fbpx

ڈپٹی اسپیکر پنجاب اسمبلی کے خلاف عدم اعتماد کامیاب

لاہور:پنجاب اسمبلی میں ڈپٹی اسپیکر دوست محمد مزاری کیخلاف تحریک عدم اعتماد کامیاب ہوگئی۔اطلاعات کے مطابق ڈپٹی اسپیکر دوست مزاری کے خلاف تحریک عدم اعتماد کے حق میں 186 ووٹ پڑے۔

تحریک عدم اعتماد پر ووٹنگ سے قبل خالی بیلٹ باکس ایوان میں دکھائے گئے۔ اس کے بعد تحریک پرووٹنگ کا آغاز ہوا تھا۔

ذرائع کے مطابق ڈپٹی اسپیکر کے خلاف تحریک عدم اعتماد کی قرارداد حکومتی رکن راجہ بشارت نے پیش کی۔نومنتخب اسپیکرسبطین خان نے ایوان کے سامنے تحریک عدم اعتماد کی وجوہات بیان کیں۔ سیکرٹری اسمبلی عنایت اللہ لک نے ووٹنگ کے طریقہ کارکا اعلان کیا۔

اس سے قبل پاکستان تحریک انصاف اور ق لیگ کے مشترکہ امیدوار سبطین خان 185 ووٹ لے کر اسپیکر پنجاب اسمبلی منتخب ہوگئے، ان کے مخالف اپوزیشن اتحاد کے سیف الملوک کھوکھر نے 175 ووٹ حاصل کئے جبکہ 4 ووٹ مسترد ہوگئے۔پینل آف چیئرمین ویسم خان بادوزئی نے سبطین خان سے بطوراسپیکر پنجاب اسمبلی حلف لے لیا ہے۔

نومنتخب سپیکر پنجاب اسمبلی سبطین خان حلف کے بعد سپیکر کی چئیر پر بیٹھ گئے اور کہا کہ اپنی جماعت اور سب دوستوں کا مشکور ہوں، اپوزیشن کے دوستوں نے اچھا رول پلے کیا، مجھے آپ لوگوں نے عزت دی، ہاؤس کی عزت اور وقار کا خیال رکھنا ہے، کچھ عرصہ پہلے ایوان میں پولیس آئی، ایوان کی بے توقیری کی گئی، کوشش کروں گا کہ ایسے واقعات دوبارہ نہ ہوں۔

وزیر اعلیٰ پنجاب چودھری پرویزالٰہی نے نو منتخب سپیکر پنجاب اسمبلی محمد سبطین خان کو کامیابی پر مبارکباد دیتے ہوئے کہا کہ محمد سبطین خان کے سپیکر پنجاب اسمبلی منتخب ہونے پر اللہ تعالٰی کا شکر بجا لاتے ہیں، ایوان نے سبطین خان پر بھرپور اعتماد کا اظہار کیا ہے، امید ہے کہ وہ پنجاب اسمبلی کو احسن انداز سے چلائیں گے۔

انہوں نے مزید کہا کہ اپوزیشن کو پہلے کی طرح آج ایک اور شکست کا سامنا کرنا پڑا، اپوزیشن کو اس طرح کے سرپرائز آئندہ بھی ملتے رہیں گے، اپوزیشن وہی کاٹ رہی ہے جو اس نے بویا، انشاءاللہ ہم سب صوبے کے عوام کی خدمت کے لیے دن رات محنت کریں گے۔

پنجاب اسمبلی میں اسپیکر کے انتخاب کے لیے پاکستان تحریک انصاف کی جانب سے سبطین خان اورمسلم لیگ (ن) کی جانب سے سیف الملوک کھوکھرکونامزد کیا گیا تھا۔