fbpx

مقدس ہستیوں کیخلاف اقدامات کوآزادی اظہار رائےکہناڈیڑھ ارب مسلمانوں کی دل آزاری ہے ، وزیراعظم

مقدس ہستیوں کیخلاف اقدامات کوآزادی اظہار رائےکہناڈیڑھ ارب مسلمانوں کی دل آزاری ہے ، وزیراعظم

باغی ٹی وی :وزیرا عظم پاکستان نے کہا ہے کہ اسلاموفوبیامذاہب کےدرمیان منافرت اورعدم استحکام کا باعث ہے، دنیاکواسلاموفوبیاکےبڑھتےواقعات پرتوجہ دینےکی ضرورت ہے،انتہاپسندی اوردہشتگردی کواسلام سےجوڑنامسلمانوں کیلئےبدنامی کاباعث ہے، مقدس ہستیوں کےخلاف اقدامات کوآزادی اظہاررائےکہنا مسلمانوں کی دل آزاری ہے،

وزیرا عظم کا کہنا تھا کہ عالمی برادری کواس حساسیت سےآگاہ کرنےکیلئےمشترکہ طورپرکام کرناچاہیے، ہمیں ملکردنیاکوبتاناچاہیےکہ ہمارےدلوں میں نبی کریمﷺ اور قرآن پاک کاکتنااحترام ہے، دنیابھرکےمذاہب کےمقدسات کوقانونی تحفظ دینےکی ضرورت ہے،اسلام کاحقیقی تشخص دنیاکوبتانےکیلئےاوآئی سی کومشترکہ کوشش کرنی چاہیے،

وزیرا عظم نے کہا کہ پاکستان عالمی برادری کےتمام ممالک کےساتھ برداشت باہمی احترام پرمبنی تعلقات کیلئےپرعزم ہے،اسلام کا حقیقی تشخص دنیاکو بتانے کیلئے او آئی سی کو مشترکہ کوشش کرنی چاہیے، مقدس ہستیوں کیخلاف اقدامات کوآزادی اظہار رائےکہناڈیڑھ ارب مسلمانوں کی دل آزاری ہے،

خیال رہے یورپی پارلیمنٹ نے جمعرات کو ایک قرارداد منظوری کی تھی جس میں پاکستان کو دیے گئے جی ایس پی پلس سٹیٹس پر نظرثانی کرنے کا کہا گیا تھا۔

قرار داد میں کہا گیا تھا کہ ملک میں ایسے قوانین ہیں جو کہ اقلیتوں اور بنیادی حقوق کے منافی ہیں۔

جس پر پاکستان کے ترجمان دفتر خارجہ کا کہنا تھا کہ پاکستان ایک پارلیمانی جمہوری ملک ہے جہاں ایک متحرک سول سوسائٹی، آزاد میڈیا اور ایک خودمختار عدلیہ موجود ہیں جو کہ بلا کسی تفریق ملک کے تمام شہریوں کے بنیادی حقوق کے ضامن ہیں

جواب چھوڑیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا.