fbpx

پاکستان نے افغان سیلاب زدگان کیلئے امدادی پیکج بھجوا دیا

افغان سیلاب زدگان کیلئے امدادی پیکیج لے کرسی ون تھرٹی طیارہ افغانستان پہنچ گیا

امداد پاکستانی عوام اور حکومت پاکستان کی جانب سے دی گئی خیموں اور راشن پر مشتمل امداد ی اشیا مزار شریف پہنچ گئیں افغانستان کے لیے امداد ی پیکیج لے جانے والا یہ پہلا طیارہ ہے امدادی سامان کی روانگی کے موقع پر افغانستان میں پاکستانی سفیر بھی نورخان ایئربیس پرموجود تھے

وزیرِ اعظم شہباز شریف کی ہدایت پر افغانستان میں سیلاب متاثرین کیلئے پاکستان کی طرف سے امدادی اشیاء کی پہلی کھیپ پاکستان ائیر فورس کے خصوصی طیارے کے ذریعے آج افغانستان پہنچا دی گئی ہے. امدادی اشیاء میں 100 خیمے، 2 ٹن آٹا، 1 ٹن چاول، 450 کلو چینی شامل ہیں. امدادی اشیاء کی دوسری کھیپ 9 مئی کو روانہ ہوگی. وزیراعظم شہباز شریف کا کہنا ہے کہ افغانستان میں سیلاب زدگان کی امداد کیلئے پاکستان ہر ممکن کوشش کرے گا

قبل ازیں وفاقی وزیر خارجہ چیئرمین پی پی پیبلاول بھٹو زرداری نے افغانستان میں بارش اور سیلاب سے ہونے والے جانی و مالی نقصان پر افسوس کا اظہار کیا، وزیرخارجہ بلاول بھٹو زرداری نے افغانستان میں سیلاب سے ہونے والی 20 سے زائد انسانی زندگیوں کے ضیاع پر لواحقین سے بھی افسوس کا اظہارکیا

عثمان مرزا کی جانب سے لڑکی اور لڑکے پر تشدد کے بعد نوجوان جوڑے نے ایسا کام کیا کہ پولیس بھی دیکھتی رہ گئی

نوجوان جوڑے پر تشدد کیس، پانچویں ملزم کو کس بنیاد پر گرفتار کیا؟ عدالت کا تفتیشی سے سوال

ویڈیو کس نے وائرل کی تھی؟ عدالت کے استفسار پر سرکاری وکیل نے کیا دیا جواب

نوجوان جوڑے کو برہنہ کرنے کا کیس،ملزم عثمان مرزا کو عدالت نے کہاں بھجوا دیا؟

بے اولاد ہیں، بچہ خرید لیں، بچے پیدا کرنے کی فیکٹری، تہلکہ خیز انکشاف

پڑھانے کیلئے آنیوالے معلم نے 8 سالہ طالبعلم سے کیں نازیبا حرکات

16 سالہ لڑکی کے ساتھ گھناؤنا کام کرنیوالا سفاک گرفتار

گھناؤنا کام کر کے پولیس کورشوت دینے والا ملزم گرفتار

دوسری جانب وفاقی وزیر برائے موسمیاتی تبدیلی نے قومی اور صوبائی ڈیزاسٹر مینجمنٹ حکام اور متعلقہ مقامی حکام پر زور دیا ہے کہ وہ مون سون کی معمول سے زیادہ بارشوں کے ممکنہ تباہ کن اثرات سے نمٹنے کے لیے تمام تر پیشگی احتیاطی تدابیر اختیار کریں۔ اس سال ملک کے بیشتر حصوں اور شمالی حصوں میں معمول سے زیادہ درجہ حرارت اور بارشوں کا امکان ہے۔ قدرتی آفات کے وقت، خاص طور پر موسم گرما کے مون سون کے اوقات میں سیلاب اور تیز بارشوں سے لوگوں کی زندگیوں اور معاش کے ساتھ ساتھ عوامی انفراسٹرکچر کو بھی شدید خطرہ لاحق ہو سکتا ہے۔ سالانہ 22 ویں جنوبی ایشیائی موسمیاتی آؤٹ لک فورم (SASCOF) کی رپورٹ کے مطابق ملک کے بیشتر حصوں میں آئندہ چار ماہ کے موسم گرما کے مون سون (جون-ستمبر) کے دوران معمول سے زیادہ بارشوں کا امکان ہے۔ جس سے سیلاب کا خطرہ پیدا ہو سکتا ہے۔ رپورٹ میں پیش گوئی کی گئی ہے کہ شمال، گلگت بلتستان، شمال مغربی خیبرپختونخوا میں مون سون کے موسم کے دوران معمول سے زیادہ درجہ حرارت کے نتیجے میں برف پگھلنے میں اضافہ ہو سکتا ہے اور اس کے نتیجے میں علاقے میں سیلاب اور گلاف کے واقعات رونما ہو سکتے ہیں۔