پاکستان معاشی اصلاحات میں ناکام ،آئی ایم ایف پریشان ،وفد آئے گا پاکستان

معاشی اصلاحات میں ناکامی، آئی ایم ایف 16 ستمبر کو اہم مشن پاکستان بھجوائے گا

باغی ٹی وی کی رپورٹ کے مطابق پاکستان کے بڑھتے مالیاتی خسارے، ٹیکس اہداف کے حصول میں ناکامی اور توانائی سیکٹر کے نقصانات سے آئی ایم ایف پریشان ہے اور اس نے رواں ماہ 16 ستمبر کو ایس او ایس مشن پاکستان بھجوانے کا اعلان کیا ہے، پاکستان کے وزارت خزانہ کے حکام نے اس باتے کی تصدیق کی ہے اور کہا کہ آئی ایم ایف کا ایس او ایس مشن پاکستان آئے گا ،آئی ایم ایف مشن کو ٹیکس آمدن کے حوالہ سے بریفنگ دی جائے گی

پاکستان کے وزارت خزانہ کے حکام کا کہنا ہے کہ آئی ایم ایف کے مشن کے ساتھ ٹیکس ہدف کے حصول ، مالی خسارہ کم کرنے کے لیے مختلف تجاویز پر غور کیا جائے گا۔ توانائی کے خسارے کم کرنے کے لیے بھی مشاورت ہوگی، وزارت خزانہ حکام کا کہنا تھا کہ ایس او ایس مشن معاشی ڈکٹیشن نہیں دیتا،آئی ایم ایف کا ایس او ایس مشن منی بجٹ بنوانے نہیں آ رہا۔

واضح رہے کہ پاکستان نے حال ہی میں آئی ایم ایف سے تقریباً 6 ارب ڈالر قرض کا پیکج حاصل کیا ہے۔ اس سلسلے میں وزیراعظم عمران خان اور کرسٹین لیگارڈ کے درمیان بھی ملاقاتیں ہوئی ہیں. آئی ایم ایف کی جانب سے قرض کے حصول اور معاہدوں پر اپوزیشن جماعتوں نے بھرپور احتجاج کیا ہے .

آئم ایم ایف نے کہا تھا کہ پاکستان کو بین الاقوامی اداروں سے 38 ارب ڈالرز کا قرضہ ملے گا.پاکستان میں اداروں کو مضبوط کرکے ان میں شفافیت لائی جائے .پاکستان میں کرپشن کے خاتمے کے لیے کاررروائیاں کی جائیں ،گیس اور بجلی کی قیمتوں میں سیاسی مداخلت نہیں کی جائے گی.پاکستان کے گردشی قرضوں کا خاتمہ کیا جائے گا .توانائی سیکٹر کے واجبات کی وصولیاں یقینی بنائی جائیں گی.

آئی ایم ایف کی جانب سے 6 ارب ڈالر کے معاشی پیکج میں سے ایک ارب ڈالر فوری طور پر پاکستان کو دینے کا اعلان کیا گیا تھا جس کے تحت پاکستان کو پہلی قسط جولائی میں فراہم کردی گئی تھی، اسٹیٹ بینک کے مطابق آئی ایم ایف کی جانب سے 99 کروڑ 10 لاکھ ڈالرز کی پہلی قسط جاری کی گئی ہے

آئی ایم ایف سے قرض کی پہلی قسط موصول ہوگئی، اسٹیٹ بینک

1 تبصرہ
  1. ارشد فاروق بٹ کہتے ہیں

    قرض کی رقم ملنے کے باوجود پاکستان میں معاشی بدحالی سمجھ سے بالاتر ہے۔ حکومت کی کشمیر پالیسی اچھی جا رہی ہے لیکن معیشت اور اداروں پر حکومت کا کوئی کنٹرول نہیں ہے، ایک طرف عوام کو معاشی بدحالی اور مہنگائی نے پریشان کر رکھا ہے تو دوسری طرف پولیس نے شہر شہر قتل و غارت کا سلسلہ شروع کر رکھا ہے۔ حکومت کو اب ہوش کے ناخن لینے چاہئیں ورنہ ملک میں خانہ جنگی کا خدشہ ہے۔

جواب چھوڑیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا.