fbpx

وزیراعظم نے پی ایم سی ارکان تبدیل کرکے مبینہ کرپشن کی تحقیقات کا حکم دے دیا

وزیراعظم میاں محمد شہباز شریف نے پی ایم سی ارکان کو تبدیل کردیا ہے جبکہ مبینہ کرپشن کی تحقیقات کا حکم دے دیا ہے

وزیراعظم میاں محمد شہباز شریف نے پاکستان میڈیکل کمیشن کے ارکان کو تبدیل کر دیا ہے جب کہ ٹیسٹنگ میں مبینہ کرپشن کا معاملہ تحقیقاتی ایجنسی ادارے کو دینے کا فیصلہ کیا گیا ہے۔

ذرائع کے مطابق وزیراعظم محمد شہباز شریف نے آئین و قانون کے مطابق سابق وزیر اعظم عمران خان کے پاکستانی نژاد امریکی کزن ڈاکٹر نوشیروان برکی کے منتخب پاکستان میڈیکل کمیشن کے ارکان کو صوابدیدی اختیارات استعمال کرتے ہوئے تبدیل کردیا ہے۔
ذرائع کا کہنا ہے کہ پی ایم سی میں میڈیکل امتحانات میں کرپشن کی اطلاعات موصول ہوئی تھیں۔ گزشتہ سالوں میں بھی بڑے پیمانے پر ٹیسٹنگ میں بے ضابطگیاں اور مالی بدعنوانیاں رپورٹ ہوئیں، جس کا معاملہ نیب میں زیر التوا ہے۔

حکام کا کہنا ہے کہ کمیشن کے نئے ارکان آئین و قانون کے مطابق میرٹ پر تعینات ہوں گے جب کہ ٹیسٹنگ میں مبینہ کرپشن کا معاملہ تحقیقاتی ایجنسی کو دیا جائے گا۔ ایم ڈی کیٹ کے امتحانات شیڈول کے مطابق ہوں گے۔

دوسری جانب وفاقی حکومت کی قانونی ٹیم میں بھی بڑی تبدیلیاں کردی گئیں ہیں. وزارت قانون نے اسلام آباد میں 20 نئے لاء افسران کی تعیناتی کی منظوری دے دی ہے.
وفاقی حکومت کی قانونی ٹیم کے 118 سرکاری وکلاء کو فارغ کردیا گیا ہے اور 127 نئی تقرریاں کی گئی ہیں۔
ایڈیشنل اٹارنی جنرلز سہیل محمود اور ساجد الیاس بھٹی کو عہدے سے ہٹا دیا گیا ہے جب کہ اسلام آباد میں 20 اور راولپنڈی میں 13 نئی تقرریاں کی گئیں۔

اس کےعلاوہ لاہور میں 31، ملتان 9 اوربہاولپور میں 5 وکلا کی خدمات حاصل کی گئی ہیں، کراچی میں 16 اور کوئٹہ میں 7 وکلا کی خدمات وفاقی حکومت نے حاصل کیں، تمام سرکاری وکلا عدالتوں میں وفاقی حکومت اور اداروں کی نمائندگی کریں گے۔