کم عمری کی شادی رجسٹرڈ کرنے والے نکاح خواں کیخلاف مقدمہ درج اور لائسنس معطل کیا جائے، ہائی کورٹ

اسلام آباد ہائیکورٹ کے جسٹس محسن اختر کیانی نے کم عمری شادی کیس کا فیصلہ سنا دیا اور کہا ہے کہ کم عمری کی شادی رجسٹرڈ کرنیوالے نکاح خواں کیخلاف پولیس کارروائی کرے.

باغی ٹی وی کی رپورٹ کے مطابق اپنے فیصلہ میں فاضل عدالت نے قرار دیا کہ کم عمری کی شادی رجسٹرڈ کرنیوالےنکاح خواں کالائسنس معطل کیا جائے. اسلام آباد ہائیکورٹ نے فیصلے کی کاپی آئی جی ، چیف کمشنر اسلام آباد کو بھی بھجوانے کا حکم دیا اور کہا ہے کہ آئی جی اورچیف کمشنر اسلام آباد فیصلے پرعمل کروائیں.

اسلام آباد ہائی کورٹ نے قرار دیا ہے کہ کم عمری کی شادی رجسٹرڈکرنا قانوناًجرم ہے. لڑکی اغوا کےمقدمے میں شادی کاعنصر سامنےآئے تو پولیس لڑکی کی عمرکاتعین کرے. اسلام آباد میں 3 نکاح خواں سب کوملے ہوئے ہیں. مختلف مقدمات میں بھی ان 3 نکاح خوانوں کا ہی نام آتا ہے. ایک نکاح خواں کےخلاف 28 پرچےہیں.

واضح‌ رہے کہ اسلام آباد ہائی کورٹ کے جسٹس محسن اختر کیانی نے آج کم عمری شادی کیس کا فیصلہ سنا دیا ہے.

جواب چھوڑیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا.