پی سی بی کے گورننگ بورڈ کا اہم اجلاس، ورلڈ کپ کے بعد تین سالہ کارکردگی کا تفصیلی جائزہ لینے کا فیصلہ

پاکستان کرکٹ بورڈ کے گورننگ بورڈ کا 54 واں اجلاس ہوا ہے جس میں‌ اہم فیصلوں کی منظوری دی گئی ہے۔

باغی ٹی وی کی رپورٹ کے مطابق قذافی اسٹیڈیم میں چیئرمین پی سی بی احسان مانی کی زیر صدارت ہونے والے گورننگ بورڈ کے اجلاس میں تمام فیصلوں کی متفقہ طور پر منظوری دی گئی اور اس امر کا فیصلہ کیا گیا کہ ورلڈ کپ کے بعد قومي ٹيم کي تین سالہ کارکردگی کا باریک بینی سے جائزہ لینے کا فیصلہ کیا گیا۔ گورننگ بورڈ نے ٹيم کي کارکردگي کو توقعات سے کم تر قرار ديا ہے۔

اجلاس میں ایم ڈی وسیم خان نے اپنے دورہ انگلینڈ سے متعلق اراکین کو بریفنگ دی اور انہیں بتایا کہ انگلش کرکٹ بورڈ اور مختلف کاونٹیز کے ساتھ پلیئرز اور آفیشل ایکسچینج پروگرام شروع کیا جارہا ہے ۔ گورننگ بورڈ نے بگٹی سٹیڈیم کوئٹہ کو کمرشلائز کرنے اور ڈیلیوٹ یوسف عادل کمپنی کو بورڈ ایکسٹرنل آڈیٹر مقرر کرنے کی منظوری دی۔ گورننگ بورڈ اراکین نے آئيندہ سال ستمبر ميں ایشیا کپ کی میزبانی پاکستان کو ملنے پر خوشی کا اظہار کرتے ہوئے چئیرمین پی سی بی احسان مانی کو اس کامیابی پر مبارک باد پیش کی ۔ اجلاس میں کوئٹہ بغاوت کے مرکزی کردار معطل رکن نعمان بٹ کے علاوہ گورننگ بورڈ کے تمام اراکین نے شرکت کی

اجلاس میں اس امر کا بھی فیصلہ کیا گیا کہ ورلڈ کپ کے بعد قومی ٹیم کے کھلاڑیوں، کوچز اورسلیکشن کمیٹی کی تین سالہ کارکردگی کا باریک بینی سے جائزہ لیا جائے گا ۔ اجلاس میں ایم ڈی کی تقرری اور چئیرمین کے اختیارات کی منتقلی کی توثیق کی گئی چیئرمین کے اختیارات ایم ڈی کو منتقل کیے جانے کے بعد وہ جونئیر و سینئر سلیکشن کمیٹی ، کپتان اور کوچ کی تعیناتی ، کھلاڑیوں کے سینٹرل کنٹریکٹ کی منظوری اور ڈومیسٹک کرکٹ جیسے اہم امور کے فیصلوں کا اختیار ایم ڈی کو حاصل ہوگا۔

واضح رہے کہ ورلڈ کپ میں‌ پاکستانی ٹیم کی انڈیا کے ہاتھوں‌ بری طرح شکست کے بعد پاکستان کرکٹ بورڈ کی طرف سے اہم نوعیت کےا قدامات اٹھائے جارہے ہیں جبکہ عوامی سطح‌ پر بھی پاکستان کرکٹ بورڈ اور ٹیم کے کھلاڑیوں‌ پر سخت تنقید کی جارہی ہے.

جواب چھوڑیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا.