fbpx

نازک لڑکیاں تحریر: ماریہ ملک

موضوع: نازک لڑکیاں

اسلام سے پہلے زمانۂ جہالیت میں لڑکی کی پیدائش اس قدر قبیح عیب سمجھا جاتا تھا کہ الله کی پناہ۔ لڑکیوں کو زندہ حالت میں درگور کر دیا جاتا تھا۔ لیکن اسلام نے لڑکی کو وہ عزت و تکریم عطا کی جِس کی مثال نہی ملتی۔ اسلام نے لڑکی چاہے وہ ماں ہو یا بیٹی، بیوی ہو یا بہن، کو اہمیت اور تکریم کی جگہہ پر بٹھایا۔

والدین کے لئے بیٹی کو رحمت، شوہر کے لئے بیوی کو عزت کا لباس، بھائیوں کے لئے بہن دعاؤں کا سایہ اور اولاد کے لئے ماں الله کی رِضا اور جنت میں داخلے کا ذریعہ بنایا گیا ہے۔ اسلامی تعلیمات کے علاوہ کسی مذہب میں خواتین کو اس طرح کے مقامات اور شرف سے نہی نوازا گیا۔

لڑکیوں کو لے کر مختلف لوگوں کی مختلف سوچ ہوتی ہے۔ بعض لوگوں کا ماننا ہے کہ لڑکیاں خود غرض اور لالچی ہوتی ہیں۔ لڑکیوں کے بارے میں یہ تاثر بھی پایا جاتا ہے کہ وہ باتونی ہوتی ہیں اور اپنا سارا وقت گاسپ میں ضائع کر دیتی ہیں
یوں لڑکیوں کے حوالے سے مختلف تاثرات قائم کیے جاتے ہیں اِن تاثرات میں کسی حد تک سچائی ہو بھی سکتی ہے لیکن یہ کہنا غلط نہ ہو گا کہ سب لڑکیاں ایسی نہی ہوتیں۔ بلکل اُسی طرح جیسے سب مرد سخت طبیعت اور خواتین پر ظلم کرنے والے نہی ہوتے۔

ایک کامیاب شادی شدہ زندگی کے لئے ضروری ہے کہ میاں بیوی دونوں ایک دوسرے کی خصوصیات اور کمزوریوں سے واقف ہوں اور خصوصیات و کمزوریوں پر مشتمل ان دونوں عوامل کو سمجھتے ہوئے ایک دوسرے کی خصوصیات سے فائدہ اور کمزوریوں پر پردہ ڈالتے ہوئے اپنی زندگی کو حسین اور راحت و محبت سے گزاریں۔ دنیا میں کوئی بھی انسان حتمی طور پر کامل و اکمل نہی۔ انسان خوبیوں اور خامیوں کا مرکب ہے۔ چنانچہ مرد و زن کو چاہئیے کہ خوبیوں اور خامیوں کے ساتھ ایک دوسرے کے لئیے محبت کا ہاتھ بڑھاتے رہیں اور خامیوں کو اس نظریے کے ساتھ در گزر کرتے رہیں کہ ہماری خامیاں بھی تو قابلِ گرفت ہو سکتی ہیں لیکن اِس کے باوجود ہم لوگوں سے توقع کرتے ہیں کہ ہماری غلطیوں سے درگزر کیا جائے۔

آئیے اب لڑکیوں کی چند اُن خصوصیات کا ذکر کرتے ہیں جو بڑی حد تک لڑکیوں کی عادات میں شامل ہوتی ہیں۔

معصومیت
لڑکی قدرتی طور پر موصومیت جیسے خوبصورت وصف سے مزین ہوتی ہے۔ یہی وجہ ہے کہ ہر چھوٹی سے چھوٹی بات کو دِل پر لے لیتی ہے اور ذرا برابر خوف، درد یا خوشی اُس کی آنکھوں میں آنسوؤں کا سبب بن جایا کرتی ہیں۔ لال بیگ جیسے چھوٹے کیڑے سے ڈر کر آسمان سر پہ اُٹھا لینا بھی لڑکی کی معصومیت کی ایک نشانی ہے۔

حساسیت
لڑکیاں کافی چیزیں جلدی دل پے لے لیتی ہیں۔ حساس ہونے کی وجہ سے کسی بھی بھلی چیز سے انہیں لگاؤ بھی جلدی ہو جاتا ہے۔ اس کے علاوہ جلدی مایوس ہو جانا، جلد ناراض ہو جانا اور پھر جلد مان بھی جانا لڑکیوں کے حساس دل کی ایک بہترین مثال ہے۔

چِٹ چاٹ
گاسپنگ اور طویل گفتگو کی نشستیں بھی لڑکیوں کا ایک قدرتی خاصہ ہے۔ (یقیناً اس گفتگو میں غیبت، چغلی اور بہتان تراشی جیسے قبیح افعال سے جس حد تک ممکن ہو بچنا چاہئیے۔) لڑکیوں کو یہ بات پسند ہوتی ہے کہ ان کا کوئی دوست یا محبت کرنے والا بغیر کسی وجہ کے ان سے لمبی اور پیاری بات کرے۔ اور اُن کی کہی بات کو پوری دلچسپی سےسنے اور اُس کو اہم جانے۔

تعریف سننا
بلا شُبہ یہ بات ہر شخص بلا تفریقِ مرد و زن پاند کرتا ہے اُس کی تعریف کی جائے۔ لیکن لڑکیوں میں یہ خصوصیت کثرت سے پائی جاتی ہے۔ اِس کی اصل وجہ لڑکیوں میں اس بات کا خوبصورت احساس ہے کہ وہ آپ کے لئے ایک خاص اہمیت رکھتی ہیں۔ اور وہ آپکی توجہ کی حامل ہے۔

بناؤ سنگھار
لڑکیوں کو یہ بات پسند ہے کہ وہ بن سنور کر رہیں۔ اِس کے لئے ضروری نہی کہ ہر لڑکی اجکل کے مروجہ میک اپ کی ہی شوقین ہو بلکہ ایک بہت بڑی تعداد سادگی میں بھی خود کا بنا سنوار کے رکھنے کا ہُنر جانتی ہیں۔ لیکن اِس بات پر کوئی دو رائے نہیں کہ ہر لڑکی کو اچھا لگنے کا شوق ہوتا ہے۔

قوت برداشت
جہاں لڑکیاں نازک اور حساس دِل رکھنے والی ہوتی ہیں وہیں پر کڑے سے کڑا وقت پڑنے پر پورے برداشت اور صبر کا مظاہرہ بھی کرتی ہیں بلکہ کئی موقعوں پر جہاں مرد کا صبر جواب دے جاتا ہے وہاں خواتین صبر و استقلال کا استعارہ ثابت ہوتی ہیں۔

اچھائیاں اور برائیاں ہر کسی میں ہوتی ہیں۔ لیکن ایک اسلامی معاشرے میں مرد اور عورت کو اپنی اپنی جگہہ ایک خاص اہمیت حاصل ہے۔ دونوں ایک اچھے اور صحت مند معاشرے کی اہم ترین اکائیاں ہیں۔ اگر دونوں ایک دوسرے کی عادات اور قدرتی خواص کو سمجھنے اور خامیوں خوبیوں پر پردہ ڈالتے ہوئے اپنا اپنا کردار ادا کریں تو یقیناً اس کے نتیجے میں ایک مضبوط اور صحتمند معاشرہ وجود میں آ سکتا ہے۔

جواب چھوڑیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا.