میزائل تجربات جنوبی کوریا اور امریکا پر حملے کی تیاری ہیں، یہ جنگی مشقیں جاری رہیں گی،شمالی کوریا

0
29

پیانگ یانگ: شمالی کوریا کا کہنا ہے کہ اس نے میزائل تجربات اپنے سخت حریف ممالک جنوبی کوریا اور امریکا پر حملے کے لیے کئے اور یہ جنگی مشقیں جاری رہیں گی-

باغی ٹی وی : عالمی خبر رساں ادارے "روئٹرز” کے مطابق شمالی کوریا نے گزشتہ ایک ہفتے کے دوران درجنوں میزائل داغے اور جنگی طیاروں کی سمندر حدود میں پروازوں کو بڑھادیا جس پر شمالی کوریا کی فوج کا کہنا تھا کہ یہ مہمات جنوبی کوریا اور امریکی فضائیہ کی بڑی فوجی مشقوں کے خلاف بطور احتجاج کی گئیں۔

مصنوعی سیاروں کو خلا میں لے جانے والے ایرانی راکٹ کی کامیاب آزمائشی پرواز

شمالی کوریا کی فوج کا کہنا تھا کہ ہتھیاروں کے تجربات میں ڈسپریشن وار ہیڈز سے لدے بیلسٹک میزائل اور زیر زمین دراندازی کے وار ہیڈز شامل تھے جن کا مقصد دشمن کے فضائی اڈوں پر حملہ کرنا تھا جان بوجھ کر کشیدگی کو بڑھانا تھا اور بہت زیادہ جارحانہ نوعیت کی ایک خطرناک جنگی مشقیں کیں-

شمالی کی فوج نے کہا کہ اس نے فضائی اڈوں اور ہوائی جہازوں کے ساتھ ساتھ جنوبی کوریا کےایک بڑےشہر پر حملوں کی نقلی سرگرمیاں انجام دی ہیں تاکہ دشمنوں کے مسلسل جنگی جنون کو ختم کیا جا سکے –

میزائل لانچوں کی ہلچل میں ایک ہی دن میں اب تک کا سب سے زیادہ حملہ شامل ہے، اور جوہری ہتھیاروں سے لیس شمالی کوریا کے میزائل تجربے کے ریکارڈ سال کے درمیان آیا ہے۔

علاوہ ازیں زمین سے فضا میں مار کرنے والے میزائل کے تجربات کیے جو دشمن کے طیاروں کو مختلف اونچائیوں اور فاصلوں پر “فنا” کرنے کے لیے بنائے گئے ہیں۔ تجربات میں اسٹریٹجک کروز میزائل جنوبی کوریا کے جنوب مشرقی ساحلی شہر السان سے 80 کلومیٹر دور بین الاقوامی پانیوں میں گرے۔

شمال کی فوج نے فنکشنل وار ہیڈ کے ساتھ ایک بیلسٹک میزائل کے ایک اہم تجربے کا بھی دعویٰ کیا جس کے ذریعے دشمن کے آپریشن کمانڈ سسٹم کو مفلوج کر دیا گیا لیکن کچھ مبصرین کو شک ہے کہ شمالی کوریا کے ہاس ایسے برقناطیسی حملے کی صلاحیت نہیں۔

آرٹیمس1مشن کو14 نومبر کو چاند پر بھیجے جانے کا امکان

شمالی کوریا کی فوج کی جانب سے جاری بیان میں مزید کہا گیا کہ میزائل تجربات جنوبی کوریا اور امریکی اہداف جیسے کہ فضائی اڈوں اور آپریشن کمانڈ سسٹم کو مختلف قسم کے میزائلوں کے ساتھ “بے رحمی سے نشانہ بنانے کی مشقیں تھیں جن میں ممکنہ طور پر جوہری صلاحیت کے ہتھیار شامل تھے۔

جس پر امریکا اور جنوبی کوریا نے مشترکہ فوجی مشقیں جاری رکھنے کے عزم کا اظہار کرتے ہوئے شمالی کوریا کو خبردار کیا کہ جوہری ہتھیاروں کے استعمال کے نتیجے میں کِم جونگ اُن کی حکومت کا خاتمہ ہوگا۔

شمالی کوریا کی جواباً فوجی مشقوں کوماہرین حکمراں کِم جونگ اُن کے اپنے حریفوں کی فوجی مشقوں کے دباؤ کے سامنے پیچھے نہ ہٹنے کے عزم کی نشاندہی سمجھتے لیکن کچھ ماہرین کی رائے ہےکہ کِم جونگ اُن نے اپنی مشقوں کوجوہری ہتھیاروں کوجدید بنانےسمیت امریکا اور جنوبی کوریا کے ساتھ مستقبل کے معاملات میں اپنا فائدہ بڑھانے کے بہانے کے طور پر بھی استعمال کیا۔

جنوبی کوریا اور امریکی حکام نے یہ بھی کہا ہے کہ پیانگ یانگ نے جوہری ڈیوائس کا تجربہ کرنے کے لیے تکنیکی تیاری کر لی ہے، یہ 2017 کے بعد پہلی بار ہو گا۔

تنزانیہ:وکٹوریہ جھیل میں مسافر طیارہ گرکرتباہ

امریکی محکمہ خارجہ کے ایک بیان کے مطابق، امریکہ، جاپان اور جنوبی کوریا کے سینئر سفارت کاروں نے اتوار کو فون پر بات کی اور حالیہ تجربات کی مذمت کی، جس میں ایک میزائل کا "لاپرواہ” لانچ بھی شامل ہے جو گزشتہ ہفتے جنوبی کوریا کے ساحل سے گرا تھا۔

جنوبی کوریا کے جوائنٹ چیفس آف اسٹاف کے ایک اہلکار نے پیر کو بتایا کہ جنوبی کوریا کے ایک جہاز نے ملبہ برآمد کیا ہے جس کے بارے میں خیال کیا جاتا ہے کہ یہ شمالی کوریا کے مختصر فاصلے تک مار کرنے والے بیلسٹک میزائل (SRBM) کا حصہ ہے۔ یہ پہلا موقع تھا جب شمالی کوریا کا بیلسٹک میزائل جنوبی کوریا کے پانیوں کے قریب گرا تھا۔

اہلکار نے بتایا کہ جنوبی کوریائی بحریہ کے ریسکیو جہاز نے پرزوں کی بازیابی کے لیے زیرِ آب تحقیقات کا استعمال کیا، جن کا تجزیہ کیا جا رہا ہے۔

Leave a reply