریڈر ٹو ڈی آئی جی ساؤتھ، برانچ انچارجز پی سی اے، لیگل اور ایچ آر سی ساؤتھ آفس نے شرکت کی۔میٹنگ میں اب تک کم عمر بچوں کی منشیات کی عادت اور ان میں بڑھتی ہوئی کرائم کی شرح پر غور کیا گیا۔ لیگل ایڈ سوسائٹی اور سندھ پولیس نے جویوینائل جسٹس سسٹم ایکٹ-2018 کے نفاذ اور پولیس کے کردار کے بارے میں ایک طریقہ کار تیار کیا ہے۔جے جے ایس ایکٹ 2018 نے محکمہ پولیس سمیت قانون سازی کے نظام میں مخصوص اداروں کے اختیارات اور ذمہ داریوں میں اضافہ کیا ہے۔ قانون سے متصادم بچوں کی حفاظت کے سلسلے میں کم عمر بچے جو منشیات کے استعمال کے عادی ہیں ، انھیں ایریا مجسٹریٹ کی مشاورت سے بحالی کیلئے 14 دنوں کے لئے بھیجنا چاہئے اور (جے جے ایس)کی کمیٹی اس کے مطابق مزید قانونی کارروائی کا فیصلہ کرے گی۔ کمیٹی اس معاملے کے حقائق کی تصدیق کرے گی۔ اور رپورٹ متعلقہ مجسٹریٹ کو ارسال کرے گی۔ڈی آئی جی پی ساؤتھ زون نے ایل اے ایس) کے وفد کو بھی پیش کش کی کہ جب تک ایل اے ایس سے مناسب انتظامات کا اعلان نہ کیا جائے تب تک بحالی مرکز کے طور پر خواتین چائلڈ پروٹیکشن سیل کو استعمال کریں۔

جواب چھوڑیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا.