fbpx

افغان طالبان مان گئے ،کامیاب افغانستان امن مذاکرات کے امکانات پہلے سے زیادہ ہیں: امریکی جنرل

کابل :افغان طالبان مان گئے ،کامیاب افغانستان امن مذاکرات کے امکانات پہلے سے زیادہ ہیں: امریکی جنرل، اطلاعات کے مطابق جوائنٹ چیف آف اسٹاف کے چیئرمین آرمی جنرل مارک ملی بدھ کے روز افغانستان پہنچے۔ ستمبر میں اعلیٰ عہدے پر فائز ہونے کے بعد ان کا افغانستان کا پہلا دورہ ہے۔امریکی جنرل کہتے ہیں‌کہ افغانستان میں اٹھارہ سالہ جنگ کے خاتمے پر امن مذاکرات کے کامیاب نتائج کے امکانات پہلے سے کہیں زیادہ ہیں اور “قریب قریب” میں ہوسکتے ہیں۔

جوائنٹ چیف آف اسٹاف کے چیئرمین آرمی جنرل مارک ملی نے کہا کہ اس ماہ کے شروع میں افغان طالبان نے امریکی اور آسٹریلیائی یونیورسٹی کے پروفیسرز کو تین سال سے زیادہ عرصے تک یرغمال بنا کر رہا کیا گیا ، جس سے امن مذاکرات کے احیاء کی امیدیں وابستہ ہوئیں۔طالبان کی جانب سے کابل میں “ناجائز” امریکی حمایت

ملکی ذخائر8 ارب 68 کروڑ ڈالرتک پہنچ گئے، اسٹیٹ بینک نے معیشت کے بارےمیں‌ خوشخبری…

یافتہ حکومت کے نام سے موسوم ہونے سے انکار کی وجہ سے کامیاب مذاکرات کے امکانات پیچیدہ ہیں۔

جوائنٹ چیف آف اسٹاف کے چیئرمین آرمی جنرل مارک ملی نے کہا کہ افغانستان میں گندی سیاسی صورتحال اور مسلسل تشدد ہی صورتحال کو مزید دشوار بنا دیتا ہے۔ملی نے صحافیوں کو بتایا ، “مجھے لگتا ہے کہ مذاکرات کے ذریعے مثبت نتائج کے امکانات میں نے اس سے کہیں زیادہ دیکھے ہیں ، اور میں 18 سال سے افغانستان میں گہری شمولیت اختیار کر رہا ہوں۔”ملی نے کہا ، “تھوڑی بہت خوش قسمتی کے ساتھ ، قریب دورانیے میں کامیاب مذاکرات ہوں گے ۔

کشمیر میں اسرائیلی طرز پر ہندوؤں کی آباد کاری کا منصبوبہ

جوائنٹ چیف آف اسٹاف کے چیئرمین آرمی جنرل مارک ملی نے مزید کہاکہ مذ اکرات کا وقت زیادہ دور نہیں۔ انہوں نے کہا ، “اس طرح کے حالات میں بہت وقت ہوتا ہے ، ایک قدم پیچھے دو قدم آگے۔ ملی نے واضح کیا کہ پچھلے 18 سالوں کے دوران ، سینئر امریکی فوجی رہنماؤں اور سفارت کاروں نے معمول کے مطابق ان کی امید پرستی اور جنگ نے کونے کا رخ بدلنے کی بات کی ہے ، لیکن طالبان نے ملک کے بڑے حصوں کو اپنے کنٹرول میں رکھنا جاری رکھا ہے۔

پرویز مشرف اور پیر پگارا صبغت اللہ راشدی کی ملاقات ، کیا اہم گفتگوہوئی خبرسے ہلچل…

یاد رہےکہ پچھلے مہینے امریکی فوج نے کہا تھا کہ اس نے خاموشی سے فوجیوں کی تعداد کو تقریبا 2،000 2 ہزار تک کم کردیا ہے ، تاکہ افغانستان میں امریکی فوجیوں کی کل تعداد 12،000 سے 13،000 کے درمیان ہو۔امریکی محکمہ دفاع پینٹا گون نے کہا تھا کہ وہ فوجیوں کی تعداد آٹھ ہزار چھ سو تک کرسکتا ہے اور امریکی فوج کا افغانستان میں انسداد دہشت گردی مشن اب بھی جاری ہے۔

جواب چھوڑیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا.