fbpx

کیا مسلمانوں کا خون سستا ہو چکا ہے؟ تحریر:احسن ننکانوی

اسلامی فوبیا!
کینیڈا میں ایک پاکستانی مسلم فیملی کا قتل پوری دنیا کے لئے خاص طور پر پاکستان کہ منہ پر ایک زور دار طمانچہ ہے جسے ساری عمر سہلایا جائے تو پھر بھی درد نہ جائے ۔
‏کیا مسلمانوں کا خون سستا ہو چکا ہے؟

حدیث شریف میں آتا ہے کہ زمانہ آخرت میں پوری دنیا مسلمانوں پر چڑھ دوڑے گی ایسے جیسے کھانے والے پیالوں پر ٹوٹ پڑتے…

امت مسلمہ بدترین زوال کی زد میں ہے اور حکمران بے حسی کی زد میں
اگر کوئی ہمارے حکمرانوں کو پکارے تو آگے سے آواز آتی ہے جی ہم تو امن کا درس دیتے ہیں۔
اس سے پہلے بھی جرمنی میں مسلمانوں پر حملے ہوئے ہوئے
اس کے علاوہ بہت سارے یورپی ممالک میں مسلمانوں پر تو حملے ہوتے ہی ہیں۔
اس کے علاوہ اسلام پر بھی حملے ہوتے ہیں۔
ہمارے پیارے آقا آخری نبی حضرت محمد ﷺ کی ذات پر حملے کئے گئے اور مسلمان چپ سادھے بیٹھے رہے۔
‏‎سب سے بڑا حق تو رسول اللّٰہ ﷺ کا ہے
جب حکمران نبی کریم ﷺ کی سرکاری سطح پر گستاخی ہونے کے باوجود فرانس سے سخت لہجے میں بات کرنے سے خوفزدہ ہیں کہ روزی روٹی کے لالے پڑ سکتے ہیں تو عوام کی جان و مال اور عزت و آبرو پر خاک پہرہ دیں گے۔
کیونکہ اسلام تو اب امن کا درس دیتا ہے۔
‏ہم مسلمانوں کا خون اتنا سستا ہے کہ کوئی بھی پوچھتا نہیں اگر یہی کسی چائنہ کے خاندان یا اسرائیلیوں پر حملہ ہوتا وہ ملک اینٹ سے اینٹ بجا دیتے یہاں بس مزمت ہے ۔
‏اپنے ملک میں نوکریاں روزگار ہوتا تو کینیڈا میں یہ پاکستانی آج اس طرح بے دردی سے قتل نا ہوتے۔سارے قابل ترین لوگ ملک چھوڑ کر چلے جاتے کیونکہ اپنے ملک میں انکو کوئی سہولت میسر نہیں ہوتی
‏کیا زندگی ہے پاکستانیوں کی
اپنے ملک میں سہولت میرٹ نام کی چیز نہیں دھکے کھاتے اپنا ملک چھوڑ کر بیرون ملک جاتے نوکریاں کرتے محنت کرتے گھر بار وطن سب چھوڑتے پاکستان پیسے بھیجتے اور بدلے میں پردیس میں بھی انکو مار دیا جاتا۔
اور یہاں پر مجھے علی زریون عہد حاضر کے ایک شاعر کا شعر یاد آگیا۔

میرے وطن تیرے چہرے کو نوچنے والے
یہ کون ہیں یہ گھرانے کہاں سے آگئے ہیں ۔۔

مطلب ہمارے ملک کا یہ حال ہو گیا ہے نہ ہم اسلام کا دفاع کر سکتے ہیں نہ ہم مسلمانوں کا دفاع کر سکتے ہیں
اگر ہمارے ملک میں نوکریاں روزگار ہوتا تو کینیڈا میں یہ پاکستانی آج نہ مرتے
‏‎اللہ اس ملک کا حامی و ناصر ہو
تحریر: احسن ننکانوی
ahsannankanvi@gmail.com

جواب چھوڑیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا.