fbpx

این اے 249 بلدیہ ٹاؤن میں پی ایس پی کا میلہ سج گیا،مصطفی کمال کا تاریخی خطاب۔

این اے 249 بلدیہ ٹاؤن میں پی ایس پی کا میلہ سج گیا۔مصطفی کمال کا تاریخی خطاب۔

پاک سرزمین پارٹی کے چیئرمین سید مصطفیٰ کمال تقریب کے شرکاء سے خطاب کرنے کے لیے اسٹیج پر تشریف لے آئے۔عوام کا پرتپاک استقبال، پارٹی پرچم لہرائے گئے، سید مصطفیٰ کمال کے حق میں بھرپور نعرے لگائے گئے۔


بلدیہ کی عوم نے کراچی سے عصبیت کی سیاست کو دفن کر دیا ہے۔عوام کو مبارک ہو کہ اب کلمہ پڑھنے والے کلمہ پڑھنے والوں کا خون نہیں بہائیں گے۔ہمیں ایسی سیٹیں نہیں چاہئیں جو بھائی کو بھائی سے لڑا کر حاصل ہو۔مختلف زبانوں کو متحد کرنے کا خواب دیکھ کر وطن واپس آئے تھے۔اس شہر میں روزانہ 22 لوگ کلمہ پڑھنے والے کلمہ پڑھنے والوں کے ہاتھوں سے زبح ہوتے تھے۔پاک سرزمین پارٹی کے کارکنان کی جدوجہد کو تاریخ لکھے گی۔لوگ پارٹیوں میں پروٹوکول اور پیسے کیلئے جاتے ہیں جبکہ پی ایس پی میں لوگ کچھ نہ ہونے کے باوجود بھی موت کے ڈر کے باوجود جڑ گئے۔کوئی مہاجروں کا نام لے کر پنجابیوں کو ڈراتا تھا، کوئی پختونوں کو ڈراتا تھا۔لیڈر آتے تھےنوجوانوں میں نفرت بھرتے تھے اور چلے جاتے تھے۔پیچھےنوجوان مرتے تھے، شہر تباہ ہو رہا تھا۔آج پی ایس پی کے اسٹیج پر سندھی، پنجابی، پختون، سندھی، مہاجر، دیوبندی، بریلوی، شیعہ، سنی سب موجود ہیں۔آج لوگوں کو مارنے والے خود ختم ہو گئے۔میرے ساتھ 40 سال بعد اردو بولنے والے، پختونوں کے علاقے میں گئے اور پختون اردو بولنے والوں کے علاقے میں آئے۔جو لوگ لسانی سیاست کرتے تھے وہ بند گلی میں داخل ہوگئے۔پاک سرزمین پارٹی ہر گلی، محلے میں لوگوں کے دلوں میں موجود ہے۔پاک سرزمین پارٹی کے علاوہ تمام پارٹیوں نے الیکشن کمیشن کو انتخابات ملتوی کرنے کی درخواست دے دی۔این اے 249 میں ایک سال میں صرف چھ گھنٹے کے لیے پانی آتا ہے۔یہ تھر کا علاقہ نہیں شہر کراچی ہے جو 70 فیصد ریوینیو کما کر دیتا ہے۔آج لوگوں کا رجحان پاک سرزمین پارٹی کی جانب دیکھ کر سڑکیں بن رہی ہیں تو پہلے بھی بن سکتی تھیں۔لوگوں کے پاس پہلے آپشن نہیں تھا آج اللہ کے حکم سے پاک سرزمین پارٹی کھڑی ہو چکی ہے۔بلدیہ ٹاؤن کو ایسا نہیں چھوڑا تھا۔60 لاکھ گیلن پانی کی لائن ڈال کر ہر گھر تک پانی پہنچایا۔میرے جانے کے بعد بلدیہ کی لائن پر 178 اللیگل کنکشن اور 25 ہائیڈرنٹس ہیں۔پورا شہر تھا میرے پاس میں نے کوئی ہائیڈرنٹ، شادی ہال نہیں بنایا۔اب چور اس علاقے میں نہیں رہ سکیں گے۔ عوام کا ہاتھ میرے ساتھ انکے گریبانوں پر ہوگا۔

جواب چھوڑیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا.