ماڈل کورٹس، کتنے مجرموں‌ کو سزائے موت اور عمر قید کی سزا سنائی گئی، ڈھائی ماہ کی رپورٹ جاری

ڈی جی مانیٹرنگ سیل ماڈل کورٹس سہیل ناصر نے میڈیا بریفنگ کے دوران ملک بھرکی ماڈل کورٹس کی ڈھائی ماہ کی کارکردگی رپورٹ جاری کی اور بتایا ہے کہ بلوچستان کے 5 اضلاع ،خیبرپختونخوا کے ایک ضلع میں قتل و منشیات کےمقدمات نمٹائے گئے ہیں.

باغی ٹی وی کی رپورٹ کے مطابق انہوں نے کہاکہ پاکستان کی تاریخ میں پہلی بار ہوا کہ کسی ضلع میں تمام مقدمات نمٹائے گئے. کیس جب عدالت میں آتا ہے تو ایک میعاد مقرر کر دی 3 ماہ میں مکمل کرنا ہے. ماڈل کورٹس میں ملک بھر میں 25 ہزار183گواہوں کے بیانات قلمبند کیے گئے.مجرموں کو 26 کروڑ30 لاکھ سے زائد کے جرمانے کیے گئے. رپورٹ میں بتایا گیا کہ ماڈل کورٹس میں 535 مجرموں کو عمر قید کی سزا سنائی گئی. اسی طرح ماڈل کورٹس میں ملک بھر میں 175 افراد کو سزائے موت سنائی گئی.

ڈی جی مانیٹرنگ سیل ماڈل کورٹس سہیل ناصر نے کہاکہ ماڈل کورٹس میں ملک بھرمیں قتل و منشیات کے 5647 مقدمات نمٹائے گئے. سندھ میں 27اور بلوچستان میں 19ماڈل کورٹس قائم ہیں. ملک بھر میں 116 ماڈل کورٹس بنائی گئی ہیں. ان کا کہنا تھا کہ ماڈل کورٹس کی ابتدا پنجاب سے ہوئی اور تب کے نتائج بہت بہترین تھے. سہیل ناصر کی جانب سے ماڈل کورٹس کی ڈھائی ماہ کی کارکردگی رپورٹ جاری کی گئی ہے.

جواب چھوڑیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا.