fbpx

پاک فضائیہ کی پہلی خاتون پائلٹ فلائنگ آفیسر مریم مختیار کی آج 7ویں برسی

پاک فضائیہ کی پہلی خاتون پائلٹ فلائنگ آفیسر مریم مختیار کی آج 7ویں برسی

پاکستان ایئرفورس کی پہلی خاتون پائلٹ فلائنگ آفیسر مریم مختیار کی 7 ویں برسی آج منائی جارہی ہے۔ پاک فضائیہ کی پہلی شہید خاتون پائلٹ مریم مختیار کی شہادت کو 7 برس بیت گئے،انھوں نے لڑاکا طیاروں کی تربیتی پرواز کے دوران جام شہادت نوش کیا۔ 18 مئی 1992 کوکراچی میں پید اہونے والی مریم نے مئی 2012 کو پاک فضائیہ کے 132ویں جی ڈی پائلٹ کورس میں شمولیت اختیار کی۔

تربیت کے دوسرے مرحلے میں مریم پاک فضائیہ کے ان جانبازوں کی صف میں شامل ہونے جارہی تھی، جنھوں نے سن65 اور71 کی جنگوں میں بہادری کی لازوال داستانیں رقم کیں۔ پی اے ایف اکیڈمی رسالپور سے مریم کو فائٹر کنورڑن کے لیے ایم ایم عالم ایئربیس میانوالی بھیجا گیا، جہاں مریم نے لڑاکا طیاروں کی تربیت حاصل کرنی شروع کی،24 نومبر2015 کی صبح مریم انسٹرکٹرکے ہمراہ تربیتی پروازپرروانہ ہوئیں،اسی دوران کْندیاں کے مقام پر جہاز میں فنی خرابی پیدا ہوگئی۔ مریم نے انسانی آبادی کوبچاتے ہوئے کْندیاں کے علاقے میں شہادت نوش کیا۔
مزید یہ بھی پڑھیں؛
آرمی چیف تقرری؛ وزیر دفاع نے وزیراعظم ہاؤس کو سمری موصول ہونے کی تصدیق کردی
خبردار۔!ایوان اقتدارمیں تھرتھلی۔24گھنٹےاہم:اعظم سواتی،بیگم تہجدگزار،بیٹا شراب کا سوداگر۔ثبوت حاضر ہیں۔
جی ایچ کیو نے آرمی چیف اور چیئرمین جوائنٹ چیفس آف اسٹاف کی تعیناتی کی سمری بھجوا دی، آئی ایس پی آر
جبکہ اس وقت پاکستان فضائیہ کے ترجمان نے بتایا تھا کہ فلائینگ آفیسر مریم مختیار معمول کی تربیتی پرواز پر تھیں جب میانوالی کے اوپر مشن کے حتمی مرحلے میں انھیں ایک سنگین ’اِن فلائٹ ایمرجنسی‘ کا سامنا کرنا پڑا تھا. جسکے باعث جہاز میانوالی کے قریب گر کر تباہ ہوگیا تاہم زمین پر اترنے کے بعد زخموں کی تاب نہ لاتے ہوئے مریم مختیار ہلاک ہوگئیں جبکہ انکے ساتھی ثاقب معمولی زخمی ہوئے تھے.