پاکستان میں اخبار اور رسائل زوال پذیر کیوں ؟اس صنعت کو بچانے کیلئے کیا کوششیں کی جا رہی ہیں؟

ایک زمانہ تھا جب پرنٹنگ پریس کا آغاز ہوا تو دنیا بھر میں اخبارات لاکھوں کی تعداد میں شائع ہونے لگے اخبارات رسائل اور جرائد کے ذریعے عوام کو حالات حاضرہ سے آگاہ رکھا جاتا تھا دنیا بھر میں مختلف زبانوں میں شائع ہونے والے اخبارات کروڑوں کی تعداد میں شائع ہوتے تھے-

باغی ٹی وی : جب آہستہ آہستہ سوشل میڈیا نے اپنی جگہ بنائی تو اخبارات نے انٹرنیٹ پر پیپر کے نام پر جگہ بنالی جبکہ ابھی ای پیپر کا دور ختم ہونے کو جا رہا ہے اور سوشل میڈیا اپنی جگہ تیزی سے بنا رہا ہے لوگ سوشل میڈیا پر خبریں دینے کے علاوہ اپنے تجزیہ بیان کر رہے ہیں-

اخبارات رسائل اور جرائد زوال پذیر ہو رہے ہیں ہزاروں سے سیکڑوں کی تعداد تک محدود ہو رہے ہیں پاکستان میں کچھ سال پہلے ہزاروں کی تعداد میں مختلف ناموں سے فیشن میگزین سمیت مختلف میگزین شائع ہوتے تھے اورزیادہ پرانی بات نہیں جب گھر میں اخبار یا کوئی رسالہ آتا تھاتو اسے ذو ق و شوق سے پڑھا جا تھا اور انمیں چھپی خبروں اور مضامین پر سیر حاصل بحث ہوتی تھی۔

اخبار اور جرائد میں شائع ہونے والے معلوماتی مضامین علم میں اضافے کا باعث بنتے تھے ۔ یہ اضافی معلومات اسکو ل میں بڑی کام آتی تھیں اور اسکول میں ہونے والے غیر نصابی ، ادبی اور معلوماتی پروگرام میں آپ کی کامیابیوں کا سبب بنتی تھیں حقیقت میں اخبارات اور رسائل نے ہمارے کیریئر اور شخصیت کو پروان چڑھانے میں بڑا کام کیا ہے اور آج بھی کررہے ہیں لیکن بدقسمتی سےنئی نسل اخبارات و رسائل سے اتنی زیادہ بہرہ مند نظر نہیں آتی جتنا کہ اسے اس کی ضروت ہے-

سائنس اور ٹیکنالوجی نے معاشرے کے نظام اقدار کو بدل کر رکھ دیا۔ نئے تعلیمی نظام اور زندگی میں در آنے والی ترغیبات اور نئی تفریحات نے اعلیٰ معیار کے ادب اور ادبی رسائل کو بے حیثیت کردیا ہے۔

تعجب خیز بات یہ ہے کہ ادیب اور ادبی رسالوں کے مدیروں نے اس کی ضرورت محسوس نہیں کی کہ جب معاشرہ اور اس کے تقاضے ہی بدل گئے تو ادبی رسالوں کو بھی ان کے ہم آہنگ ہونا چاہیے۔ہمارا پرانا معاشرہ “مواد” پر قانع تھا، نئے معاشرے میں “پیش کش” کی اہمیت بڑھ گئی۔ پاکستان میں پرنٹ میڈیا کی اہمیت ابھی بھی ہے اور کچھ لوگ اخبارات یا میگزین کی صورت میں اس صنعت کو بچانے کے لیے کوششیں کر رہے ہیں ادبی رسائل نے لائق اعتنا نہ سمجھا وہ “مارکیٹنگ” ہے اس سلسلے میں اپنا کلیدی کردار ادا کرتے ہوئے اب پاکستان میں ہر ماہ بزنس کی دنیا کا منفرد اور سب سے مشہور فلیر میگزین کی ای پیپر کاپی جاری کی جاتی ہے-

اردو اور انگلش زبان میں شائع ہونے والا میگزین گزشتہ 17 سال سے پاکستان سمیت دنیا بھر میں پڑھا جاتا ہے میگزین میں پاکستان کی آئی ٹی انڈسٹری اور ٹیلی کام شعبے کی ترقی کے بارے میں بھی مضامین شائع کئے جاتے ہیں اور خاص طور موبائل فون کی دنیا کہ بارے میں بھی تفصیلی روشنی ڈالی جاتی ہے-

اس میں خصوصاً رسالے کی اشاعت کے بعد قارئین کو خریدار بنانے کی ترغیب دینا، اس کے لیے اشتہار دینا اور پھر رسالے کی قارئین تک ترسیل کے لیے تیز رفتار نظام کو حرکت میں لانا، مثلاً معقول کمیشن پر رسالے کی تقسیم و ترسیل کا انتظام ہاکروں کے سپرد کرنا وغیرہ-

جواب چھوڑیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا.