میری شہہ رگ ہے تیرا پایۂ تخت

خالقِ شش جہاں سبحان اللہ میں کہاں تو کہاں سبحان اللہ
0
91
poet

وہ خریدار قہقہوں کا
اور میں درد بیچنے والی

عالیہ بخاری ہالہ 20 مارچ 1970 کو لاہور میں سید بشیر حیدر اور سیدہ پروین اختر کے ہاں پیدا ہوئیں ان کی اصناف میں افسانہ، شاعری، مضامین تنقید، بچوں کا ادب شامل ہیں
تصنیفات
۔۔۔۔۔۔
۔ (1)گورکھ دھندا
۔ (2)مولوی قدرت اللہ پاکستانی
۔ (3)کھیر کی پلیٹ
۔ (4)خواب
۔ (5)حسن حقیقی
۔ (6)گورکھ
صحافتی ذمہ داری
۔۔۔۔۔۔
ماہنامہ ”نوازش“، لاہور میں ایڈیٹر ہیں ، 1985 میں بچوں کے لیے لکھنا شروع کیا

حمد
۔۔۔۔
خالقِ شش جہاں سبحان اللہ
میں کہاں تو کہاں سبحان اللہ
تجھ سے راز و نیاز کرتی ہوئی
میری خاموشیاں سبحان اللہ
بے نشان و حقیر ذات مری
ہر جگہ تو عیاں سبحان اللہ
میری شہہ رگ ہے تیرا پایۂ تخت
توہے مجھ میں نہاں سبحان اللہ
خاک کے گھر میں قید میرا نفس
اور تو لامکاں سبحان اللہ
تیری رحمت اگر ہے ساتھ مرے
میں نہیں بے اماں سبحان اللہ
سج گیا ہے تری تجلی سے
میرے دل کا مکاں سبحان اللہ
میں ہوں محدود تو ہے لا محدود
ابدی و بیکراں سبحان اللہ
ایک زرۂء خاک میرا وجود
اور کہاں تیری شاں سبحان اللہ
تو ہی رگ رگ میں ہے سمایا ہوا
تو ہی ہے حرزِ جاں سبحان اللہ
تو اندھیروں میں میرا سورج ہے
دھوپ میں سائباں سبحان اللہ
خالقِ شش جہاں سبحان اللہ
میں کہاں تو کہاں سبحان اللہ

ہائیکو
۔۔۔۔۔
وہ خریدار قہقہوں کا تھا
اور میں درد بیچنے والی
میری اور اس کی بات کیا بنتی

غزل
۔۔۔۔۔
اس نے بھیجا ہے پیار کا تحفہ
اک دل بے قرار کا تحفہ
قسمتو ں سے کسی کو ملتا ہے
جانِ جاں وصلِ یار کا تحفہ
سرد موسم نے لی ہے انگڑائی
آ چکا ہے بہار کا تحفہ
میرے قدموں کو کیجیے مضبوط
دیجیے اعتبار کا تحفہ
دل سلگتا ہوا ملا ہمیں یوں
جیسے بھُس کو شرار کا تحفہ
تیرا غم یوں چھپائے پھرتے ہیں
جیسے دیرینہ یار کا تحفہ
آپ کے روپ میں ہمیں ہالہؔ
مل گیا غمگسار کا تحفہ

Leave a reply