fbpx

پہلے ضمانت منسوخی بنتی تھی یا نہیں اب بنتی ہے،عدالت مریم نواز پر برہم

ایون فیلڈ ریفرنس میں مریم نواز، کپٹن صفدر کی اپیلوں پر سماعت ہوئی

سماعت اسلام ہائیکورٹ کے ڈویژن بنچ پر مشتمل جسٹس عامر فاروق اور جسٹس محسن اختر کیانی نے کی،نیب کی پروسیکوشن ٹیم آج عدالت پیش ہو ئی ،مریم اور کیپٹن صفدر کے وکیل امجد پرویز کی التوا کی درخواست منظورکر لی گئی ،جسٹس عامر فاروق نے استفسار کیا کہ کہان ہیں مریم نواز اور کیپٹن ر صفدر، قانون یہ کہتا ہے کہ اپیل کنندہ کمرہ عدالت میں موجود ہوں، وکیل مریم نواز نے کہا کہ کیپٹن صفدر نماز پڑھ رہے ہیں جبکہ مریم نواز پہنچ رہی ہے، عدالت نے کہا کہ یہ ایک اہم معاملہ ہے امجد پرویز کو ایسا نہیں کرنا چاہیے، مریم نواز کے وکیل امجد پرویز نے آج کی سماعت پر التواء کی درخواست دائر کر رکھی ہے،بتائیں کیا کرے قانون میں کیا کہا ہے ؟ نیب پراسیکیوٹر نے کہا کہ انکی ضمانت منسوخ کی جائے ،عدالت نے کہا کہ ہم نے مقررہ وقت اسی وجہ سے دیا کہ درخواست گزار پیش ہو، نیب پراسیکیوٹر نے کہا کہ امجد پرویز کی ابھی تک دسویں التوا ہے،

مریم نواز کی کمرہ عدالت میں شور پر عدالت نے برہمی کا اظہار کیا، جسٹس عامر فاروق نے کہا کہ آپ کے کلائنٹ کو اتنا نہیں پتہ کہ کورٹ کے ڈیکورم کیا ہے،جسٹس عامر فاروق نے کہا پہلے ضمانت منسوخی بنتی تھی یا نہیں اب بنتی ہے آپ کے کلائنٹ کو عدالت کے احترام کا علم ہی نہیں، لیگی رہنما عطا تارڑ کی معزرت پر عدالت نے سماعت ملتوی کردی

مریم نواز اور کیپٹن صفدر وکیل سے کہیں کہ آئندہ سماعت میں پیش ہوں،عدالت نے سماعت 8 ستمبر تک کے لئے ملتوی کر دی،

نواز شریف حاضر ہو، اسلام آباد ہائیکورٹ نے طلبی کی تاریخ دے دی

نواز شریف کی نئی میڈیکل رپورٹ عدالت میں جمع، نواز ذہنی دباؤ کا شکار،جہاز کا سفر خطرناک قرار

جس ڈاکٹر کا سرٹیفیکٹ لگایا وہ امریکہ میں اور نواز شریف لندن میں،عدالت کے ریمارکس

اشتہاری ملزم کی درخواستیں کس قانون کے تحت سن سکتے ہیں،نواز شریف کے وکیل سے دلائل طلب

نواز شریف کی جیل میں طبیعت کیوں خراب ہوئی تھی؟ نئی میڈیکل رپورٹ میں اہم انکشاف

اشتہاری مجرم کی ضمانت منسوخی کی ضرورت ہے؟ نواز شریف کیس میں عدالت کے ریمارکس

نواز شریف کو مفرور بھی ڈکلیئر کر دیں تو تب بھی اپیل تو سنی جائے گی،عدالت

گرفتاری پہلے، مقدمہ بعد میں، مہذب ممالک میں کبھی ایسا دیکھا ہے؟ مریم نواز

واضح رہے کہ اسلام آباد ہائیکورٹ میں نواز شریف کی درخواستیں مسترد کر دی گئی تھیں،عدالت نے نوازشریف کے ناقابل ضمانت وارنٹ گرفتاری جاری کر دئیے تھے ،جسٹس عامر فاروق اور جسٹس محسن اختر کیانی نے فیصلہ سنایا تھا، اسلام آباد ہائیکورٹ نے حاضری سے استثنی اور نمائندہ مقرر کرنے کی درخواستیں مسترد کردی تھیں