fbpx

کپڑوں کی ڈیزائننگ میرا کاروبار ہے اور کوئی بھی اسے خریدنے کے لیے مجبور نہیں فیشن ڈیزائنر علی ذیشان

حال ہی میں ڈیزائنر علی ذیشان کی جانب سے نمائش نہ لگاؤ، جہیز خوری بند کرو‘ کے عنوان سے ایک فیشن شوٹ کو جہیز کی لعنت کے خلاف عوام میں شعور جگانے کا ذریعہ بنایا گیا تھا لیکن سوشل میڈیا صارفین نے اپنی روایت برقرار رکھتے ہوئے انہیں شدید تنقید کا نشانہ بنا ڈالا۔

باغی ٹی وی : تاہم اب ایک ویب سائٹ کو دیئے گئے انٹرویو کے دوران فیشن ڈیزائنر علی ذیشان کا کہنا تھا کہ بہت سے لوگوں نے مجھ پر تنقید کی کہ آپ خود بہت مہنگے کپڑے بناتے ہیں تو پھر آپ کیوں اس بارے میں بات کر رہے ہیں؟

ڈیزائنر نے وضاحت دیتے ہوئے بتایا کہ یہ دونوں چیزیں بہت مختلف ہیں کپڑوں کی ڈیزائننگ میرا کاروبار ہے اور کوئی بھی اسے خریدنے کے لیے مجبور نہیں اگر آپ میرے کپڑے خرید سکتے ہیں تو براہ کرم میرے مہمان بنیں، اگر نہیں تو خود کو دباؤ میں نہ ڈالیں۔

فیشن ڈیزائنر کا کہنا تھا کہ اگر کوئی مجھ سے پوچھے کہ میرے کپڑے خریدیں یا بیٹی کو تعلیم دیں تو میں کہوں گا کہ بیٹی کو تعلیم دلوائیں کپڑے میں بیچ لوں گا۔

علی ذیشان کے مطابق مجھے اس میں کسی کو صفائی دینے کی ضرورت نہیں ہے کیونکہ میں نے صرف ایک بات کی آپ کو پسند آئے تو آپ اس پر عمل کریں اور جہیز کے لیے دونوں فریقین کو نہ کہیں آپ ایک خود مختار مرد بنیں کچھ لوگ آپ کو اپنی اتنی قیمتی اور پیاری چیز بیٹی دے رہے تو لکڑی کے فرش کا کیا ہے خود بنا لیں آپ،گاڑی کی کونسی بات ہے خود خریدلیں آپ۔

ڈیزائنر کا مزید کہنا تھا کہ ایک اچھی لڑکی سے شادی کریں کیونکہ جہیز میں دیا گیا ٹی وی تو خراب ہو جائے گا لیکن جو اچھی تعلیم ہے وہ اگلی نسلوں تک جائے گی۔

پاکستانی ڈیزائنر کے درمیان ڈیزائنز چوری کرنے کا تنازع سوشل میڈیا پر زیر بحث

’نمائش‘ لگانا بند کرو ،برائیڈل کوچیوراور جہیز پر پابندی لگاؤ

برائیڈل کیٹور ویک 2021: ڈیزائنر علی ذیشان کی حاملہ بیوی کے ساتھ ریمپ واک

جواب چھوڑیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا.