جسٹس مرلی دھرکا صرف اس وجہ سے تبادلہ کرنا کہ اس نے دہلی کے مظلوموں کی حمایت میں ریمارکس دیئے،نامنظورہے ، پرینکا گاندھی

دہلی:جسٹس مرلی دھرکا صرف اس وجہ سے تبادلہ کرنا کہ اس نے دہلی کے مظلوموں کی حمایت میں ریمارکس دیئے،نامنظورہے ، اطلاعات کے مطابق کانگریس کی جنرل سکریٹری پرینکا گاندھی نے دہلی فسادات معاملے کی سماعت کرنے والے جسٹس مرلی دھر کے تبادلے پر سخت نکتہ چینی کی ہے۔

بدھ کی رات دیر گئے مرکزی حکومت نے دہلی ہائی کورٹ کے جج ایس مرلی دھر کا تبادلہ پنجاب ہریانہ ہائی کورٹ میں کئے جانے کا نوٹیفکیشن جاری کر ديا پرینکا نے ٹویٹ میں کہا کہ آدھی رات جسٹس مرلی دھر کا تبادلہ حیران کن ہے۔ ایسے حالات میں تبادلہ افسوناک اور شرمناک ہے۔

انھوں نے مزید لکھا ہے کہ کروڑوں بھارتی ملک کی عدلیہ کے نظام پر بھروسہ کرتے ہیں لیکن حکومت انصاف اور اس بھروسے کو سبوتاژ کررہی ہے جو کہ ناقابل قبول ہے۔کانگریس رہنما راہل گاندھی نے بھی نکتہ چینی کرتے ہوئے لکھا ہے کہ میں بہادر جج لویا کو یاد کررہا ہوں جن کا تبادلہ نہیں کیا جاسکا۔ جسٹس مرلی دھر وہی جج ہیں جنہوں نے دہلی تشدد پر کل ہونے والی سماعت کے دوران اشتعال انگیز تقریر کرنے والے رہنماوں کے خلاف ایف آئی آر درج نہ کئے پرکر مرکزی حکومت اور پولیس کو آڑے ہاتھوں لیا تھا۔

دہلی ہائی کورٹ کے تیسرے اعلی ترین جج جسٹس مرلی کے تبادلے سے متعلق نوٹیفکیشن بدھ کی رات مرکزی حکومت نے جاری کیا ۔حکومت کے نوٹیفکیشن میں کہا گیا ہے کہ پنجاب اور ہریانہ ہائی کورٹ کے جج اپنے عہدے کا چارج لینے کی رپورٹ کریں۔

جواب چھوڑیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا.