کراچی میں لاک ڈاؤن کی خلاف ورزی پر ہوئی گرفتاریاں

کراچی میں لاک ڈاؤن کی خلاف ورزی پر ہوئی گرفتاریاں

باغی ٹی وی :لاک ڈاؤن پر عمل درآمد کرتے ہوئے کراچی میں تالہ بندی کی خلاف ورزی کرتے ہوئے دکانیں کھولنے والے سینکڑوں تاجروں کو پولیس نے گرفتار کر لیا ہے۔
پولیس حکام کا کہنا ہے کہ جمعہ کو12 سے 3 بجے تک سخت ترین لاک ڈاؤن کیا جاتا ہے تاہم کچھ تاجرحضرات نے اس کی خلاف ورزی کرتے ہوئے دکانیں کھولنے کی کوشش جن کو بند کروا دیا گیا ہے۔

میڈیا رپورٹس کے مطابا شہر میں مساجد اورامام بارگاہوں کے باہر پولیس اہلکار تعینات ہیں ہیں اور بڑے اجتماعات کی اجازت کسی صورت نہیں دی جائے گی۔کراچی میں بارہ بجتے ہی سخت لاک ڈاؤن شروع ہوگیا ہے جو تین بجے تک جاری رہے گا۔ شہر کی تمام بڑی مساجد کی طرف جانے والی سڑکیں اور گلیاں بھی بند ہیں۔

رمضان میں نماز تراویح کے اجتماعات پر بھی پابندی ہو گی۔ مساجد میں منتظمین ہی نمازتروایح اداکرسکیں گے۔پولیس کا کہنا ہے کہ لاک ڈاون پر سختی سے عمل درآمد کیا رہا ہے اور دن بارہ بجے سے تین بجے تک ہر طرح کی ٹریفک کو شاہروں پر چلنے کی اجازت نہیں اور تو اشیائے خورونوش کی دکانیں بھی بند ہیں.

ادھر وزیراعظم عمران خان کی زیر صدارت اجلاس میں صوبائی وزرائے اعلیٰ ویڈیو لنک کے ذریعے اجلاس میں شرکت کریں گے۔ قومی رابطہ کمیٹی کے اجلاس میں کورونا وائرس کے باعث پیدا صورتحال کا جائزہ لیا جائے گا، نیشنل کمانڈ اینڈ کنٹرول سینٹر کے اعداد و شمار پر اجلاس کو بریفنگ دی جائے گی،

قومی رابطہ کمیٹی کے گزشتہ اجلاس کے فیصلوں پر عملدرآمد کا جائزہ لیا جائے گا،اجلاس میں لاک ڈاؤن اور رمضان میں عبادات کے حوالہ سے بھی بات چیت ہو گی اور اہم فیصلے متوقع ہیں

رمضان میں نماز تراویح کی ادائیگی کے لئے صدر مملکت نے 20 نکاتی اعلامیہ جاری کیا جس پر سندھ حکومت نے اعتراض عائد کرتے ہوئے عوام سے اپیل کی کہ وہ گھروں میں نماز تراویح ادا کریں، بلاول زرداری نے بھی عوام سے یہی اپیل کی، پاکستان کے ڈاکٹروں نے بھی حکومت سے اس فیصلے پر نظر ثانی کا مطالبہ کیا.

جواب چھوڑیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا.