کرونا وائرس : پی آئی اے نے بیرون ملک سے آنے والوں کے لیےکرونا ٹیسٹ کی شرائط نرم کردیں

0
44

اسلام آباد :کرونا وائرس : پی آئی اے نے بیرون ملک سے آنے والوں کے لیے شرائط نرم کر دیں ،اطلاعات کےمطابق پاکستان نے 21 مارچ سے انٹرنیشنل پروازوں کے مسافروں کے لیے کورونا ٹیسٹ لازمی قرار دے دیا ہے وہاں کچھ نرمی بھی کی ہے ۔

پی آئی اے کی طرف سے کہا گیا ہے کہ کرونا وائرس کی وجہ سے سخت سکریننگ کا عمل جاری ہے ، پہلے فیصلہ کیا گیا تھا کہ بیرون ملک سے آنے والے مسافروں کے لیے آر ٹی اورپی سی آر ٹیسٹ لازمی قراردیئے تھے ، تاہم بعد میں پی ائی اے نے ان شرائط میں نرمی کرتے ہوئے مسافروں کے لے آسانیاں پیدا کردی ہیں

یہ بھی کہا گیا ہے کہ پاکستان آنے والے مسافرپہلے اس بات کی یقین دہانی کروائیں گے کہ وہ پاکستان آنے سے پہلے 14 دن تک قرنطینہ سینٹرمیں گزارکرآئے ہیں اوراب وہ بالکل صحت مند ہیں‌،

یاد رہے کہ اس سے قبل منگل کو ایوی ایشن ڈویژن کے مطابق 21 مارچ 2020 سے پاکستانی وقت کے مطابق صبح پانچ بجے سے بیرون ممالک سے آنے والے مسافروں کا داخلہ ایئر پورٹس پر کورونا وائرس ٹیسٹ کی مصدقہ رپورٹ کی فراہمی سے مشروط کر دیا گیا تھا ۔

ادھر وفاقی وزیر ہوا بازی غلام سرور خان نے کابینہ کے اجلاس کے بعد مشیر اطلاعات فردوس عاشق اعوان کے ہمراہ پریس کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے بتایا کہ 21 مارچ سے انٹرنیشنل پرواز کے مسافر کورونا ٹیسٹ منفی ہونے پر ہی بورڈنگ کارڈ حاصل کر سکیں گے۔

’ملک میں کسی بھی بین الاقوامی پرواز کے اترنے پر کوئی پابندی نہیں تاہم کئی ضروری اقدامات کے بعد ہی مسافروں کو باہر آنے دیا جائے گا۔‘وزیر ہوابازی نے بتایا کہ 21 مارچ سے تربت اور گوادر ایئرپورٹس سے انٹر نیشنل پروازیں آپریٹ نہیں ہوں گی۔انہوں نے بتایا کہ 13 مارچ کو نیشنل سکیورٹی کونسل کے اجلاس میں اہم فیصلے کیے گئے تھے۔

پاکستان کے ایوی ایشن ڈویژن کے مطابق 21 مارچ 2020 سے پاکستانی وقت کے مطابق صبح پانچ بجے سے بیرون ممالک سے آنے والے مسافروں کا داخلہ ایئر پورٹس پر کورونا وائرس ٹیسٹ کی مصدقہ رپورٹ کی فراہمی سے مشروط کر دیا گیا ہے۔ایوی ایشن ڈویژن کے ترجمان کے مطابق اس بات کو لازمی قرار دیا گیا ہے کہ بیرون ملک سے آنے والے مسافر نے اپنا ٹیسٹ پرواز سے 24 گھنٹے قبل کروایا ہو۔ٹیسٹ کی رپورٹ میں مسافر کا نام اور پاسپورٹ نمبر شامل ہونا ضروری ہے۔ اس حوالے تمام ایئر لائنز کو واضح طور ہدایات جاری کر دی گئیں ہیں۔

ترجمان ایوی ایشن ڈویژن کے مطابق پاکستان کی حدود میں داخلے کی اجازت صرف اور صرف کورونا وائرس کی مصدقہ رپورٹ کی فراہمی کی صورت میں ہو گی اور یہ شرط چار اپریل تک برقرار رہے گی۔’اس اقدام کا مقصد پاکستان میں کرونا وائرس کے پھیلائو کو روکنا ہے۔ ٹیسٹ رپورٹ کی فراہمی کے ساتھ ساتھ ہیلتھ ڈیکلیریشن فارم جمع کروانا بھی لازم ہے۔‘ترجمان ایوی ایشن ڈویژن کے مطابق ملک کے تمام ہوائی اڈوں کے علاقائی روانگی پر مسافروں کی سکریننگ کو لازم قرار دیا گیا ہے۔

ترجمان ایوی ایشن ڈویژن کے مطابق ہوائی اڈوں پر مسافروں کو سوار کرنے سے قبل تمام جہازوں کو جراثیم سے پاک کرنے کے لیے سپرے کرنا ضروری قرار دیا گیا ہے۔تمام ایئر لائنز کو اس حوالے سے سول ایوی ایشن اتھارٹی کو سرٹیفکیٹ جمع کروانا لازم ہو گا بصورت دیگر ہوائی جہاز کو اترنے کی اجازت نہیں دی جائے گی۔

Leave a reply