fbpx

دیارغیرمیں چھُپ چھُپ کررہنا مصیبت بن گیا:نوازشریف نےوطن واپسی کے لیے مشاورت شروع کردی

لاہور:دیارغیرمیں چھُپ چھُپ کررہنا مصیبت بن گیا:نوازشریف نےوطن واپسی کے لیے مشاورت شروع کردیا،اطلاعات کےمطابق سابق وزیراعظم میاں نوازشریف نے وطن واپسی کے لئے سنجیدگی سے غور شروع کردیا۔

تفصیلات کے مطابق معروف صحافی سیف اعوان کی جانب سے دعویٰ کیا گیا ہے کہ نواز شریف نے پاکستان آنے پر غور شروع کر دیا ہے۔
انہوں نے سماجی رابطے کی ویب سائٹ ٹویٹر پر ٹویٹ کرتے ہوئے کہا کہ سابق وزیراعظم میاں نوازشریف نے وطن واپسی کےلئے سنجیدگی سے غور شروع کردیا۔

سیف اعوان کہتےہیں کہ نوازشریف نے ایک ماہ میں پارٹی رہنماﺅں اور وکلاء سے تین اہم میٹنگز کی ہیں،نوازشریف کے وکلاءاور پارٹی کا ایک بڑا گروپ وطن واپسی کا حامی ہے۔ذرائع کے مطابق سینئر پارٹی رہنماﺅں کے ایک بڑے گروپ نے بھی وکلاء کی تجاویز کی حمایت کی ہے۔

نوازشریف وطن واپسی کا حتمی فیصلہ پارٹی صدر میاں شہبازشریف سے تفصیلی مشاورت کے بعد ہی کریں گے ۔میاں نوازشریف اس حوالے سے مسلسل پارٹی رہنماﺅں اور اپنے وکلاء کے ساتھ مسلسل رابطے میں ہیں۔

صحافی نے مزید دعویٰ کیا کہ نوازشریف کے وکلاءنے کہا ہے کہ اگر آپ واپس آتے ہیں تو قومی امکان ہے عدالت آپ کو ریلیف دے گی۔کیونکہ عدالت نے آپ کو سرینڈر کرنے کا کہا ہے ۔تین چار پیشیوں میں آپ کو ریلیف مل سکتا ہے

دوسری طرف یہ بھی اطلاعات ہیں کہ نوازشریف پاکستان واپس نہیں آنا چاہتے وہ کسی عرب ملک میں سیاسی پناہ کےلیے کوشاں تھے مگرکسی عرب حکومت نے بھی اس سلسلے میں حامی نہیں بھری

یہ بھی معلوم ہوا ہے کہ نوازشریف کے غیرملکی ساتھیوں نے بھی نوازشریف کوپاکستان نہ جانے کا مشورہ دیا ہے ، ان میں‌ ان کے کاروباری مراسم رکھنے والے بھارتی دوست بھی شامل ہیں‌

یاد رہے کہ چند ماہ قبل بھی یہ خبریں اہم ذرائع کے حوالے سے گردش کررہی تھی کہ نوازشریف کے بھارتی دوستوں نے نوازشریف کوپیشکش کی تھی کہ اگرانہیں پاکستان کے اعتراض کا ڈرنہ ہوتا تو آپ کو بھارت میں سیاسی پناہ دے سکتے ہیں