fbpx

پتوکی سکول ٹیچر پر بااثر اوباش نوجوانوں کا تشدد،پولیس خاموش تماشائی کاروائی سے گریز

پتوکی سکول ٹیچر پر بااثر اوباش نوجوانوں کا تشدد،پولیس کا کاروائی کرنے سے گریز،سکول ٹیچر کی اعلی حکام سے درخواست پر کاروارئی کرنے کی درخواست-

باغی ٹی وی : تفصیلات کے مطابق خالد خلیل احمد گورنمنٹ ہائی سکول شیخم تحصیل پتوکی کے ٹیچر نے بتایا کہ جمعے والے دن کچھ اوباش نوجوان سکول کے گیٹ پرسکول کے بچوں کے ساتھ جھگڑا کرنے کے لئے کھڑے ہوئے تھے میں نے گیٹ پرچند اساتذہ کے ہمراہ ان اوباش لڑکوں کو گیٹ کے باہر بچوں کی حفاظت کیلئے روکنے کی کوشش کی جس پر ان اوباشوں نے مجھے گالیاں نکالیں اور زودوکوب کیا –

متاثرہ سکول ٹیچر نے بتایا کہ جس میں میری آنکھ شدید زخمی ہوئی پولیس کو 15 پر کال کی لیکن پولیس نے ابھی تک اس واقعے پر کوئی ایکشن نہیں لیا صرف درخواست پر ڈائری نمبرہی لگایا تاہم ابھی تک اس پر کوئی ایکشن نہیں لیا گیا کیونکہ وہ گاؤں کے بہت با اثرلوگ ہیں-

پولیس اہلکار کی حاملہ خاتون سے زیادتی،ویڈیو بھی بنا لی

سکول ٹیچر کا کہنا ہے کہ یہ اساتذہ کمیونٹی کے لئے یہ بہت شرمناک بات ہے کہ کسی استاد کے اوپر اس طرح حملہ کیا گیا ہے میں نے صرف اپنے سکول کے بچوں کی حفاظت کیلئے تاکہ وہ لڑیں نا ان کو تھوڑا سا سختی سے منع کیا کہ آپ بھاگ جائیں یہاں سے کیوں آئے ہیں یہاں پر لیکن انہوں نے میرے اوپر حملہ کر دیا-

چھ ڈاکوؤں کی مبینہ اجتماعی زیادتی:تھانہ سٹی تاندلیانوالا نے ڈاکو گرفتار کر لئے

متاثرہ شخص نے کہا کہ مجھے بعد میں بتایا گیا کہ وہ کوئی کرمنل قسم کے لوگ ہیں اور ان کے پاس کوئی ہتھیار وغیرہ بھی تھے میری آنکھ ضائع ہونے سے بہت مشکل سے بچی ہے یہ کل کا واقعہ ہے اور پولیس بالکل خاموش ہے اس پر کوئی کاروائی نہیں کی گئی میری اعلیٰ حکام اور پولیس افسران سے درخواست ہے کہ میری درخواست پر کاروائی کی جائے اور ان ملزمان کو کیفرکردار تک پہنچایا جائے-

بارود سے بھرے ٹرک میں دھماکہ،17 اموات، 50 سے زائد زخمی،ہر طرف کہرام مچ گیا