fbpx

ن لیگی رہنما کا لندن سے پاکستان واپسی کا فیصلہ

ن لیگ کے رہنما سینیٹر اسحاق ڈار کی پاکستان واپسی کا فیصلہ ہو گیا ہے

اسحاق ڈار جولائی کے دوسرے ہفتے میں پاکستان آ سکتے ہیں ،نجی ٹی وی جیو کے مطابق ذرائع کا کہنا ہے کہ پاکستان واپس آ کرن لیگی رہنما اسحاق ڈار پہلے بطورسینیٹر اپنا حلف لیں گے جس کے بعد وہ وفاقی وزیرخزانہ کا قلمدان سنبھالیں گے

اسحاق ڈار علاج کے لئے لندن گئے تھے تا ہم واپس نہیں آئے تھے، اب ان کی واپسی کا پروگرام بن رہا ہے، اسحاق ڈار کو مفتاح اسماعیل کی جگہ وزیر خزانہ بنایا جائے گا، اسحاق ڈار ن لیگ کے سینیٹر ہیں تا ہم انہوں نے ابھی تک حلف نہیں اٹھایا، اسحاق ڈار نے ویڈیو لنک کے ذریعے حلف اٹھانے کی چیئرمین سینیٹ سے استدعا کی تھی جسے مسترد کر گیا تھا،

موجودہ اتحادی حکومت آئی تو مفتاح اسماعیل کو وزیر خزانہ مقرر کیا گیا ہے ،رواں برس کا بجٹ بھی مفتاح اسماعیل نے پیش کیا ہے، آئی ایم ایف کے ساتھ مذاکرات بھی مفتاح اسماعیل کر رہے ہیں،مفتاح اسماعیل رکن پارلیمنٹ نہیں ہیں اس لیے وہ چھ ماہ تک وزارت کے عہدے پر نہیں رہ سکتے اسی لئے اسحاق ڈار واپس آ کر وزیر خزانہ بنیں گے،

یاد رہے کہ سابق وزیر خزانہ اسحاق ڈار پر آمدن سے زائد اثاثے بنانےکا کیس ہے اور وہ نومبر 2017 میں علاج کی غرض سے لندن گئے تھے اور اس کے بعد سے وطن واپس نہیں آئے۔

ڈبل شاہ کیس، نیب کی جانب سے متاثرین میں کتنے کروڑ کے چیک تقسیم ہوئے؟

نیب ایگزیکٹو بورڈ کا اجلاس ،23 ماہ میں کتنے مقدمات دائر ہوئے؟ چیئرمین نیب نے بتا دیا

خورشید شاہ نے اپنا گھر کس کے پلاٹ پر بنایا؟ نیب کا عدالت میں حیران کن انکشاف

قبل ازیں ن لیگ کی حکومت آئی تو حکومت پاکستان نے سابق وزیر خزانہ اسحاق ڈار کو پاسپورٹ جاری کردیا گیا تھا،اسوقت اسحاق ڈار کا کہنا تھا کہ سیاسی انتقام کیلئے مجھ پر بےبنیاد مقدمات قائم کیے گئے تھے، حلفا کہتا ہوں کہ کبھی ٹیکس چھپایا اور نہ ریٹرن تاخیر سے فائل کی،

سابق وزیر خزانہ اسحاق ڈار نے پاسپورٹ کیلئے لندن سفارتخانے میں اپنے دستاویزت جمع کروائی تھیں اس سے قبل پاکستان مسلم لیگ ن کے قائد اور سابق وزیراعظم نوازشریف کو پاسپورٹ جاری کیا گیا، نواز شریف کو جاری کئے گئے پاسپورٹ کی مدت 10سال ہے، نواز شریف کو ڈپلومیٹک پاسپورٹ جاری نہیں کیا گیا، نواز شریف کو عام پاسپورٹ جاری کیا گیا