fbpx

مسلسل کرفیو سے کشمیریوں کی معیشت تباہ، 10 ہزار افراد ملازمتوں سے فارغ کر دیے گئے

مقبوضہ کشمیرمیں بھارتی فوج کے لاک ڈاؤن سے وادی کشمیر کی معیشت بری طرح متاثر ہوئی ہے،

باغی ٹی وی کی رپورٹ کے مطابق 3 ہفتوں سےجاری کرفیو نےمقبوضہ وادی کےسیاحتی مقامات کو بھی سنسنان کردیا ہے، مقبوضہ وادی کے 5 ہزار سے زائد ہوٹل بند ہیں اور 10ہزار سے لوگوں کو ملازمت سے فارغ کر دیا گیا ہے، بھارتی فوج کی دہشت گردی کے نتیجہ میں کشمیریوں کے باغات بھی بڑے پیمانے پر تباہ کئے گئے ہیں،

مقبوضہ کشمیر میں اس وقت لاکھوں کشمیری محاصرے میں ہیں، ہر طرف مکمل لاک ڈاﺅن ہے اور مقبوضہ کشمیر ایک فوجی چھاﺅنی کامنظر پیش کر رہا ہے، بھارتی فوج نے کشمیر کی حریت اور بھارت نواز سیاست دانوں سمیت دس ہزار سے زائد کشمیریوں کو گرفتار یا نظر بند کیا ہے، مقبوضہ کشمیر کی جیلوں اور پولیس اسٹیشنوں میں قیدیوں کی گنجائش ختم ہو چکی ہے، پوری وادی میں 5اگست سے تمام انٹرنیٹ اور مواصلاتی رابطے بند ہیں، مقامی اخبارات اپنے آن لائن ایڈیشن کی تازہ کاری نہیں کرسکے جبکہ ان میں سے بیشتر بھی پابندیوں کی وجہ سے پرنٹ نہیں ہوسکے،

بھارتی فوج نے مساجد کو بھی تالے لگا دیئے ہیں، اکثر مساجد میں نماز ادا کرنے کی اجازت نہیں ہے، مقبوضہ وادی میں زندگی بچانے والی ادویات کی شدید قلت کا سامنا ہے، لوگوں کوجان بچانے والی ادویات خریدنے کے لیے دہلی تک کا سفر کرنا پڑ رہا ہے، ڈاکٹروں نے اس بات کی تصدیق کی ہے کہ وادی کشمیر میں بدستور بندش اور مواصلات کی بندش سے سینکڑوں مریض متاثر ہوئے ہیں، مقبوضہ کشمیر میں اشیائے خوردونوش کی بھی قلت ہو گئی ہے جبکہ بچوں کے لیے خوراک کی بھی کمی ہو گئی ہے،