fbpx

کیا پاکستان اخلاقی طور پر کمزور ہے ؟ تحریر: احسن ننکانوی

کیا پاکستان اخلاقی طور پر کمزور ہے ؟؟-

اخلاق کسی بھی ملک کیلئے ریڑھ کی ہڈی کی حیثیت رکھتا ہے۔اخلاق دنیا کے تمام مذاہب کا مشترکہ باب ہے جس پر کسی کا اختلاف نہیں ۔ انسان کو جانوروں سے ممتاز کرنے والی اصل شئے اخلاق ہے۔اچھے اور عمدہ اوصاف و ہ کردار ہیں جس کی قوت اور درستی پر قوموں کے وجود، استحکام اور بقا کا انحصار ہوتا ہے۔

معاشرہ کے بناؤ اور بگاڑ سے قوم براہ راست متاثر ہوتی ہے۔ معاشرہ اصلاح پذیر ہو تو اس سے ایک قوی، صحت مند اور با صلاحیت قوم وجود میں آتی ہے اور اگر معاشرہ بگاڑ کا شکار ہو تو اس کا فساد قوم کو گھن کی طرح کھا جاتا ہے۔جس معاشرہ میں اخلاق ناپید ہو وہ کبھی مہذب نہیں بن سکتا، اس میں کبھی اجتماعی رواداری، مساوات،اخوت و باہمی بھائی چارہ پروان نہیں چڑھ سکتا۔

جس معاشرے میں جھوٹ اور بددیانتی عام ہوجائے وہاں کبھی امن و سکون نہیں ہوسکتا۔ دنیا میں عروج و ترقی حاصل کرنے والی قوم ہمیشہ اچھے اخلاق کی مالک ہوتی ہے جبکہ برے اخلاق کی حامل قوم زوال پذیرہوجاتی ہے۔ یہ منظر آپ اِس وقت دنیا میں اپنے شرق و غرب میں نظر دوڑا کر دیکھ سکتے ہیں کہ عروج و ترقی کہا ں ہے اور ذلت و رسوائی کہاں ہے؟-

اب آتے ہیں اپنے موضوع کی طرف کیا پاکستان اخلاقی طور پر کمزور ہے –

تو جی ہاں پاکستان اصل میں ہے ہی اخلاقی طور پر کمزور جدھر دیکھوں جھوٹ فریب دھوکہ بازی رشوت خوری جیسی لعنتوں سے یہ ملک بھرا پڑا ہے کل ایک آدمی سے ملاقات ہوئی تو حال احوال کے بعد جوب کا پوچھا تو جناب نے کہا ٹھیک چل رہی ہے اور تنخواہ کے علاوہ اوپر سے بھی پیسے آجاتے ہیں میں سوچ میں پڑ گیا شاید جناب کے لئے روپوں کی بارش ہوتی ہے وہ تو بعد میں اس نے یہ مسئلہ خود ہی حل کر دیا کہ لوگوں کے ناجائز کام کے تو روپے لیتے ہی ہیں جائز کام بھی پیسے کے بنا نہیں کرتے ہیں۔

جب اس کو یہ کام چھوڑنے کا کہا گیا تو اس نے کہا اگر میں نہیں کرو گا تو کوئی اور لے گا اس حکومت نے یقین دلایا تھا کہ ایسے کام نہیں ہوں گے باقی کام تو چھوڑیں جب پاکستان پبلک سروس کمیشن جیسے ادارے میں بھی ہیرا پھیری ہونے لگی تو اس ملک کا اللہ ہی حافظ ہے ۔
بیوروکریسی ملک کی ریڑھ کی ہڈی ہوتی ہے جب وہ ہی ایسے کام کرے گی تو بس اللہ اللہ ہم اخلاقی طور پر اتنے گرے ہوئے ہیں اگر کسی جگہ ایکسیڈنٹ ہو جائے تو ویڈیو بنانے لگ جاتے ہیں نا کہ لوگوں کی خدمت جب تک پاکستان اخلاقی طور پر ٹھیک نہیں ہو گا
معاملات ٹھیک نہیں ہو سکتے-

تحریر: احسن ننکانوی
@Ahsannankanvi