کچھ شہروں میں ناقص نظام صحت کا مسئلہ اور کورونا کا دباوَ موجود،احتیاط کریں، ڈاکٹر فیصل سلطان

باغی ٹی وی کی رپورٹ کے مطابق وزیراعظم عمران خان کے معاون خصوصی برائے صحت ڈاکٹر فیصل سلطان نے کہا ہے کہ کورونا کیسز میں اضافہ ہوا ہے ،کورونا سے بچاوَ کے لیے احتیاط لازمی ہے،

ڈاکٹر فیصل سلطان کا کہنا تھا کہ ہم سب کو انفرادی طور پر ذمہ داری کا مظاہرہ کرنا ہوگا، گزشتہ روز این سی او سی اجلاس میں کورونا سے بچاوَ کےاقدامات پر بات ہوئی، پاکستان میں دیگر ممالک کے نسبت کورونا کیسز کم ہیں،این سی او سی غیر جانب دار ادارہ ہے جو قومی مفاد میں بات کرتی ہے، بہترین قرنطینہ سینٹر گھروں میں ہی ممکن ہے

ڈاکٹر فیصل سلطان کا مزید کہنا تھا کہ کچھ شہروں میں ناقص نظام صحت کا مسئلہ اور کورونا کا دباوَ موجود ہے،این سی او سی میں مارکیٹوں کے اوقات کار اور دیگر معاملات پر بھی بات کی گئی ،آئندہ ہفتے تعلیمی اداروں اور دیگر معاملات سے متعلق فیصلہ ہوگا،

واضح رہے کہ گزشتہ روز وزیراعظم عمران خان کے زیر صدارت قومی رابطہ کمیٹی برائے کرونا کا اجلاس ہوا جس میں وبائی مرض کی صورتحال کا جائزہ لیا گیا۔ اجلاس کے بعد قوم سے اپنے اہم خطاب میں وزیراعظم کا کہنا تھا کہ حکومت نے فیصلہ کیا ہے کہ کورونا وائرس کے پیش نظر 300 سے زیادہ لوگ اکھٹے نہ ہوں۔ اس لئے ہم نے ہفتے کو ہونے والا جلسہ ختم کر دیا ہے، باقی جماعتیں بھی اپنے جلسے ختم کر دیں۔

پاکستان میں مثبت کیسز کی شرح میں 3 فیصد سے زائد اضافہ ہوا، اکتوبر کے پہلے ہفتے میں مثبت کیسز کی شرح 1.6 فیصد تھی، نومبر میں مثبت کیسز کی شرح 5 فیصد تک پہنچ گئی

پاکستان میں کرونا کی دوسری لہر جاری ہے، گزشتہ 24 گھنٹوں میں کرونا سے 33 اموات ہوئی ہیں جبکہ 2050 نئے مریض سامنے آئے ہیں

این سی او سی کے مطابق پاکستان میں کرونا مریضوں کی مجموعی تعداد 3 لاکھ 61 ہزار 82 ہوگئی ہے جبکہ کرونا سے اموات کی مجموعی تعداد 7ہزار193 تک پہنچ چکی ہے۔پاکستان میں کورونا وائرس کے3 لاکھ 24 ہزار 834 مریض صحتیاب ہوچکے ہیں اور2 ہزار955 زیر علاج ہیں۔

کرونا پھیلاؤ روکنے کے لئے این سی او سی کا عوام سے مدد لینے کا فیصلہ

کرونا وائرس ، معاون خصوصی برائے صحت نے ہسپتال سربراہان کو دیں اہم ہدایات

کرونا وائرس لاہور میں پھیلنے کا خدشہ، انتظامیہ نے بڑا قدم اٹھا لیا

معاون خصوصی برائے صحت ڈاکٹر فیصل سلطان نے کہا کہ پاکستان میں کورونا وائرس کی دوسری لہر بتدریج شروع ہو چکی ہے۔ دوسری لہر سے نمٹنے کے لیے ایس اوپیز پر سختی سےعمل کرنا ہو گا۔ احتیاطی تدابیر پرعمل پیرا ہو کر ہم کورونا کی دوسری لہرسے نمٹ سکتے ہیں

جواب چھوڑیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا.