ویتنام میں ارب پتی خاتون کو فراڈ کیس میں سزائے موت سنادی گئی

انسدادِ بدعنوانی مہم کے دوران ملک کے بہت سے سیاست دانوں اور کاروباری افراد کے خلاف بھی کارروائی کی گئی ہے
0
85

ویتنام کی ایک ارب پتی خاتون کو 12 ارب ڈالر 50 کروڑ ڈالر کے فراڈ کیس میں سزائے موت سنادی گئی ہے۔

باغی ٹی وی: ایسوسی ایٹیڈ پریس نے سرکاری میڈیا کے حوالے سے بتایا کہ ریئل اسٹیٹ سیکٹر کی ٹائیکون ٹروؤنگ می لین نے مجموعی طور پر جتنی رقم کا فراڈ کیا جو ویتنام میں اپنی نوعیت کا سب سے بڑا کیس ہے67 سالہ ٹروؤنگ می لین کو 2022 میں گرفتار کیا گیا تھا وہ رئیل اسٹیٹ کی معروف کمپنی وان تِھنہ پھیٹ کی چیئر پرسن ہیں 2012 اور 2022 کی درمیانی مدت میں ٹروؤنگ می لین نے گھوسٹ کمپنیوں کو فنڈز جاری کرنے اور سرکاری حکام کو رشوت دینے کے لیے سائیگون جوائنٹ اسٹاک کمرشل بینک کو غیر قانونی طور پر کنٹرول کیا۔

2022 سے ملک میں چلائی جانے والی انسدادِ بدعنوانی مہم کے دوران ملک کے بہت سے سیاست دانوں اور کاروباری افراد کے خلاف بھی کارروائی کی گئی ہے، متعدد مالیاتی اسکینڈلز ایک ایسے وقت سامنے آئے ہیں جب ویتنام کی حکومت سرمایہ کاروں کے لیے چین کے متبادل کے طور پر کام کرنے کی تیاری کر رہی ہے 2023 میں کم و بیش 1300 پراپرٹی فرمز نےویتنام کی ریئل اسٹیٹ مارکیٹ سے سرمایہ نکال لیا۔

Leave a reply