fbpx

کاروبار بند کریں گے تو معیشت کیسے چلی گی، ،صدر آل پاکستان ریسٹورنٹ جوائنٹ کمیٹی

اسلام آباد ،صدر آل پاکستان ریسٹورنٹ جوائنٹ کمیٹی فاروق چودھری نے کہا ہے کہ وفاقی حکومت کے فیصلے سے ریسٹورانٹس بند ہو رہے ہیں ،

فاروق چودھری کا کہنا تھا کہ حکومت کے فیصلے سے مایوسی ہوئی حکومتی فیصلوں سے مزید مہنگائی بڑھ جائیگی ، حکومتی فیصلے سے کروڑوں ملازمین بے روزگار ہو جائیں گے جب کاروبار بند کریں گے تو معیشت کیسے چلی گی، حکومت ہوش کے ناخن لے اورفیصلے پر نظر ثانی کرے ،حکومت مشکل فیصلے نہ کرے جس کی وجہ سے ہم سڑکوں پر آنے پر مجبور ہیں ، پہلے کرونا نے تین سال ہمارے کاروبار کو بند رکھا، اب ایسی حکومت آئی جو نہیں چاہتی کہ عوام سکون کے ساتھ زندگی گزارے، ہم چاہتے ہیں کہ ریسٹورینٹ والوں کو موقع دیا جائے، لاکھوں لوگوں کی ملازمت کا مسئلہ ہے،

قبل ازیں صدر آل پاکستان انجمن تاجران اجمل بلوچ حکومت کی توانائی پالیسی کے خلاف میدان میں آ گئے کہا دکانیں رات 10 اور ریسٹورنٹ 11 بجے سے پہلے بند نہیں کریں گے،اجمل بلوچ کا کہنا تھا کہ معاشی پہیہ روک کر توانائی بچانا عقل مندی نہیں،حکومتی اور سرکاری اداروں میں اے سی ہیٹرز بند کیے جائیں،حکمران اور بیوروکریٹ پروٹوکول ختم اور مفت پیٹرول، بجلی، گیس لینا بند کریں،

واضح رہے کہ حکومت نے توانائی پالیسی نافذ کی ہے، کابینہ اجلاس کے بعد وفاقی وزیر دفاع خواجہ آصف کا کہنا تھا کہ ہمیں اپنے طرز زندگی بدلنے کی ضرورت ہے آج کابینہ اجلاس میں کوئی لائٹ نہیں جل رہی تھی، ہماری عادات و اطوار باقی دنیا سے مختلف ہے،شادی ہالز رات 10بجے بند ہوں گے، مارکیٹیں رات ساڑھے 8 بجے بند ہوں گی،

بیانیہ پٹ گیا، عمران خان کا پول کھلنے والا ہے ،آئی ایم ایف ڈیل، انجام کیا ہو گا؟

عمران خان معافی مانگنے جج زیبا چودھری کی عدالت پہنچ گئے

عمران خان، فواد چودھری اور اسد عمر کے خلاف توہین الیکشن کمیشن کیس ہدایات کے ساتھ نمٹا دیا گیا