ورلڈ ہیڈر ایڈ

نواز شریف کی لیگل ٹیم بھی کوٹ لکھپت جیل پہنچ گئی

سابق وزیراعظم نواز شریف سے ملاقات کیلئے شریف خاندان کی سینئر لیگل ٹیم بھی کوٹ لکھپت جیل پہنچ گئی

باغی ٹی وی کی رپورٹ کے مطابق لیگل ٹیم میں خواجہ حارث ایڈووکیٹ اور اعظم نذیر تارڑ شامل ہیں ،شہباز شریف کی موجودگی میں سابق وزیراعظم کے کیس بارے خصوصی بات چیت ہوگی ،لیگل ٹیم کی جیل میں سابق وزیراعظم سے ملاقات میں اسلام آباد ہائیکورٹ میں زیر سماعت ضمانت کے کیس پر بھی بات چیت ہوگی،

 

العزیزیہ ریفرنس میں سابق وزیراعظم نوازشریف کی سزا کے خلاف اپیل 18 ستمبر کو سماعت کے لیے مقرر کر دی گئی ہے، اسلام آباد ہائی کورٹ کےجسٹس عامرفاروق اورجسٹس محسن اخترکیانی سماعت کریں گے ،عدالت نے پیپر بک کی تیاری ایک ماہ میں جولائی کے آخر تک مکمل کرنے کا حکم دیا تھا .

مریم نواز کے اثاثے ہوں گے منجمند، نیب نے فیصلہ کر لیا

 

شہباز شریف اپنے بڑے بھائی سابق وزیراعظم نواز شریف سے ملنے کوٹ لکھپت جیل پہنچ گئے، نواز شریف سے جیل میں ملاقات کا دن جمعرات کا مقرر ہے، جمعرات کو بھی شہباز شریف نے نواز شریف سے ملاقات کی ہے تا ہم آج پھر وہ ملاقات کر رہے ہیں

شہبازشریف نے ملاقات کیلئے وزارت داخلہ سے خصوصی اجازت لی،گزشتہ روز شہبازشریف نے مولانا فضل الرحمان سے ملاقات کی تفصیلات نواز شریف کو بتائیں،حکومت مخالف تحریک کے امورپربھی مشاورت کی گئی،

شہباز شریف کی نواز شریف سے جمعرات کی بجائے پیر کو اچانک ملاقات کی وجہ سے سیاسی حلقوں میں چہ میگوئیاں جاری ہیں کہ کیا نواز شریف ڈیل پر آمادہ تو نہیں ہو گئے، شہباز شریف کو اچانک ملاقات کی ضرورت کیوں پیش آئی؟

ممکنہ ڈیل یا حکومت کے خلاف تحریک؟ نواز شریف سے ملنے شہباز شریف جیل پہنچ گئے

واضح رہے کہ سابق وزیراعظم نواز شریف کوٹ لکھپت جیل میں قید ہیں اور العزیزیہ ریفرنس کیس کی سزا کاٹ رہے ہیں، حکومت نے نواز شریف کا اے سی بند کر دیا ہے اور تمام سہولیات واپس لے لی ہیں، نواز شریف سے جمعرات کو ملاقات کا دن مقرر ہے.

مریم نواز نے پھر “ابا” کے لئے مشکل کھڑی کر دی

واضح رہے کہ اسلام آباد کی احتساب عدالت نمبر دو کے جج محمد ارشد ملک نے دونوں ریفرنسز پر فیصلے سنائے تھے اور العزیزیہ اسٹیل ملز ریفرنس میں نواز شریف کو سات سال قید اور جرمانے کی سزا سنائی تھی جبکہ فلیگ شپ ریفرنس میں عدم شواہد کی بناء پر بری کر دیا تھا۔ عدالتی چھٹیوں کے باعث اسلام آباد ہائی کورٹ 18ستمبر کودونوں اپیلوں پر سماعت کر گی

جواب چھوڑیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا.