fbpx

پاکستان کی ابوظبی ایئرپورٹ پر بزدلانہ دہشتگرد حملے کی شدید مذمت

پاکستان نے ابوظبی ایئرپورٹ پر بزدلانہ دہشتگرد حملے کی شدید مذمت کی ہے۔

باغی ٹی وی : وزارت خارجہ کے آفس سے جاری بیان میں کہا گیا کہ پاکستان آج ابوظہبی میں حوثیوں کی طرف سے شہری علاقوں پر کیے گئے گھناؤنے دہشت گردانہ حملے کی شدید مذمت کرتا ہے جس میں ایک پاکستانی شہری سمیت متعدد افراد کی جانیں گئیں ہم متاثرین کے اہل خانہ سے تعزیت کرتے ہیں اور زخمیوں کی جلد صحت یابی کی دعا کرتے ہیں۔

بریکنگ، ابوظہبی ڈرون حملہ،ایک پاکستانی اور 2 بھارتی شہری مارے گئے

پاکستان وزارت خارجہ نے مزید کہا کہ اس طرح کے حملے متحدہ عرب امارات کی خودمختاری اور علاقائی سالمیت کی خلاف ورزی کرتے ہیں اور علاقائی امن و سلامتی کے لیے شدید خطرہ ہیں۔ پاکستان ان کے فوری خاتمے کا مطالبہ کرتا ہے پاکستان متحدہ عرب امارات کے برادر عوام اور حکومت کے ساتھ دہشت گردی کی اس بے رحمانہ کارروائی کے خلاف یکجہتی کے ساتھ کھڑا ہے۔

قبل ازیں سعودی عرب نے ابوظبی ایئرپورٹ پر بزدلانہ دہشتگرد حملے کی شدید مذمت کی ہے ریاض سے جاری سعودی وزارت خارجہ کے اعلامیہ میں متحدہ عرب امارات کی سیکیورٹی استحکام کو یقینی بنانے کیلیے مکمل تعاون کا اعادہ کیا ہے۔

سعودی وزارت خارجہ نے مزید کہا کہ دہشت گردانہ حملے کے حوثی باغی ذمہ دار ہیں۔ حملہ خطے اور دنیا کے امن و استحکام کے لیے درپیش خطرے کی نشاندہی کرتا ہے۔

سیکیورٹی کیوں نہیں دی،شہزادہ ہیری برطانوی حکومت کیخلاف عدالت پہنچ گئے

واضح رہے کہ متحدہ عرب امارات (یو اے ای) کے دارالحکومت ابوظبی میں مشتبہ ڈرون حملے کیے گئے حملوں کے نتیجے میں آئل ٹینکرز میں دھماکوں سے ایک پاکستانی اور بھارتی شہری ہلاک اور چھ زخمی ہوگئے ہیں۔ اماراتی حکام نے ہلاکتوں کی تصدیق کردی ہے۔

ابوظبی پولیس کے مطابق مصفح صنعتی علاقے میں آئل کمپنی کے ذخائر کے قریب تین آئل ٹینکرز میں دھماکوں سے آگ بھڑک اٹھی، جس پر بعد میں قابو پالیا گیاابوظبی انٹرنیشنل ایئرپورٹ کے قریب نئی تعمیرات میں بھی آگ بھڑک اٹھی تھی آگ لگنے کا دوسرا واقعہ ابوظبی کے انٹرنیشنل ایئرپورٹ کی نئی تعمیراتی سائٹ پر ہوا-

ابوظبی پولیس نے کہا ہے کہ ’دونوں مقامات پر آگ بجھانےکی کوشش جاری ہے ادنوک تیل کمپنی کے قریب مصفح آیکاد 3 کے علاقے میں جہاں قریب ہی ادنوک کے تیل ذخائر ہیں، وہاں آئل ٹینکروں میں دھماکے کے باعث آگ لگ گئی ہےابتدائی تفتیش سے معلوم ہوا ہے کہ مذکورہ علاقوں میں چھوٹے اجسام کی پروازیں ریکارڈ کی گئی ہیں جن سے اندازہ ہوتا ہے کہ کوئی چھوٹے ڈرون تھے جن کی وجہ سے حادثے ہوا ہوگا۔

دوسری شادی کی خواہش، بیوی نے شوہر کی انگلیاں توڑ دیں

دوسری جانب ادنوک تیل کمپنی نے ایک ٹویٹ کے ذریعے اپنے بیان میں کہا ہے کہ اسے اپنے تین ملازمین کی موت پر ’انتہائی دکھ ‘ ہوا ہے ’آج صبح تقریباً 10 بجے ابوظبی میں ہمارے مصفح آئل ڈپو میں ایک حادثے کے نتیجے میں آگ بھڑک اٹھی۔ ادنوک کو یہ تصدیق کرتے ہوئے انتہائی دکھ ہو رہا ہے کہ ہمارے تین ساتھی ہلاک ہوگئے ہیں۔

بیان میں کہا گیا ہے کہ ’اس وقت پورا ادنوک خاندان آج صبح ہلاک ہونے والے ہمارے ساتھیوں کے خاندانوں اور دوستوں کے ساتھ گہری ہمدردی کا اظہار کرتا ہے (حادثے میں) مزید چھ ساتھی زخمی ہوئے، جنہیں فوری طور پر اعلیٰ طبی امداد فراہم کی گئی۔ جبکہ پیشہ ورانہ امدادی ٹیمیں متاثرہ خاندانوں کی مدد کر رہی ہیں ادنوک تیل کمپنی نے اپنے بیان میں مزید کہا ہے کہ ’ہم اصل وجہ کا تعین کرنے کے لیے متعلقہ حکام کے ساتھ مل کر کام کر رہے ہیں اور تحقیقات کا آغاز کر دیا گیا ہے۔

‏امریکی فوج کے سربراہ جنرل مارک ملی بھی کورونا سے نہ بچ سکے

جبکہ اتحاد ایئرویز کے ترجمان نے کہا ہے کہ ابوظبی ایئرپورٹ پر ’احتیاطی اقدامات‘ کی وجہ سے پروازوں کی تھوڑی سے تعداد میں کچھ دیر کے لیے خلل پڑا، لیکن معمول کے آپریشنز کا تیزی سے دوبارہ آغاز ہوگیا۔

خبررساں ادارے روئٹرز کے مطابق یمن کے حوثی باغیوں نے ابوظبی میں ڈرون حملوں کا دعویٰ کیا ہے۔ حوثی ملیشیا کے ترجمان کے مطابق امارات کے خلاف آپریشن شروع کردیا ہے اور جلد حملوں کے حوالے سے مزید معلومات فراہم کی جائیں گی۔

واضح رہے کہ 2014 سے یمن میں شروع ہونے والی خانہ جنگی میں اب تک ہزاروں افراد ہلاک ہو چکے ہیں جبکہ لاکھوں افراد قحط سالی شکار ہو رہے ہیں۔

افغانستان میں شدید زلزلہ،12 افراد جاں بحق