fbpx

پاکستان بمقابلہ انگلینڈ بی.تحریر : انس حفیظ

کیا پاکستانی کرکٹ ٹیم واقعی اس قابل نہیں کہ انگلینڈ کی بی ٹیم کا مقابلہ بھی نہ کر پائے؟؟؟

پاکستانی ٹیم میں کم از کم پانچ کرکٹرز تو ایسے ہیں جو دنیا کی وائٹ بال کے ٹاپ تھرٹی کرکٹرز میں ضرور آتے ہیں۔۔ بابر، شاہین، حسن ، فخر اور امام۔۔۔ پانچ ورلڈ کلاس کرکٹرز کے ساتھ اگر آپ بھارت، آسٹریلیا، انگلینڈ اور نیوزی لینڈ کو مسلسل ہرا نہ بھی سکیں تو کم از کم انہیں شدید قسم کا ٹف ٹائم تو دے ہی سکتے ہیں۔۔۔۔

تو پرابلم کہاں ہے؟؟؟؟

کیا کوچنگ سٹاف اور کپتان کو بدلنا مسائل کا حل ثابت ہو سکتا ہے؟؟؟

کچھ حد تک۔۔۔۔ وقار یونس پانچویں دفعہ کوچنگ کر رہا ہے۔ وقار کے کریڈٹ پر کوئی ایک بھی کارنامہ ہے؟؟ محمد اکرم نے باؤلرز کو ڈسپلن باؤلنگ کرنا سکھائی۔ محمد اکرم کے دور میں پاکستانی باؤلرز نے کئی ماہ تک ایک بھی نو بال نہیں کی تھی اور اسی طرح اظہر محمود نے سلو بالز اور کٹرز سکھائے۔۔۔۔ وقار کیا سکھا رہا ہے؟؟

مصباح الحق کا میں فین رہا ہوں لیکن اب مجھے بھی لگنے لگا ہے کہ مصباح ماڈرن وائٹ بال کرکٹ کے ڈائینامکس نہیں سمجھتا۔۔۔ انوویشن نام کی بھی کوئی چیز ہوتی ہے۔۔۔ کیا مصباح نے کبھی وکٹ یا مخالف ٹیم کی سٹرینتھ یا میچ سیچویشن کے مطابق بیٹنگ آرڈر میں کوئی تبدیلی کی؟؟؟ کیا مخالف ٹیموں کے بلے بازوں کے خلاف کبھی کوئی آؤٹ آف باکس پلین بنایا؟؟؟

بابر اعظم سات نسلوں بعد بھی اچھا کپتان نہیں بن سکتا۔ پاکستانی کرکٹ کے چار پانچ سال ذائع کرنے کے بعد زیادہ سے زیادہ وہ ایک مناسب سا کپتان بن پائے گا۔ انگلینڈ کے خلاف دوسرے میچ میں جب فاسٹ باؤلرز کی پھینٹی لگنا شروع ہوئی تو اگلے آٹھ اوورز تک بابر نے کوئی ریسپانس نہیں دیا۔ حالانکہ ایک دو اوور بعد ہی اسے پارٹ ٹائم باؤلرز کی طرف جانا چاہئے تھا کیونکہ کرکٹ کی بنیادی سی بات ہے کہ جب بلے باز اکثر ایگریسیو موڈ میں ہو تو پارٹ ٹائمر اکثر نہیں کھیل پاتے۔۔۔مگر بابر۔۔۔۔

ہم فینز کا مسلہ یہ ہے کہ سب کچھ غلط ہوتے دیکھ کر بھی نہ تو کرکٹ دیکھنا بند کر سکتے ہیں نہ ہی پاکستانی ٹیم کو سپورٹ کرنا ختم کر سکتے ہیں۔۔۔ کچھ یہ ہی شرم کرلیں۔۔۔ مگر ابھی دلی بہت دور است۔۔۔