fbpx

بلاول بھٹو کس منہ سے قومی اسمبلی میں تقریر کررہے تھے؟ خرم شیر زمان

پی ٹی آئی کے رہنماء خرم شیر زمان نے کہا ہے کہ بلاول بھٹو زرداری کس منہ سے قومی اسمبلی میں تقریر کر رہے تھے؟

خرم شیر زمان نے پریس کانفرنس کرتے ہوئے کہا کہ 14 سالوں میں سندھ کے ہزاروں بچے انتقال کر گئے ہیں، ہزاروں لوگ سندھ کے زہریلی شراب پی کر مر رہے ہیں، بلاول زرداری کس منہ سے قومی اسمبلی میں تقریر کر رہے تھے؟

انہوں نے کہا کہ ہر عزاب سندھ میں سب سے پہلے نازل ہو رہا ہے، زہریلی شراب پینے سے 10 لوگ ٹنڈو جام میں انتقال کر گئے ہیں، ان شراب خانوں کی نگرانی کون کر رہا ہے؟ انہیں اجازت کس نے دی ہے؟ ایکسائز کے وزیر شراب کی کوالٹی چیک کرتے ہیں یا نہیں؟ وزیر ایکسائز اور سیکرٹری کیخلاف تحقیقات کا مطالبہ کرتے ہیں۔

ان کا کہنا تھا کہ اسلامی ریپبلک کی زمین پر شراب کا گھناؤنا دھندہ چلایا جا رہا ہے، ہمارا مطالبہ ہے یہ کس قانون کے تحت شراب خانے چلائے جا رہے ہیں بتایا جائے؟ اس معاملے پر خاموش رہنا افسوسناک ہوگا۔

خرم شیر زمان نے کہا کہ وزیر اعلیٰ نے کل شرمناک بیان دیا، وزیر اعلیٰ نے کہا کہ سندھ کے لوگ مر تو نہیں رہے، 10 لوگوں کی اموات وزیر اعلیٰ کے منہ پر تماچہ ہے، ہمارا وزیر ایکسائز کو فوری معطل کرنے کا مطالبہ ہے، شراب خانوں سے پیپلز پارٹی کے وزیر پیسہ اکھٹا کرتے ہیں، یہ پیسے کی وجہ سے شراب خانوں پر کارروائی نہیں کرتے۔

پی ٹی آئی کے رہنماء خرم شیر زمان کا مزید کہنا تھا کہ شاہ رخ جتوئی ایک قیدی ہے، لیکن اس قیدی کو سسٹم کے ذریعے وسائل پہنچائے گئے، سندھ میں حکومت نہیں سسٹم ہے، یہ شراب کو شہد بنانے کے ماہر ہیں، چیف جسٹس سے ہاتھ جوڑ گزارش کرتا ہوں 10 لوگوں کی اموات کا نوٹس لیں، چیف جسٹس صاحب کو اس سسٹم کو پھیلنے سے روکنا ہے۔

Facebook Notice for EU! You need to login to view and post FB Comments!