میر مرتضیٰ بھٹو قتل کیس،ملزمان کی بریت کیخلاف اپیلوں پر سماعت ملتوی

0
95
murtaza bhutto

سندھ ہائی کورٹ نے میر مرتضیٰ بھٹو قتل کیس کے ملزمان کی بریت کے خلاف اپیلوں کی سماعت 4 ہفتوں کے لیے ملتوی کر دی

دورانِ سماعت ملزم پولیس افسران کو عدالت میں پیش کیا گیا، اس موقع پر مرتضیٰ بھٹو کے بیٹے ذوالفقار بھٹو جونیئر اور پارٹی کارکن بھی موجود تھے،ملزم کے وکیل نے عدالت سے استدعا کی کہ سابق وزیرِ اعظم ذوالفقار بھٹو کیس کی سماعت سپریم کورٹ میں جاری ہے، عدالتِ عظمیٰ نے جس کی سماعت الیکشن کے بعد کرنے کا فیصلہ کیا ہے، لہٰذا اس کیس کو بھی الیکشن کے بعد ہی سنا جائے،سابق پولیس افسر واجد درانی کے وکیل نے حاضری سے استثنیٰ کے لیے درخواست جمع کرا دی جس میں استدعا کی گئی کہ واجد درانی بیمار ہیں، انہیں حاضری سے مستقل استثنیٰ دیا جائے

عدالت نے واجد درانی کی درخواست پر فریقین کو نوٹس جاری کر دیا جبکہ ملزم پولیس افسر رائے طاہر اور دیگر کو بھی حاضری سے استثنیٰ دے دیا،ملزمان کے وکیل نے کہا کہ جب عدالت ضرورت محسوس کرے گی ملزمان پیش ہو جائیں گے، کیس میں نامزد شاہد حیات کا ڈیتھ سرٹیفکیٹ بھی عدالت میں پیش کیا گیا،سندھ ہائیکورٹ نے ملزمان کی بریت کے خلاف اپیلوں کی سماعت 4 ہفتوں کے لیے ملتوی کر دی،جسٹس نعمت اللّٰہ پھلپھوٹو نے ریمارکس دیتے ہوئے کہا کہ آئندہ سماعت پر دلائل سننا شروع کریں گے

واضح رہے کہ میر مرتضیٰ بھٹو کو 20 ستمبر 1996 کو شہر قائد کراچی میں ایک جلسے سے واپسی پر انکے گھر کے قریب مورچہ بند پولیس اہلکاروں نے چھ ساتھیوں سمیت فائرنگ کر کے قتل کر دیا تھا،واقعہ کے بعد سرکار اور مرتضیٰ بھٹو کے ملازم نور محمد کی مدعیت میں 2 مقدمات درج کیے گئے تھے،دسمبر 2009ء میں ماتحت عدالت نے 20 پولیس افسران کو بری کر دیا تھا،اسی عدالت نے مرتضیٰ بھٹو اور ان کے ساتھیوں کو بھی مقدمے سے بری کیا تھا،میر مرتضیٰ بھٹو کے ملازم نور محمد گوگا نے ملزمان کی بریت کے خلاف 2010ء میں اپیل دائر کی تھی

 بلاول بھٹو زرداری نے شہید میر مرتضیٰ بھٹو کے یومِ شہادت پر پیغام جاری کیا

ہمارا بھٹو تو واپس نہیں آئے گا، ہمیں امید ہے غلط فیصلے کو غلط کہا جائے گا

بشریٰ بی بی، بزدار، حریم شاہ گینگ بے نقاب،مبشر لقمان کو کیسے پھنسایا؟ تہلکہ خیز انکشاف

لوگ لندن اور امریکہ سے پرتگال کیوں بھاگ رہے ہیں،مبشر لقمان کی پرتگال سے خصوصی ویڈیو

مبشر لقمان کا کہنا تھا کہ بہت ہی اہم خبر لے کر آیا ہوں، 

مبش لقمان کا کہنا تھا کہ ضیا الحق کی مدد کرنے والوں میں نواز شریف سب سے آگے تھے

Leave a reply