fbpx

کسانوں کے ساتھ وہ کچھ نہیں ہوگا جو پہلی حکومتوں میں ہوتا رہا ، وزیر اعظم کی یقین دہانی

کسانوں کے ساتھ وہ نہیں ہوگا جو پہلی حکومتوں میں ہوتا رہا ، وزیر اعظم کی یقین دھانی

باغی ٹی وی :وزیراعظم عمران خان سے کسانوں کی ملاقات ہوئی .وزیراعظم نے کہا کہ نصاف کرنےو الی قوم اوپر جائے گی،اللہ تعالیٰ نے پاکستان کو ہر نعمت سے نوازاہے،چینی کی انڈسٹری میں ایک مافیا بیٹھ گیا تھا جو مہنگی چینی بیچتا تھا،بدقسمتی سے ملک میں اور بھی جگہوں پر مافیاز بیٹھے ہوئے ہیں.حکمرانوں کی کرپشن ملک کو تباہ کردیتی ہے،ماضی میں کسانوں کو گنے کے پیسے نہیں مل رہے تھے،

وزیراعظم عمران خان نے کہاکہ میری جدوجہد حکمرانوں کی کرپشن کے خلاف تھی،مافیا ملک میں ہر طرح سے فائدہ اٹھا تا ہے،کاٹن کے علاوہ تمام ریکارڈ فصلیں ہوئیں حکمران کرپشن کرکے ملک کا پیسہ باہر لے جاتے ہیں، مافیا ٹیکس بھی نہیں دیتا تھا اور کسانوں کو پیسہ بھی ادا نہیں کرتا تھا،پوری دنیا میں سب سے تیزی سے آگے جانے والا ملک چین ہے،

ہم نے اب ایگری کلچر کو بھی سی پیک میں ڈال دیا ہے. لارج اسکیل انڈسٹری میں ہماری بہت اچھی گروتھ ہوئی ہے،چاہتے ہیں کہ انڈسٹری کے فائدے میں بھی اضافہ ہو،ہماری حکومت کی پوری کوشش ہے کہ کسانوں کو کسی قسم کی تکلیف نہ ہو،
وزیراعظم عمران خان نے کہا کہہ یقین دہانی کراتا ہوں کہ میری ٹیم کسانوں سے رابطے میں رہے گی،ماضی کی حکومتوں نے بجلی کے مہنگے منصوبے لگائے ،ماضی کی حکومتوں نے بجلی کے مہنگے منصوبے لگائے ،اقتدارمیں آئےتودیکھاچینی کی قیمت بڑھ رہی تھی.

وزیراعظم کا کہنا تھا کہ کسانوں کوگنےکی پوری قیمت نہیں مل رہی تھی،شوگرمافیامہنگی چینی بیچتااورکسانوں کوپوری قیمت نہیں دیتاتھا،ایف آئی اےنےشوگرمافیاکی انکوائری کی توانہیں دھمکیاں ملیں،شوگرمافیاکےخلاف بلاامتیازتحقیقات کی گئیں

وزیراعظم عمران خان کا کہنا تھا کہ بدقسمتی سےاورجگہوں پربھی شوگرمافیاجیسےلوگ بیٹھےہیں.حکمرانوں کی کرپشن ملک تباہ کردیتی ہے،جب حکمران پیسہ بناتےہیں توملک کبھی ترقی نہیں کرسکتے،ہماری حکومت میں کسانوں کوبروقت پیسےاداکیےگئے،
کسانوں سےمسلسل ملاقاتوں کاسلسلہ جاری رہےگا،زرعی شعبہ پاکستان کوترقی یافتہ ممالک میں شامل کرسکتاہے،زراعت سےمتعلق چین کی ٹیکنالوجی سےبھی فائدہ اٹھائیں گے،

اس موقع پر معاون خصوصی جمشید چیمہ نے کہا کہ شریف خاندان نےذاتی مفادکیلئےکسانوں کااستحصال کیا، ماضی میں کسانوں سےسرکاری ریٹ سےکم نرخ پرگناخریداگیا،سابق حکمرانوں نےکسانوں کااستحصال کیا. 2018میں گنےکےکاشتکاروں سے 80ارب روپےلوٹےگئے،

کسان رہنما خالد کھوکھر نے کہا کہ موجودہ حکومت کے اقدامات سے 80 سے 90ارب روپے کاشتکاروں کو ملے.زرعی اراضی می پی ایچ کی سطح کو کمر کرنے کیلئے جپسم رعایتی نرخوں پر فراہم کی جائے،73سالوں میں پہلی بار کسانوں کے مفادات کا سرکاری سطح پر تحفظ کیا گیا،

کسانوں کو کھادوں پر سبسڈی دینے کی ضرورت ہے،آئندہ سال بہترفصل کیلئےڈی اےپی کی قیمت کم کی جائے.

جواب چھوڑیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا.