fbpx

لوگ پیسے پولیس کو اور گالیاں ہمیں دیتے ہیں، پیپلز پارٹی نے ترجمان سندھ حکومت کے بیان کی وضاحت کر دی

لوگ پیسے پولیس کو اور گالیاں ہمیں دیتے ہیں، ہم نے پولیس کو رشوت لینے کا نہیں کہا، پیپلز پارٹی نے ترجمان سندھ حکومت مرتضی وہاب کی جانب سے دکانداروں کو رشوت خوری کا ذمہ دار ٹھہرانے کے بیان کی وضاحت کر دی ۔ تفصیلات کے مطابق کراچی چیمبر آف کامرس میں خطاب کرتے ہوئے صوبائی وزیرسعید غنی نے کہا کہ اگر کراچی میں کاروباری سرگرمیاں کم ہوں گی تو سندھ حکومت کو بھی نقصان ہوگا۔
انہوں نے گزشتہ روز ترجمان سندھ حکومت مرتضی وہاب کی جانب سے دکانداروں کو رشوت خوری کا ذمہ دار ٹھہرانے کے بیان کی وضاحت کرتے ہوئے کہا کہ اگر کاروبار 6 بجے بند ہوگا تو پولیس کو بھی پیسے لینے کا موقع نہیں ملے گا۔ انہوں نے کہا کہ لوگ پیسے پولیس کو اور گالیاں ہم کو دیتے ہیں۔
اکستان پیپلزپارٹی سے تعلق رکھنے والے صوبائی وزیر تعلیم نے کہا کہ اگر سب لوگ ویکسین کروالیں تو ساری چیزیں کھل جائیں گی۔
انہوں نے مشورہ دیا کہ دکاندار لکھ کر لگائیں کہ جو ویکسین نہیں لگوائے گا اسے دکان میں داخلے کی اجازت نہیں ہو گی۔سعید غنی نے مزید کہا کہ کووڈ کی پہلی لہر میں ملک میں کسی کو معلوم نہیں تھا کہ کیا کرنا ہے؟ انہوں نے کہا کہ 26 فروری کو کورونا کیسز آئے اور 27 کو ٹاسک فورس بنائی گئی۔پی پی سے تعلق رکھنے والے صوبائی وزیر نے کہا کہ مئی 2020 میں کووڈ سے 385 اموات ہوئیں اورعید کے بعد ان میں اضافہ ہوا۔
انہوں نے کہا کہ کورونا کی تیسری لہر میں سندھ سے پہلے پنجاب اور کے پی میں کیسز بڑھے۔ نا کا کہنا تھا کہ حالیہ عید الفطر کے ساتویں روز 2000 کیسز بڑھے تو اسی وقت فیصلے کیے گئے۔ انہوں ںے کہا کہ سختیوں کی وجہ سے کورونا کیسز کم ہوئے ہیں۔وزیرتعلیم سندھ سعید غنی نے کہا کہ آج ٹاسک فورس نے سختیاں کم کرنے کا عندیہ دیا ہے۔ انہوں نے کہا کہ ری اوپننگ کی طرف جارہے ہیں اور اس پر مشاورت کر رہے ہیں۔